فری لانس کال گرلس کا ریکٹ بنا چکی تھی جنسی تجارت کی لیڈی ڈان

Jun 28, 2018 11:44 AM IST
1 of 10
  • کیا سونو پنجابن پیدائشی مجرم تھی؟ نہیں لیکن اس نے جرائم کا راستہ چنا اور اس راستے پر وہ اپنی دھن میں ہی آگے بڑھتی چلی گئی۔ہریانہ کے روہتک میں ایک عام خاندان کی لڑکی تھی گیتا۔پڑھی لکھی کم تھی لیکن میٹھی باتیں اور اچھی زبان اس کے پلس پوائنٹ تھے۔اس کی زندگی کی پہلی غلطی تھی گینگستڑ وجے کے ساتھ رشتہ جوڑنا۔شروع سے ہی گیتا کو بدمعاش اور گنڈے قسم کے لڑکے پسند تھے اور اسی وجہ سے وہ وجے کے ساتھ شادی کر چکی تھی۔

    کیا سونو پنجابن پیدائشی مجرم تھی؟ نہیں لیکن اس نے جرائم کا راستہ چنا اور اس راستے پر وہ اپنی دھن میں ہی آگے بڑھتی چلی گئی۔ہریانہ کے روہتک میں ایک عام خاندان کی لڑکی تھی گیتا۔پڑھی لکھی کم تھی لیکن میٹھی باتیں اور اچھی زبان اس کے پلس پوائنٹ تھے۔اس کی زندگی کی پہلی غلطی تھی گینگستڑ وجے کے ساتھ رشتہ جوڑنا۔شروع سے ہی گیتا کو بدمعاش اور گنڈے قسم کے لڑکے پسند تھے اور اسی وجہ سے وہ وجے کے ساتھ شادی کر چکی تھی۔

  •  بدنام گینگسٹر شری پرکاش شکلا کا قریبی کہا جانے والا وجے پولیس کی نظروں میں چڑھ چکا تھا ۔ایک بیوٹی پارلر چلانے والی گیتا جب حاملہ تھی تبھی وجے پولیس کی گولیوں کا شکا ر ہو گیا۔وجے کی موت کے کچھ ہی وقت بعد گیتا کے والس کی بھی موت ہو گئی اور اب گیتا نو زائدہ بچے کے ساتھ الیلی رہ گئی۔بڑی حسرتوں اور ارادوں والی گیتا نے کچھ ہی وقت مجبوریاں سہیں اور اس کے بعد پارلر کو جسم فروشی کے دھندے میں تبدیل کرنے کا راستہ تلا ش لیا۔

    بدنام گینگسٹر شری پرکاش شکلا کا قریبی کہا جانے والا وجے پولیس کی نظروں میں چڑھ چکا تھا ۔ایک بیوٹی پارلر چلانے والی گیتا جب حاملہ تھی تبھی وجے پولیس کی گولیوں کا شکا ر ہو گیا۔وجے کی موت کے کچھ ہی وقت بعد گیتا کے والس کی بھی موت ہو گئی اور اب گیتا نو زائدہ بچے کے ساتھ الیلی رہ گئی۔بڑی حسرتوں اور ارادوں والی گیتا نے کچھ ہی وقت مجبوریاں سہیں اور اس کے بعد پارلر کو جسم فروشی کے دھندے میں تبدیل کرنے کا راستہ تلا ش لیا۔

  • مددگار ملتے گئے اور گیتا اس دھندے میں آگے بڑھتی چلی گئی۔دہلی کے ساکیت میں ایک فلیٹ لیکر گیتا نے بدکاری کا پہلا اڈہ کھولا۔یہاں گیتا با قاعدہ لڑکیوں کو ٹریننگ دیا کرتی تھی۔انگریزی میں بات کرنا اور ہائی سوسائیٹی کے طور طریقوں کے بارے میں لڑکیوں کو بتاکر انہیں کسٹمر کو امپریس کرنے کیلئے تیار کرتی تھی۔گیتا کی سپلائی کی ہوئی لڑکیوں کیلئے جلد ہی ڈیمانڈ بڑھنا شروع ہو گئی تھی۔اب اسے منھ مانگی رقم  ملتی تھی اور وہ پنجابن سے جانی جانے لگی تھی۔

