سب سے مجبورہیں اس ملک کی خواتین، میک اپ کرنے سے لے کرنہاتی بھی ہیں شوہرکی مرضی سے

Jun 20, 2018 11:46 PM IST
1 of 7
  • یہ دنیا کا سب سے مختلف ملک ہے۔ خصوصی طور پر خواتین کے لئے۔ اس ملک کی حکومت نے کچھ روز قبل ہی اپنے ملک کی 10 خواتین کو ڈرائیونگ لائسنس جاری کئے ہیں۔ یہ ایک تاریخی قدم  حکومت کے اس اعلان کے 20 روز بعد اٹھایا گیا، جس کے تحت خواتین پر ڈرائیونگ لائسنس کی پابندی کو ہٹا دیا گیا تھا۔ لیکن اس ملک میں اب بھی ایسے کئی کام ہیں جو خواتین کو پوچھ پوچھ کر کرنا ہوتا ہے۔ آئیے جانتے ہیں کون سے ہیں وہ کام اور کون سا یہ ہے ملک

    یہ دنیا کا سب سے مختلف ملک ہے۔ خصوصی طور پر خواتین کے لئے۔ اس ملک کی حکومت نے کچھ روز قبل ہی اپنے ملک کی 10 خواتین کو ڈرائیونگ لائسنس جاری کئے ہیں۔ یہ ایک تاریخی قدم  حکومت کے اس اعلان کے 20 روز بعد اٹھایا گیا، جس کے تحت خواتین پر ڈرائیونگ لائسنس کی پابندی کو ہٹا دیا گیا تھا۔ لیکن اس ملک میں اب بھی ایسے کئی کام ہیں جو خواتین کو پوچھ پوچھ کر کرنا ہوتا ہے۔ آئیے جانتے ہیں کون سے ہیں وہ کام اور کون سا یہ ہے ملک

  • ابھی بھی سعودی عرب کی خواتین کو کافی لمبا راستہ طے کرنا ہے۔ ایسے میں بہت سے عام زندگی کے کام اور فیصلے ہیں جو وہاں کی خواتین مرد کی اجازت کے بغیر نہیں کر سکتیں۔

    ابھی بھی سعودی عرب کی خواتین کو کافی لمبا راستہ طے کرنا ہے۔ ایسے میں بہت سے عام زندگی کے کام اور فیصلے ہیں جو وہاں کی خواتین مرد کی اجازت کے بغیر نہیں کر سکتیں۔

  • اس کے مطابق خواتین کو کسی ایک مرد کے تحفظ میں رہنا ضروری ہے۔ والد، بھائی، شوہر، کوئی بھی تحفظ کر سکتا ہے۔ متعدد مرتبہ تو ایک پانچ سالہ لڑکے کو بھی خاتون کا گارجین مان لیا جاتا ہے۔

    اس کے مطابق خواتین کو کسی ایک مرد کے تحفظ میں رہنا ضروری ہے۔ والد، بھائی، شوہر، کوئی بھی تحفظ کر سکتا ہے۔ متعدد مرتبہ تو ایک پانچ سالہ لڑکے کو بھی خاتون کا گارجین مان لیا جاتا ہے۔

  • اس تحفظ کے نظام کی وجہ سے پاسپورٹ، بینک اکاونٹ، شادی اورطلاق جیسے فیصلہ کے لئے بھی مدر گارجین  کی اجازت چاہئے۔

    اس تحفظ کے نظام کی وجہ سے پاسپورٹ، بینک اکاونٹ، شادی اورطلاق جیسے فیصلہ کے لئے بھی مدر گارجین  کی اجازت چاہئے۔

  • مثلاً گھریلوتشدد  کی متاثرہ خواتین کو اکثر شکایت درج کرانے سے قبل پولیس کے سوالات کا سامنا کرنا گارجین کی اجازت ہے یا نہیں؟

    مثلاً گھریلوتشدد  کی متاثرہ خواتین کو اکثر شکایت درج کرانے سے قبل پولیس کے سوالات کا سامنا کرنا گارجین کی اجازت ہے یا نہیں؟

  • خواتین کے لباس پر سخت نگرانی رکھی جاتی ہے اور شریعت کے مطابق ہی ڈریس کوڈ طے کیا جاتا ہے۔ زیادہ ترخواتین برقعہ اور ابایا پہنتی ہیں۔ یہ ضروری نہیں کی چہرا چھپا ہوا ہو لیکن سعودی میں ابھی بھی زیب وتن کرنےپر پابندی ہے۔

    خواتین کے لباس پر سخت نگرانی رکھی جاتی ہے اور شریعت کے مطابق ہی ڈریس کوڈ طے کیا جاتا ہے۔ زیادہ ترخواتین برقعہ اور ابایا پہنتی ہیں۔ یہ ضروری نہیں کی چہرا چھپا ہوا ہو لیکن سعودی میں ابھی بھی زیب وتن کرنےپر پابندی ہے۔

  • غیر مردوں سے زیادہ بات چیت کے لئے بھی خواتین کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ۔

    غیر مردوں سے زیادہ بات چیت کے لئے بھی خواتین کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ۔

  • ابھی بھی سعودی عرب کی خواتین کو کافی لمبا راستہ طے کرنا ہے۔ ایسے میں بہت سے عام زندگی کے کام اور فیصلے ہیں جو وہاں کی خواتین مرد کی اجازت کے بغیر نہیں کر سکتیں۔
  • اس کے مطابق خواتین کو کسی ایک مرد کے تحفظ میں رہنا ضروری ہے۔ والد، بھائی، شوہر، کوئی بھی تحفظ کر سکتا ہے۔ متعدد مرتبہ تو ایک پانچ سالہ لڑکے کو بھی خاتون کا گارجین مان لیا جاتا ہے۔
  • اس تحفظ کے نظام کی وجہ سے پاسپورٹ، بینک اکاونٹ، شادی اورطلاق جیسے فیصلہ کے لئے بھی مدر گارجین  کی اجازت چاہئے۔
  • مثلاً گھریلوتشدد  کی متاثرہ خواتین کو اکثر شکایت درج کرانے سے قبل پولیس کے سوالات کا سامنا کرنا گارجین کی اجازت ہے یا نہیں؟
  • خواتین کے لباس پر سخت نگرانی رکھی جاتی ہے اور شریعت کے مطابق ہی ڈریس کوڈ طے کیا جاتا ہے۔ زیادہ ترخواتین برقعہ اور ابایا پہنتی ہیں۔ یہ ضروری نہیں کی چہرا چھپا ہوا ہو لیکن سعودی میں ابھی بھی زیب وتن کرنےپر پابندی ہے۔
  • غیر مردوں سے زیادہ بات چیت کے لئے بھی خواتین کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ۔

تازہ ترین تصاویر