ممبرا میں روزہ دار مسافروں کے لئے عصر تا مغرب مفت بس سروس کا اہتمام

Jun 06, 2017 12:16 PM IST
1 of 6
  • ماہ رمضان میں ہر کسی کی یہی کوشش ہوتی ہے کہ وہ کم از کم سحری و افطار اپنے اہل خانہ کے ساتھ کرے اور کسی بھی طرح سے مغرب سے قبل اپنے گھر پہنچ جائے ۔ اس کے لئے بیشتر لوگ کام کاج جلد از جلد نپٹانے کی کوشش کرتے ہیں اور شام ہوتے ہی اپنے گھروں کا رخ کرتے ہیں ۔ اس طرح بیک وقت میں ہزاروں کی تعداد میں مسافرین کے سڑکوں پر آتے ہی خاص کر مسلم اکثریتی شہروں میں ٹریفک جام کے ساتھ آٹو اور دیگر سواری گاڑیوں کی قلت ہونے لگتی ہے۔

    ماہ رمضان میں ہر کسی کی یہی کوشش ہوتی ہے کہ وہ کم از کم سحری و افطار اپنے اہل خانہ کے ساتھ کرے اور کسی بھی طرح سے مغرب سے قبل اپنے گھر پہنچ جائے ۔ اس کے لئے بیشتر لوگ کام کاج جلد از جلد نپٹانے کی کوشش کرتے ہیں اور شام ہوتے ہی اپنے گھروں کا رخ کرتے ہیں ۔ اس طرح بیک وقت میں ہزاروں کی تعداد میں مسافرین کے سڑکوں پر آتے ہی خاص کر مسلم اکثریتی شہروں میں ٹریفک جام کے ساتھ آٹو اور دیگر سواری گاڑیوں کی قلت ہونے لگتی ہے۔

  • ممبرا جیسے مسلم اکثریتی علاقہ میں خاص کر رمضان میں جب بیک وقت ہزاروں افراد  ٹرینوں سے اترتے ہیں تو آٹو کی کمی محسوس ہوتی ہے۔ ایسے میں کئی افراد کی افطاری اسٹیشن یا راستے میں ہی ہوجاتی ہے ۔

    ممبرا جیسے مسلم اکثریتی علاقہ میں خاص کر رمضان میں جب بیک وقت ہزاروں افراد ٹرینوں سے اترتے ہیں تو آٹو کی کمی محسوس ہوتی ہے۔ ایسے میں کئی افراد کی افطاری اسٹیشن یا راستے میں ہی ہوجاتی ہے ۔

  • ساتھ ہی یہاں بیشتر آٹو والے جو روزہ سے ہوتے ہیں وہ خود بھی اپنے گھر چلے جاتے ہیں ۔

    ساتھ ہی یہاں بیشتر آٹو والے جو روزہ سے ہوتے ہیں وہ خود بھی اپنے گھر چلے جاتے ہیں ۔

  •  اس لئے رکشہ اور سواری گاڑیوں کی کمی اور روزہ داروں کو درپیش دشواریوں کو دیکھتے ہوئے مقامی ایم ایل اے جتیندر اوہاڈ کی جانب سے ہر سال رمضان میں عصر تا مغرب مفت بس سروس شروع کی جاتی ہے ۔ یہ بس سروس گذشتہ سات سالوں سے جاری ہے ۔

    اس لئے رکشہ اور سواری گاڑیوں کی کمی اور روزہ داروں کو درپیش دشواریوں کو دیکھتے ہوئے مقامی ایم ایل اے جتیندر اوہاڈ کی جانب سے ہر سال رمضان میں عصر تا مغرب مفت بس سروس شروع کی جاتی ہے ۔ یہ بس سروس گذشتہ سات سالوں سے جاری ہے ۔

  • مفت بس چلانے اور لوگوں کو افطار تک ان کی منزل تک پہنچانے کی ایم ایل اے کی اس کوشش کی مقامی لوگوں نے ستائش کرتے ہوئے ان بسوں کو صرف رمضان تک ہی نہیں بلکہ عید کے تین دنوں تک بھی چلانے کا مطالبہ کیا ہے ۔

    مفت بس چلانے اور لوگوں کو افطار تک ان کی منزل تک پہنچانے کی ایم ایل اے کی اس کوشش کی مقامی لوگوں نے ستائش کرتے ہوئے ان بسوں کو صرف رمضان تک ہی نہیں بلکہ عید کے تین دنوں تک بھی چلانے کا مطالبہ کیا ہے ۔

  •  لوگوں کا کہنا ہے  یہاں زیادہ تر آٹو والے مسلم ہیں جو عید کے روز چھٹی کرتے ہیں اور ایسے میں مہمانان کو اپنی منزل تک پہنچنے میں سخت دشواری پیش آتی ہے ۔

    لوگوں کا کہنا ہے یہاں زیادہ تر آٹو والے مسلم ہیں جو عید کے روز چھٹی کرتے ہیں اور ایسے میں مہمانان کو اپنی منزل تک پہنچنے میں سخت دشواری پیش آتی ہے ۔

  • ممبرا جیسے مسلم اکثریتی علاقہ میں خاص کر رمضان میں جب بیک وقت ہزاروں افراد  ٹرینوں سے اترتے ہیں تو آٹو کی کمی محسوس ہوتی ہے۔ ایسے میں کئی افراد کی افطاری اسٹیشن یا راستے میں ہی ہوجاتی ہے ۔
  • ساتھ ہی یہاں بیشتر آٹو والے جو روزہ سے ہوتے ہیں وہ خود بھی اپنے گھر چلے جاتے ہیں ۔
  •  اس لئے رکشہ اور سواری گاڑیوں کی کمی اور روزہ داروں کو درپیش دشواریوں کو دیکھتے ہوئے مقامی ایم ایل اے جتیندر اوہاڈ کی جانب سے ہر سال رمضان میں عصر تا مغرب مفت بس سروس شروع کی جاتی ہے ۔ یہ بس سروس گذشتہ سات سالوں سے جاری ہے ۔
  • مفت بس چلانے اور لوگوں کو افطار تک ان کی منزل تک پہنچانے کی ایم ایل اے کی اس کوشش کی مقامی لوگوں نے ستائش کرتے ہوئے ان بسوں کو صرف رمضان تک ہی نہیں بلکہ عید کے تین دنوں تک بھی چلانے کا مطالبہ کیا ہے ۔
  •  لوگوں کا کہنا ہے  یہاں زیادہ تر آٹو والے مسلم ہیں جو عید کے روز چھٹی کرتے ہیں اور ایسے میں مہمانان کو اپنی منزل تک پہنچنے میں سخت دشواری پیش آتی ہے ۔

تازہ ترین تصاویر