    مددگار ملتے گئے اور گیتا اس دھندے میں آگے بڑھتی چلی گئی۔دہلی کے ساکیت میں ایک فلیٹ لیکر گیتا نے بدکاری کا پہلا اڈہ کھولا۔یہاں گیتا با قاعدہ لڑکیوں کو ٹریننگ دیا کرتی تھی۔انگریزی میں بات کرنا اور ہائی سوسائیٹی کے طور طریقوں کے بارے میں لڑکیوں کو بتاکر انہیں کسٹمر کو امپریس کرنے کیلئے تیار کرتی تھی۔گیتا کی سپلائی کی ہوئی لڑکیوں کیلئے جلد ہی ڈیمانڈ بڑھنا شروع ہو گئی تھی۔اب اسے منھ مانگی رقم ملتی تھی اور وہ پنجابن سے جانی جانے لگی تھی۔

  • کار چوری کے گروہ کا سرغنہ دیپک اسی درمیان گیتا کی زندگی میںیا ۔گیتا کو دیپک سے پیار ہوا اور کچھ ہی دنوں میں خبر ملی کہ آسام میں پولیس کے ایک شوٹ آؤٹ میں دیپک مارا گیا۔دیپک کے بھائی ہیمنت سونو  نے گیتا کا بہت ساتھ دیا اور وہ گیتا کے کاروبار میں بھی بھر پور مدد کرنے لگا۔ادھر گیتا کا دھندہ بھی زبردست چل رہا تھا اور سونو کے ساتھ گیتا کا رومانس بھی ۔جلد ہی گیتااور سونو نےشادی کر لی۔

    کار چوری کے گروہ کا سرغنہ دیپک اسی درمیان گیتا کی زندگی میںیا ۔گیتا کو دیپک سے پیار ہوا اور کچھ ہی دنوں میں خبر ملی کہ آسام میں پولیس کے ایک شوٹ آؤٹ میں دیپک مارا گیا۔دیپک کے بھائی ہیمنت سونو نے گیتا کا بہت ساتھ دیا اور وہ گیتا کے کاروبار میں بھی بھر پور مدد کرنے لگا۔ادھر گیتا کا دھندہ بھی زبردست چل رہا تھا اور سونو کے ساتھ گیتا کا رومانس بھی ۔جلد ہی گیتااور سونو نےشادی کر لی۔

  • بتادیں کہ 2006 میں ہیمنت سونو اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ پولیس انکاؤنٹر میں مارا گیا ۔یہ گیتا کیلئے ایک بڑا صدمہ تھا ۔سونو کو گیتا نے اپنے بہت قریب محسوس کیا تھا اس لئے اس نے سونو کا نام اپنے نام کے ساتھ جوڑ لیا اور اب وہ بن چکی تھی سونو پنجابن۔اس کے بعد تین سال تک سونو پنجابن اپنے دھندے میں کئی مشکلوں کا سامنا کرتی رہی۔اگلے دو سالوں میں پولیس کیس سونو کے خلاف درج ہوئے ،حالانکہ وہ دھڑلے سے ان کیسوں سے بچ نکلنے میں کامیاب ہوئی۔

    بتادیں کہ 2006 میں ہیمنت سونو اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ پولیس انکاؤنٹر میں مارا گیا ۔یہ گیتا کیلئے ایک بڑا صدمہ تھا ۔سونو کو گیتا نے اپنے بہت قریب محسوس کیا تھا اس لئے اس نے سونو کا نام اپنے نام کے ساتھ جوڑ لیا اور اب وہ بن چکی تھی سونو پنجابن۔اس کے بعد تین سال تک سونو پنجابن اپنے دھندے میں کئی مشکلوں کا سامنا کرتی رہی۔اگلے دو سالوں میں پولیس کیس سونو کے خلاف درج ہوئے ،حالانکہ وہ دھڑلے سے ان کیسوں سے بچ نکلنے میں کامیاب ہوئی۔

  • سونو پنجابن کا نیٹورک مضبوط ہو رہا تھا اور 2009 میں بابا بھیم آنند اور نغمہ خان کی گرفتاری سے اسے بڑا اچھال ملا۔یہ دونوں سونو کے دھندے اس کے کامپیٹیٹر تھے اور ان کی گرفتاری کے بعد سونو اپنے دھندے کی سب سے بڑی ڈان بن گئی۔اب اس نے ڈرگس اور ؒرکیوں کی تسکری کے دھندے کی بھی کھل کر شروعات کر دی تھی۔اس پورے ریکٹ مین سونو کا کوئی مقبلہ دہلی میں نہیں تھا۔

