گلبرگہ میں مختلف مساجد اور مدارس میں سمر دینی کلاسز کا اہتمام ، اسکولی طلبہ کو دی جارہی ہے دینی تعلیم

Apr 14, 2017 08:54 PM IST
1 of 8
  • گلبرگہ میں ان دنوں متعدد مساجد اور مدارس میں سمر دینی کلاسز کا اہتمام کیا جا رہا ہے۔ اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کی ایک بڑی تعداد ان سمر کلاسس میں زیر تعلیم ہے۔ مدارس کے مہتمم حضرات کا کہنا ہے کہ اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کو نظر میں رکھتے ہوئے ہی سمر کیمپ کا نصاب ترتیب دیا گیا ہے۔ وہیں والدین بھی اس طرح کے سمر کلاسز اپنے بچوں کی دینی تربیت کے لیے ضروری قرار دے رہے ہیں ۔

    گلبرگہ میں ان دنوں متعدد مساجد اور مدارس میں سمر دینی کلاسز کا اہتمام کیا جا رہا ہے۔ اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کی ایک بڑی تعداد ان سمر کلاسس میں زیر تعلیم ہے۔ مدارس کے مہتمم حضرات کا کہنا ہے کہ اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کو نظر میں رکھتے ہوئے ہی سمر کیمپ کا نصاب ترتیب دیا گیا ہے۔ وہیں والدین بھی اس طرح کے سمر کلاسز اپنے بچوں کی دینی تربیت کے لیے ضروری قرار دے رہے ہیں ۔

  •  اس کیمپ میں روزمرہ کی زندگی کی مسنون دعائیں طلبہ کوسکھائی جا رہی ہیں ۔ وہیں سیرت النبی، عقیدہ توحید، چالیس منتخب احادیث بھی طلبہ کو یاد کرائی جا رہی ہیں۔

    اس کیمپ میں روزمرہ کی زندگی کی مسنون دعائیں طلبہ کوسکھائی جا رہی ہیں ۔ وہیں سیرت النبی، عقیدہ توحید، چالیس منتخب احادیث بھی طلبہ کو یاد کرائی جا رہی ہیں۔

  •   کیمپ میں شامل ایک طالب علم عبدالرحیم شہر کے ایک بڑے انگریزی اسکول میں زیر تعلیم ہے، جہاں اسلامی تعلیم کا کوئی نظام نہیں ہے ، مگر لڑکے کے والدین اس میں اسلامی شعار بھی دیکھنا چاہتے ہیں۔

    کیمپ میں شامل ایک طالب علم عبدالرحیم شہر کے ایک بڑے انگریزی اسکول میں زیر تعلیم ہے، جہاں اسلامی تعلیم کا کوئی نظام نہیں ہے ، مگر لڑکے کے والدین اس میں اسلامی شعار بھی دیکھنا چاہتے ہیں۔

  • اسکولوں کے چلتے دینی تعلیم ممکن نہیں ہو پارہی تھی، اس لیے موسم گرما کی چھٹیوں میں عبد الرحیم کو دینی تعلیم دی جا رہی ہے۔  یہ معاملہ صرف عبد الرحیم کا نہیں ہے۔ یہاں موجود کم و بیش سبھی طلبہ کا یہی حال ہے۔

    اسکولوں کے چلتے دینی تعلیم ممکن نہیں ہو پارہی تھی، اس لیے موسم گرما کی چھٹیوں میں عبد الرحیم کو دینی تعلیم دی جا رہی ہے۔ یہ معاملہ صرف عبد الرحیم کا نہیں ہے۔ یہاں موجود کم و بیش سبھی طلبہ کا یہی حال ہے۔

  •  گرمیوں کی چھٹیوں کی وجہ سے اسکولوں کے طلبہ کو دینی تعلیم سے آراستہ کرنے کیلئے گلبرگہ میں دار العلوم سکندریہ سمیت کئی مدارس اور مساجد میں خصوصی سمر کیمپ چلایا جا رہا ہے۔

