کٹھوعہ عصمت دری کیس: پٹھان کوٹ عدالت میں 31 مئی سے روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہوگی

جموں : جموں وکشمیر کے ضلع کٹھوعہ کے رسانہ نامی گاؤں میں جنوری کے اوائل میں پیش آئے دل دہلانے والے آٹھ سالہ کمسن بچی کے عصمت دری اور قتل واقعہ کے ملزمان کے خلاف مقدمے کی سماعت 31 مئی کو سیشن جج پٹھان کوٹ کی عدالت میں شروع ہوگی۔

May 22, 2018 06:56 PM IST | Updated on: May 22, 2018 06:56 PM IST
کٹھوعہ عصمت دری کیس: پٹھان کوٹ عدالت میں 31 مئی سے روزانہ کی بنیاد پر سماعت ہوگی

جموں : جموں وکشمیر کے ضلع کٹھوعہ کے رسانہ نامی گاؤں میں جنوری کے اوائل میں پیش آئے دل دہلانے والے آٹھ سالہ کمسن بچی کے عصمت دری اور قتل واقعہ کے ملزمان کے خلاف مقدمے کی سماعت 31 مئی کو سیشن جج پٹھان کوٹ کی عدالت میں شروع ہوگی۔  سماعت سپریم کورٹ کے احکامات پر روزانہ کی بنیاد پر ہوگی اور کیمرے میں قید کی جائے گی۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے 7 مئی کو کٹھوعہ کیس کی جانچ سی بی آئی سے کرانے سے انکار کرتے ہوئے کیس کی سماعت کٹھوعہ سے پٹھان کوٹ کی عدالت میں منتقل کرنے ہدایت دی۔

چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی بنچ نے یہ حکم سنایا تھا۔ عدالتی ذرائع نے بتایا کہ سپریم کورٹ کے حکم نامے کی روشنی میں پرنسپل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز جج کٹھوعہ سنجیو گپتا نے منگل کے روز کٹھوعہ عصمت دری و قتل کیس کی پٹھان کوٹ منتقلی کے باضابطہ احکامات جاری کردیے۔ انہوں نے بتایا ’کیس کی سماعت 31 مئی کو پٹھان کوٹ میں شروع ہوگی۔

Loading...

سرکاری چھٹیوں کو چھوڑ کر کیس کی سماعت روزانہ کی بنیاد پر ہوگی۔ یہ اِن کیمرہ سماعت ہوگی‘۔ ذرائع نے بتایا کہ سیشن جج پٹھان کوٹ نے منگل کے روز مختلف متعلقین بشمول حکومت کی جانب سے مقرر کئے گئے وکلاء اور ملزمان کے وکلاء کے ساتھ میٹنگ کرکے کیس کی سماعت شروع کرنے کے انتظامات کا جائزہ لیا۔ اس دوران کیس کے سبھی آٹھ ملزمان کو منگل کے روز کٹھوعہ میں سیشن جج سنجیو گپتا کی عدالت میں پیش کیا گیا۔

ملزمان کے وکیل اے کے ساونی نے پٹھان کوٹ عدالت کے باہر نامہ نگاروں کو بتایا ’سیشن جج کٹھوعہ نے ہمیں آج سیشن جج پٹھان کوٹ کے سامنے پیش ہونے کے لئے کہا تھا۔ سیشن جج کٹھوعہ نے آج ایک حکم نامہ جاری کیااور ہمیں یہ حکم نامہ پٹھان کوٹ پہنچانے کے لئے کہا گیا تھا‘۔

انہوں نے کہا ’یہ حکم نامہ سپریم کورٹ کے احکامات کی روشنی میں جاری کیا گیا ہے۔ سپریم کورٹ نے 7 مئی کو کچھ احکامات جاری کئے۔ متاثرہ بچی کی فیملی کی طرف سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ مقدمے کی ٹرائل چندی گڑھ منتقل کی جائے۔ سپریم کورٹ نے کیس کو چندی گڑھ کے بجائے پٹھان کوٹ منتقل کیا‘۔

Loading...