    سونو پنجابن کا نیٹورک مضبوط ہو رہا تھا اور 2009 میں بابا بھیم آنند اور نغمہ خان کی گرفتاری سے اسے بڑا اچھال ملا۔یہ دونوں سونو کے دھندے اس کے کامپیٹیٹر تھے اور ان کی گرفتاری کے بعد سونو اپنے دھندے کی سب سے بڑی ڈان بن گئی۔اب اس نے ڈرگس اور ؒرکیوں کی تسکری کے دھندے کی بھی کھل کر شروعات کر دی تھی۔اس پورے ریکٹ مین سونو کا کوئی مقبلہ دہلی میں نہیں تھا۔

  • پورے ملک میں کئی شہروں میں لڑکیاں سپلائی کر رہی تھی۔اس درمیان ایک دو کیسوں میں اور سونو پھنسی لیکن ہمیشہ بچ نکلنے میں کامیاب ہوتی رہی۔اس کے بڑے  رابطوں کی وجہ سے اسے اس دھندے میں لیڈی ڈان کہا جانے لگا تھا اور وہ کروڑوں کی مالکن بن چکی تھی۔دہلی کے کئی پاش علاقوں میں اس کی املاک تھی اور کئی لڑکیاں اس کے ہاتھ کے نیچے دھندی کر رہی  تھیں۔

    پورے ملک میں کئی شہروں میں لڑکیاں سپلائی کر رہی تھی۔اس درمیان ایک دو کیسوں میں اور سونو پھنسی لیکن ہمیشہ بچ نکلنے میں کامیاب ہوتی رہی۔اس کے بڑے رابطوں کی وجہ سے اسے اس دھندے میں لیڈی ڈان کہا جانے لگا تھا اور وہ کروڑوں کی مالکن بن چکی تھی۔دہلی کے کئی پاش علاقوں میں اس کی املاک تھی اور کئی لڑکیاں اس کے ہاتھ کے نیچے دھندی کر رہی تھیں۔

  • سونو نے دھندے کو نیا تکنیکی رنگ دینا شروع کیا۔ہائی کلاس کیلئے لڑکیوں کو ٹرینڈ کرنے کے بعد وہ وہاٹس ایپ اور دیگر کالز کے ذڑیعے ڈیل فکس کرتی تھی۔فری لانس کال گرلس کا ایک پورا ڈھانچہ سنو نےتیار کر دیا تھا۔اس لئے کسی ایک ٹھکانے کے ذریعےلڑکیاں سپلائی کرنے کی ضرورت ختم ہو چکی تھی۔اس کا پورا دھندا نیوٹورک اور کمیشن پر چلنے لگا تھا ۔سونو پنجابن کی ایسکارٹ سروس دہلی کے نہرو پلیس علاقے سے چل رہی تھی ۔

    سونو نے دھندے کو نیا تکنیکی رنگ دینا شروع کیا۔ہائی کلاس کیلئے لڑکیوں کو ٹرینڈ کرنے کے بعد وہ وہاٹس ایپ اور دیگر کالز کے ذڑیعے ڈیل فکس کرتی تھی۔فری لانس کال گرلس کا ایک پورا ڈھانچہ سنو نےتیار کر دیا تھا۔اس لئے کسی ایک ٹھکانے کے ذریعےلڑکیاں سپلائی کرنے کی ضرورت ختم ہو چکی تھی۔اس کا پورا دھندا نیوٹورک اور کمیشن پر چلنے لگا تھا ۔سونو پنجابن کی ایسکارٹ سروس دہلی کے نہرو پلیس علاقے سے چل رہی تھی ۔

  • اسمگلنگ ،بدکاری اور ڈرگس کے ذریعے متاثر کی گئی لڑکی کی شکایت کے بعد 2017 میں پولیس سونو پنجابن تک پہنچ گئی اور اسے گرفتار کیا گیا۔انسانی اسمگلنگ ،بدکاری ڈرگس جیسے کئی معاملات میں اس کے خلاف کیس درج کیا گیا تب پولیس کو پتہ چلا کہ سونو پنجابن وریب 100 کروڑ روپئے کی مالکن تھی۔یہی نہیں سونو نے اپنی ایسکارٹ سروس کے ذریعے ایئر ہوسٹسوں،کالج طالبات سے لیکر ٹی وی اداکاراؤں تک کی ڈیل تھی۔

