Live Results Assembly Elections 2018

مدھیہ پردیش :  چھوٹے سے گاوں کی میمونہ خان بنی ایک مثال ، تعلیم بالغان کے تحت روشن کررہی ہے علم کی شمع

Jan 10, 2018 08:14 PM IST
1 of 10
  • مدھیہ پر دیش کے ضلع مرینہ کے چھوٹے سے ایک گاؤں کی معذور میمونہ نے تعلیم بالغان کو اپنے زندگی کا مقصد بنا لیا ہے اور وہ چلتا پھرتا اسکول بن گئی ہے ۔ مرینہ ضلع کے گاؤں جگنی کی میمونہ تعلیم بالغان کےذریعہ اب تک تقریبا ایک ہزار مرد اور خواتین کو زیور تعلیم سے آراستہ کر چکی ہے ۔ جس گوالیار چمبل میں بیٹیوں کا پیٹ میں ہی قتل کردیا جاتا تھا، اسی علاقہ کی یہ بیٹی اپنی جسمانی کمزوری کے باوجود تعلیم کی مشعل لیے آگے بڑھ رہی ہے اور ایک مثال بن گئی ہے۔

    مدھیہ پر دیش کے ضلع مرینہ کے چھوٹے سے ایک گاؤں کی معذور میمونہ نے تعلیم بالغان کو اپنے زندگی کا مقصد بنا لیا ہے اور وہ چلتا پھرتا اسکول بن گئی ہے ۔ مرینہ ضلع کے گاؤں جگنی کی میمونہ تعلیم بالغان کےذریعہ اب تک تقریبا ایک ہزار مرد اور خواتین کو زیور تعلیم سے آراستہ کر چکی ہے ۔ جس گوالیار چمبل میں بیٹیوں کا پیٹ میں ہی قتل کردیا جاتا تھا، اسی علاقہ کی یہ بیٹی اپنی جسمانی کمزوری کے باوجود تعلیم کی مشعل لیے آگے بڑھ رہی ہے اور ایک مثال بن گئی ہے۔

  • اپنے گھریلو کام کے بعد اب یہاں کی خواتین ہر دوپہر قلم اورتختی تھام لیتی ہیں  اوراپنے ہاتھوں سے اپنی تقدیر لکھ رہی ہیں، جنہیں پانچ سال کی عمرمیں تعلیم حاصل کرنا تھا ، وہ چالیس کی عمر میں تعلیم کے لیے بیدار ہو رہی ہیں۔

    اپنے گھریلو کام کے بعد اب یہاں کی خواتین ہر دوپہر قلم اورتختی تھام لیتی ہیں  اوراپنے ہاتھوں سے اپنی تقدیر لکھ رہی ہیں، جنہیں پانچ سال کی عمرمیں تعلیم حاصل کرنا تھا ، وہ چالیس کی عمر میں تعلیم کے لیے بیدار ہو رہی ہیں۔

  • خواتین کے ہاتھوں میں قلم اور تختی پکڑانے والی میمونہہے ۔

    خواتین کے ہاتھوں میں قلم اور تختی پکڑانے والی میمونہہے ۔

  •  بچپن سے ہی پولیو کی وجہ سے معذور میمونہ نے اپنی جسمانی کمی کو کبھی کمزوری نہیں بننے دیا ، بلکہ کتابوں سے دوستی کی اور یہ کوشش شروع کردی اس کے گاؤں کے لوگ بھی کتابوں کو اپنے ہاتھوں میں تھامنے لگیں۔

    بچپن سے ہی پولیو کی وجہ سے معذور میمونہ نے اپنی جسمانی کمی کو کبھی کمزوری نہیں بننے دیا ، بلکہ کتابوں سے دوستی کی اور یہ کوشش شروع کردی اس کے گاؤں کے لوگ بھی کتابوں کو اپنے ہاتھوں میں تھامنے لگیں۔

  •  میمونہ اپنے گاؤں کی پہلی لڑکی تھی جس نے گریجویشن تک پڑھائی کی اور اسی دن سے ارادہ کر لیا کہ گاؤں کی دیگر خواتین کو بھی پڑھائے گی اور  اس طرح وہ تعلیم بالغان سے جڑ گئی ۔

    میمونہ اپنے گاؤں کی پہلی لڑکی تھی جس نے گریجویشن تک پڑھائی کی اور اسی دن سے ارادہ کر لیا کہ گاؤں کی دیگر خواتین کو بھی پڑھائے گی اور اس طرح وہ تعلیم بالغان سے جڑ گئی ۔