    گرمیوں کی چھٹیوں کی وجہ سے اسکولوں کے طلبہ کو دینی تعلیم سے آراستہ کرنے کیلئے گلبرگہ میں دار العلوم سکندریہ سمیت کئی مدارس اور مساجد میں خصوصی سمر کیمپ چلایا جا رہا ہے۔

  • کیمپ میں تجوید قرآن کے ساتھ ساتھ دیگر متعدد اسلامی تعلیمات بھی دی جا رہی ہیں۔

    کیمپ میں تجوید قرآن کے ساتھ ساتھ دیگر متعدد اسلامی تعلیمات بھی دی جا رہی ہیں۔

  • ادھر والدین کا بھی کہنا ہے کہ اگر بچوں میں دینی شعور ہی نہ ہو ، تو دنیاوی ترقی  بے کار ہے۔ خواہ پی ایچ ڈی ہی کیوں نہ کرلیں ۔

    ادھر والدین کا بھی کہنا ہے کہ اگر بچوں میں دینی شعور ہی نہ ہو ، تو دنیاوی ترقی بے کار ہے۔ خواہ پی ایچ ڈی ہی کیوں نہ کرلیں ۔

  • سماجی ماہرین بھی اس خاموش خدمت کی ستائش کر رہے ہیں۔ سماجی ماہرین کے مطابق اس طرح کا دینی ماحول ملنے کے بعد کثیرثقافتی ماحول میں بھی طلبہ مستقبل میں اپنی منفرد شاخت برقرار رکھنے میں کامیاب رہیں گے ۔

    سماجی ماہرین بھی اس خاموش خدمت کی ستائش کر رہے ہیں۔ سماجی ماہرین کے مطابق اس طرح کا دینی ماحول ملنے کے بعد کثیرثقافتی ماحول میں بھی طلبہ مستقبل میں اپنی منفرد شاخت برقرار رکھنے میں کامیاب رہیں گے ۔

  •  اس کیمپ میں روزمرہ کی زندگی کی مسنون دعائیں طلبہ کوسکھائی جا رہی ہیں ۔ وہیں سیرت النبی، عقیدہ توحید، چالیس منتخب احادیث بھی طلبہ کو یاد کرائی جا رہی ہیں۔
  •   کیمپ میں شامل ایک طالب علم عبدالرحیم شہر کے ایک بڑے انگریزی اسکول میں زیر تعلیم ہے، جہاں اسلامی تعلیم کا کوئی نظام نہیں ہے ، مگر لڑکے کے والدین اس میں اسلامی شعار بھی دیکھنا چاہتے ہیں۔
  • اسکولوں کے چلتے دینی تعلیم ممکن نہیں ہو پارہی تھی، اس لیے موسم گرما کی چھٹیوں میں عبد الرحیم کو دینی تعلیم دی جا رہی ہے۔  یہ معاملہ صرف عبد الرحیم کا نہیں ہے۔ یہاں موجود کم و بیش سبھی طلبہ کا یہی حال ہے۔
  •  گرمیوں کی چھٹیوں کی وجہ سے اسکولوں کے طلبہ کو دینی تعلیم سے آراستہ کرنے کیلئے گلبرگہ میں دار العلوم سکندریہ سمیت کئی مدارس اور مساجد میں خصوصی سمر کیمپ چلایا جا رہا ہے۔
  • کیمپ میں تجوید قرآن کے ساتھ ساتھ دیگر متعدد اسلامی تعلیمات بھی دی جا رہی ہیں۔
  • ادھر والدین کا بھی کہنا ہے کہ اگر بچوں میں دینی شعور ہی نہ ہو ، تو دنیاوی ترقی  بے کار ہے۔ خواہ پی ایچ ڈی ہی کیوں نہ کرلیں ۔
  • سماجی ماہرین بھی اس خاموش خدمت کی ستائش کر رہے ہیں۔ سماجی ماہرین کے مطابق اس طرح کا دینی ماحول ملنے کے بعد کثیرثقافتی ماحول میں بھی طلبہ مستقبل میں اپنی منفرد شاخت برقرار رکھنے میں کامیاب رہیں گے ۔

تازہ ترین تصاویر