    اسمگلنگ ،بدکاری اور ڈرگس کے ذریعے متاثر کی گئی لڑکی کی شکایت کے بعد 2017 میں پولیس سونو پنجابن تک پہنچ گئی اور اسے گرفتار کیا گیا۔انسانی اسمگلنگ ،بدکاری ڈرگس جیسے کئی معاملات میں اس کے خلاف کیس درج کیا گیا تب پولیس کو پتہ چلا کہ سونو پنجابن وریب 100 کروڑ روپئے کی مالکن تھی۔یہی نہیں سونو نے اپنی ایسکارٹ سروس کے ذریعے ایئر ہوسٹسوں،کالج طالبات سے لیکر ٹی وی اداکاراؤں تک کی ڈیل تھی۔

  • اسی سال کچھ ہی وقت پہلے پولیس نے سونو پنجابن کے خلاف چارج شیٹ پیش کی اور ککیس عدالت میں چل رہا ہے۔غور طلب ہے کہ بالی ووڈ کی مشہور فلم فکرے میں رچا چڈا نے بھی بھولی پنجابن کا کردار نبھایا تھا ۔مانا جاتا ہے کہ یہ کردار دہلی میں بدکاری کے کاروبار کی لیدی دان کہی جانے والی سونو پنجابن عرف گیتا اروڑہ سے ہی مشسلک تھا۔

    اسی سال کچھ ہی وقت پہلے پولیس نے سونو پنجابن کے خلاف چارج شیٹ پیش کی اور ککیس عدالت میں چل رہا ہے۔غور طلب ہے کہ بالی ووڈ کی مشہور فلم فکرے میں رچا چڈا نے بھی بھولی پنجابن کا کردار نبھایا تھا ۔مانا جاتا ہے کہ یہ کردار دہلی میں بدکاری کے کاروبار کی لیدی دان کہی جانے والی سونو پنجابن عرف گیتا اروڑہ سے ہی مشسلک تھا۔

