بستر میں آدیواسی کے قتل کے معاملہ میں ڈی یو اور جے این یو کی پروفیسرز پر مقدمہ درج

جگدلپور۔ چھتیس گڑھ کے بستر ڈویژن میں ٹنگيا گروپ کے لیڈر سومناتھ کے قتل کے معاملے میں پولیس نے دہلی یونیورسٹی کی پروفیسر نندنی سندراور جواہر لال نہرو یونیورسٹی کی ارچنا پرساد سمیت کئی لوگوں کے خلاف معاملہ درج کیا ہے۔

Nov 08, 2016 02:28 PM IST | Updated on: Nov 08, 2016 02:28 PM IST
بستر میں آدیواسی کے قتل کے معاملہ میں ڈی یو اور جے این یو کی پروفیسرز پر مقدمہ درج

جگدلپور۔ چھتیس گڑھ کے بستر ڈویژن میں ٹنگيا گروپ کے لیڈر سومناتھ  کے قتل کے معاملے میں پولیس نے دہلی یونیورسٹی کی پروفیسر نندنی سندراور جواہر لال نہرو یونیورسٹی کی ارچنا پرساد سمیت کئی لوگوں کے خلاف معاملہ درج کیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ قتل سے پہلے ہی پروفیسروں اور نکسلی رہنماؤں نے گاؤں والوں کو چھ ماہ پہلے نکسلیوں کی طرف سے جان سے مارنے کی دھمکی کا ذکر کیا تھا۔ اس کے بعد سومناتھ کا قتل ہو گیا۔ مقتول کی بیوی نے سبھی کے خلاف نامزد ایف آئی آر درج کرائی ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ سومناتھ ماؤنوازوں کی کھل کر مخالفت کرتا تھا۔ اسی سلسلہ میں اس نے حال ہی میں ٹنگيا (کلہاڑی کے لئے مقامی زبان میں استعمال کیا جانے والا لفظ) گروپ بنایا تھا۔

بستر آئی جی ایس آر پی كلوري نے بتایا کہ سومناتھ جمعہ کی رات اپنے تین دن کے بیٹے سے ملنے سکما ضلع کے كماكولینگ کے ناما گاؤں میں واقع اپنے گھر گیا تھا، اسی دوران نکسلیوں نے اسے گھر پر گھیر لیا۔ نکسلیوں نے خاندان کے ارکان کے سامنے کہا کہ نندنی سندر کے سمجھانے کے بعد بھی تم نہیں مانے۔ اس کے بعد سومناتھ کو بے رحمی سے قتل کر دیا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ اس معاملے میں سومناتھ کے خاندان کے ارکان کی شکایت کی بنیاد پر نندنی سمیت دوسرے لوگوں کے خلاف معاملہ درج کیا گیا ہے۔ سومناتھ بلاک کانگریس کمیٹی کا رکن بھی تھا۔ معاملے میں نندنی اور ارچنا سمیت نکسلی لیڈر ونود، شیا ملا اور سی پی آئی لیڈر سنجے پراتے سمیت دیگر 6 لوگوں کے خلاف کل تونگپال تھانے میں قتل کا مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

Loading...

Loading...