  •  وہ پوری گاؤں کی بوا ہے، اس کی وجہ سے اب گاؤں کے لوگ اپنا نام لکھنا پڑھنا ،  دواؤں کا نام اور اخبار تک پڑھنے لگے ہیں ۔

    وہ پوری گاؤں کی بوا ہے، اس کی وجہ سے اب گاؤں کے لوگ اپنا نام لکھنا پڑھنا ، دواؤں کا نام اور اخبار تک پڑھنے لگے ہیں ۔

  • تعلیم با لغان پروگرام سے 1999  سے وابستہ میمونہ گاؤں میں اس پروگرام  کے ختم ہونے کے بعد بھی اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئی ہے ۔

    تعلیم با لغان پروگرام سے 1999 سے وابستہ میمونہ گاؤں میں اس پروگرام کے ختم ہونے کے بعد بھی اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئی ہے ۔

  •  جنون اس قدر ہے کہ اس نے شادی تک نہیں کی ہے ۔

    جنون اس قدر ہے کہ اس نے شادی تک نہیں کی ہے ۔

  •  میمونہ کو اس کام کے لیے کئی ایوارڈ بھی مل چکے ہیں،  لیکن میمونہ کا درد یہ ہے کی یہ ایوارڈ دو وقت کی روٹی نہیں دیتے ہیں ۔

    میمونہ کو اس کام کے لیے کئی ایوارڈ بھی مل چکے ہیں، لیکن میمونہ کا درد یہ ہے کی یہ ایوارڈ دو وقت کی روٹی نہیں دیتے ہیں ۔

  •  اس نے تو اپنے حصے کی ذمہ داری پوری کردی ہے  اور اب سماج اورحکومت کی باری ہے کہ میمونہ کے حالات کو دیکھے اوراس کے لیے کچھ کرے ۔

    اس نے تو اپنے حصے کی ذمہ داری پوری کردی ہے اور اب سماج اورحکومت کی باری ہے کہ میمونہ کے حالات کو دیکھے اوراس کے لیے کچھ کرے ۔

  • اپنے گھریلو کام کے بعد اب یہاں کی خواتین ہر دوپہر قلم اورتختی تھام لیتی ہیں  اوراپنے ہاتھوں سے اپنی تقدیر لکھ رہی ہیں، جنہیں پانچ سال کی عمرمیں تعلیم حاصل کرنا تھا ، وہ چالیس کی عمر میں تعلیم کے لیے بیدار ہو رہی ہیں۔
  • خواتین کے ہاتھوں میں قلم اور تختی پکڑانے والی میمونہہے ۔
  •  بچپن سے ہی پولیو کی وجہ سے معذور میمونہ نے اپنی جسمانی کمی کو کبھی کمزوری نہیں بننے دیا ، بلکہ کتابوں سے دوستی کی اور یہ کوشش شروع کردی اس کے گاؤں کے لوگ بھی کتابوں کو اپنے ہاتھوں میں تھامنے لگیں۔
  •  میمونہ اپنے گاؤں کی پہلی لڑکی تھی جس نے گریجویشن تک پڑھائی کی اور اسی دن سے ارادہ کر لیا کہ گاؤں کی دیگر خواتین کو بھی پڑھائے گی اور  اس طرح وہ تعلیم بالغان سے جڑ گئی ۔
  •  وہ پوری گاؤں کی بوا ہے، اس کی وجہ سے اب گاؤں کے لوگ اپنا نام لکھنا پڑھنا ،  دواؤں کا نام اور اخبار تک پڑھنے لگے ہیں ۔
  • تعلیم با لغان پروگرام سے 1999  سے وابستہ میمونہ گاؤں میں اس پروگرام  کے ختم ہونے کے بعد بھی اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئی ہے ۔
  •  جنون اس قدر ہے کہ اس نے شادی تک نہیں کی ہے ۔
  •  میمونہ کو اس کام کے لیے کئی ایوارڈ بھی مل چکے ہیں،  لیکن میمونہ کا درد یہ ہے کی یہ ایوارڈ دو وقت کی روٹی نہیں دیتے ہیں ۔
  •  اس نے تو اپنے حصے کی ذمہ داری پوری کردی ہے  اور اب سماج اورحکومت کی باری ہے کہ میمونہ کے حالات کو دیکھے اوراس کے لیے کچھ کرے ۔

تازہ ترین تصاویر