  •  بدنام گینگسٹر شری پرکاش شکلا کا قریبی کہا جانے والا وجے پولیس کی نظروں میں چڑھ چکا تھا ۔ایک بیوٹی پارلر چلانے والی گیتا جب حاملہ تھی تبھی وجے پولیس کی گولیوں کا شکا ر ہو گیا۔وجے کی موت کے کچھ ہی وقت بعد گیتا کے والس کی بھی موت ہو گئی اور اب گیتا نو زائدہ بچے کے ساتھ الیلی رہ گئی۔بڑی حسرتوں اور ارادوں والی گیتا نے کچھ ہی وقت مجبوریاں سہیں اور اس کے بعد پارلر کو جسم فروشی کے دھندے میں تبدیل کرنے کا راستہ تلا ش لیا۔
  • مددگار ملتے گئے اور گیتا اس دھندے میں آگے بڑھتی چلی گئی۔دہلی کے ساکیت میں ایک فلیٹ لیکر گیتا نے بدکاری کا پہلا اڈہ کھولا۔یہاں گیتا با قاعدہ لڑکیوں کو ٹریننگ دیا کرتی تھی۔انگریزی میں بات کرنا اور ہائی سوسائیٹی کے طور طریقوں کے بارے میں لڑکیوں کو بتاکر انہیں کسٹمر کو امپریس کرنے کیلئے تیار کرتی تھی۔گیتا کی سپلائی کی ہوئی لڑکیوں کیلئے جلد ہی ڈیمانڈ بڑھنا شروع ہو گئی تھی۔اب اسے منھ مانگی رقم  ملتی تھی اور وہ پنجابن سے جانی جانے لگی تھی۔
  • کار چوری کے گروہ کا سرغنہ دیپک اسی درمیان گیتا کی زندگی میںیا ۔گیتا کو دیپک سے پیار ہوا اور کچھ ہی دنوں میں خبر ملی کہ آسام میں پولیس کے ایک شوٹ آؤٹ میں دیپک مارا گیا۔دیپک کے بھائی ہیمنت سونو  نے گیتا کا بہت ساتھ دیا اور وہ گیتا کے کاروبار میں بھی بھر پور مدد کرنے لگا۔ادھر گیتا کا دھندہ بھی زبردست چل رہا تھا اور سونو کے ساتھ گیتا کا رومانس بھی ۔جلد ہی گیتااور سونو نےشادی کر لی۔
  • بتادیں کہ 2006 میں ہیمنت سونو اپنے دو ساتھیوں کے ساتھ پولیس انکاؤنٹر میں مارا گیا ۔یہ گیتا کیلئے ایک بڑا صدمہ تھا ۔سونو کو گیتا نے اپنے بہت قریب محسوس کیا تھا اس لئے اس نے سونو کا نام اپنے نام کے ساتھ جوڑ لیا اور اب وہ بن چکی تھی سونو پنجابن۔اس کے بعد تین سال تک سونو پنجابن اپنے دھندے میں کئی مشکلوں کا سامنا کرتی رہی۔اگلے دو سالوں میں پولیس کیس سونو کے خلاف درج ہوئے ،حالانکہ وہ دھڑلے سے ان کیسوں سے بچ نکلنے میں کامیاب ہوئی۔
  • سونو پنجابن کا نیٹورک مضبوط ہو رہا تھا اور 2009 میں بابا بھیم آنند اور نغمہ خان کی گرفتاری سے اسے بڑا اچھال ملا۔یہ دونوں سونو کے دھندے اس کے کامپیٹیٹر تھے اور ان کی گرفتاری کے بعد سونو اپنے دھندے کی سب سے بڑی ڈان بن گئی۔اب اس نے ڈرگس اور ؒرکیوں کی تسکری کے دھندے کی بھی کھل کر شروعات کر دی تھی۔اس پورے ریکٹ مین سونو کا کوئی مقبلہ دہلی میں نہیں تھا۔
  • پورے ملک میں کئی شہروں میں لڑکیاں سپلائی کر رہی تھی۔اس درمیان ایک دو کیسوں میں اور سونو پھنسی لیکن ہمیشہ بچ نکلنے میں کامیاب ہوتی رہی۔اس کے بڑے  رابطوں کی وجہ سے اسے اس دھندے میں لیڈی ڈان کہا جانے لگا تھا اور وہ کروڑوں کی مالکن بن چکی تھی۔دہلی کے کئی پاش علاقوں میں اس کی املاک تھی اور کئی لڑکیاں اس کے ہاتھ کے نیچے دھندی کر رہی  تھیں۔
  • سونو نے دھندے کو نیا تکنیکی رنگ دینا شروع کیا۔ہائی کلاس کیلئے لڑکیوں کو ٹرینڈ کرنے کے بعد وہ وہاٹس ایپ اور دیگر کالز کے ذڑیعے ڈیل فکس کرتی تھی۔فری لانس کال گرلس کا ایک پورا ڈھانچہ سنو نےتیار کر دیا تھا۔اس لئے کسی ایک ٹھکانے کے ذریعےلڑکیاں سپلائی کرنے کی ضرورت ختم ہو چکی تھی۔اس کا پورا دھندا نیوٹورک اور کمیشن پر چلنے لگا تھا ۔سونو پنجابن کی ایسکارٹ سروس دہلی کے نہرو پلیس علاقے سے چل رہی تھی ۔
  • اسمگلنگ ،بدکاری اور ڈرگس کے ذریعے متاثر کی گئی لڑکی کی شکایت کے بعد 2017 میں پولیس سونو پنجابن تک پہنچ گئی اور اسے گرفتار کیا گیا۔انسانی اسمگلنگ ،بدکاری ڈرگس جیسے کئی معاملات میں اس کے خلاف کیس درج کیا گیا تب پولیس کو پتہ چلا کہ سونو پنجابن وریب 100 کروڑ روپئے کی مالکن تھی۔یہی نہیں سونو نے اپنی ایسکارٹ سروس کے ذریعے ایئر ہوسٹسوں،کالج طالبات سے لیکر ٹی وی اداکاراؤں تک کی ڈیل تھی۔
  • اسی سال کچھ ہی وقت پہلے پولیس نے سونو پنجابن کے خلاف چارج شیٹ پیش کی اور ککیس عدالت میں چل رہا ہے۔غور طلب ہے کہ بالی ووڈ کی مشہور فلم فکرے میں رچا چڈا نے بھی بھولی پنجابن کا کردار نبھایا تھا ۔مانا جاتا ہے کہ یہ کردار دہلی میں بدکاری کے کاروبار کی لیدی دان کہی جانے والی سونو پنجابن عرف گیتا اروڑہ سے ہی مشسلک تھا۔

تازہ ترین تصاویر