உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کورونا سے دو سال میں تقریبا 5 لاکھ اموات، 4 کروڑ سے زیادہ معاملات ، آخر کب ختم ہوگی Covid-19 کے خلاف ہندوستان کی جنگ

    کورونا سے دو سال میں تقریبا 5 لاکھ اموات، 4 کروڑ سے زیادہ معاملات ، آخر کب ختم ہوگی Covid-19 کے خلاف ہندوستان کی جنگ

    کورونا سے دو سال میں تقریبا 5 لاکھ اموات، 4 کروڑ سے زیادہ معاملات ، آخر کب ختم ہوگی Covid-19 کے خلاف ہندوستان کی جنگ

    India Coronavirus News: آج سے ٹھیک دو سال پہلے 30 جنوری 2020 کو چین کی ووہان یونیورسٹی (Wuhan University) میں سمسٹر کا امتحان دینے کے بعد ہندوستان واپس آنے والی ایک طالبہ کورونا وائرس سے متاثر پائی گئی تھی ۔ اس کے بعد سے ہندوستان کووڈ-19 کی تین لہروں کا سامنا کرچکا ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : کووڈ 19 وبا (COVID-19 Pandemic) کے خلاف جاری ہندوستان کی لڑائی کو دو سال مکمل ہو گئے ہیں، لیکن ابھی تک اس بارے میں غیر یقینی کی صورتحال ہے کہ وائرس سے نمٹنے کی یہ جنگ کب ختم ہوگی ۔ ملک اس وقت وبائی مرض کی تیسری لہر کا سامنا کر رہا ہے۔ گزشتہ دو سالوں میں ملک نے کورونا وائرس  (Coronavirus)  کے مختلف ویرئنٹس کا سامنا کیا ہے۔ کورونا کی دوسری تباہ کن لہر کے دوران جہاں ایک جانب وائرس کے ڈیلٹا ویرینٹ  (Delta Variant)  نے تباہی مچا دی تھی، وہیں اس کے اومیکران ویرینٹ  (Omicron Variant) کی وجہ سے انفیکشن کافی تیزی سے پھیلا ۔

      آج سے ٹھیک دو سال پہلے 30 جنوری 2020 کو چین کی ووہان یونیورسٹی  (Wuhan University)  میں سمسٹر کا امتحان دینے کے بعد ہندوستان واپس آنے والی ایک طالبہ کورونا وائرس سے متاثر پائی گئی تھی ۔ اس کے بعد سے ہندوستان کووڈ-19 کی تین لہروں کا سامنا کرچکا ہے ۔ اس دوران میوٹیشن کی وجہ سے وائرس کے کئی ویریئنٹس سامنے آئے ، جن میں سے کچھ انتہائی مہلک ثابت ہوئے ۔

      سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ہندوستان میں اب تک کورونا وائرس کے 4,10,92,522 کیسز کی تصدیق ہو چکی ہے، جب کہ اس وبا کی وجہ سے 4,94,091 افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں ۔ ہندوستانی سارس ۔ سی او وی ۔ 2 جینومکس کنسورٹیا کے مطابق ہندوستان میں گزشتہ دو سالوں کے دوران کورونا وائرس کے سات ویریئنٹس ایسے ملے ہیں ، جو تشویشناک ہیں ۔ ان میں الفا، بیٹا، گاما، ڈیلٹا، بی .1.617.1 اور بی.1.617.3 کے علاوہ اے وائی سیریز اور اومیکران ویریئنٹ شامل ہیں ۔

      ان میں سے کورونا وائرس کے ڈیلٹا اور اومیکران ویریئنٹس کو مہلک قرار دیا گیا ہے۔ وبا کی دوسری لہر کے دوران بڑی تعداد میں لوگ کورونا کے ڈیلٹا ویریئنٹ سے متاثر ہوئے اور ہزاروں لوگ اس کی وجہ سے لقمہ اجل بن گئے۔ ملک میں کووڈ-19 کی موجودہ لہر کیلئے کورونا وائرس کے اومیکران ویریئنٹ کو ذمہ دار مانا جارہا ہے۔ ایک سینئر افسر نے بتایا کہ 2 جنوری تک 1.5 لاکھ نمونوں کی جینوم سیکوینسنگ کی گئی ہے ، جن میں سے 71,428 نمونوں میں تشویشناک ویریئنٹس کی تصدیق ہوئی ہے ۔

      وبا سے نمٹنے کیلئے ماہرین صحت نے کووڈ کے مناسب پروٹوکول پر عمل کرنے اور ویکسینیشن مہم کو تیز کرنے کا مشورہ دیا ہے، لیکن ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ ہندوستان میں یہ وبا کب ختم ہوگی ۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے جنوب مشرقی ایشیا کے ریجنل ڈائریکٹر ڈاکٹر پونم کھیترپال نے کہا کہ ہم ابھی بھی وبا کے بیچ میں ہیں۔ اس لئے وائرس کے انفیکشن کو پھیلنے سے روکنے اور لوگوں کی جان بچانے پر توجہ مرکوز ہونی چاہئے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: