ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کووڈ۔19 کی ہرطرف ہاہاکار! بڑے شہروں کو متاثر کرنے کے بعد اب ہندوستان کے دیہی علاقے بھی کورونا کی زد میں

مہاراشٹرا کے دیہی علاقوں میں وبائی بیماری نے مضبوط جڑ پکڑ لی ہے۔ مثال کے طور پر امراوتی ضلع کے دیہی علاقوں میں اب شہری علاقوں کے مقابلے میں زیادہ تعداد میں کیسوں کی اطلاع دی جارہی ہے۔

  • Share this:
کووڈ۔19 کی ہرطرف ہاہاکار! بڑے شہروں کو متاثر کرنے کے بعد اب ہندوستان کے دیہی علاقے بھی کورونا کی زد میں
مہاراشٹرا کے دیہی علاقوں میں وبائی بیماری نے مضبوط جڑ پکڑ لی ہے۔ مثال کے طور پر امراوتی ضلع کے دیہی علاقوں میں اب شہری علاقوں کے مقابلے میں زیادہ تعداد میں کیسوں کی اطلاع دی جارہی ہے۔

ہندوستان کے شہری علاقوں کو متاثر کرنے کے بعد کووڈ۔19 کی دوسری لہر اب دیہی علاقوں میں تیزی سے پھیل رہی ہے۔ انڈیا ٹوڈے نے مہاراشٹرا، اترپردیش، گجرات اور ہریانہ ریاستوں کے کچھ دیہی علاقوں کا سراغ لگایا تاکہ یہ معلوم کریں کہ زمینی حقیقت کیا ہے؟۔


مہاراشٹر:

مہاراشٹرا کے دیہی علاقوں میں وبائی بیماری نے مضبوط جڑ پکڑ لی ہے۔ مثال کے طور پر امراوتی ضلع کے دیہی علاقوں میں اب شہری علاقوں کے مقابلے میں زیادہ تعداد میں کیسوں کی اطلاع دی جارہی ہے۔ ضلعی کلکٹر شیلیش نوال کے مطابقامراوتی شہر میں منگل کو 249 نئے کووڈ۔19 مقدمات درج ہوئے جب کہ امراوتی کے دیہی علاقوں میں 947 تازہ کیسز درج ہوئے۔جنوری کے بعد سے امراوتی شہر میں 504 کووڈ۔19 سے متعلق اموات ریکارڈ کی گئیں جبکہ ضلع کے دیہی علاقوں میں 521 اموات ہوئیں۔


امراوتی میں کووڈ کے نئے ہاٹ اسپاٹ وراود میں اچل پور، مرشی، انجانگاون سرجی اور تیوسا شامل ہیں۔ ضلعی انتظامیہ ان جگہوں پر کووڈ کیئر یونٹ (Covid care units) قائم کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

اسی طرح ناگپور ضلع بھی دیہی علاقوں میں کووڈ کیسوں میں اضافے کا مشاہدہ کر رہا ہے۔ 5 مئی کو ناگپور شہر میں سرگرم 36648 اور ناگپور کے دیہی علاقوں میں 29568 سرگرم کیس ریکارڈ کیے گئے ہیں۔

محکمہ صحت کے عہدیداروں کے مطابق ناگپور اضطراب کی زد میں آنے والی 14 تحصیلوں میں 112 کووڈ ٹیسٹنگ مراکز ہیں۔ اس میں گرامین ہاسپٹل اور نجی لیب شامل ہیں۔

ناگپور کے دیہی علاقوں میں اس وقت مثبت کیسوں کی شرح 18.06 فیصد ہے۔ تاہم انتظامیہ کی جانب سے سخت اقدامات کیے جانے کے بعد اس شرح میں کمی ہونے لگی ہے۔

ہریانہ 
ہریانہ کے روہتک شہر سے بمشکل 10 کلومیٹر دور واقع ٹٹولی گاؤں خوف و ہراس کی کیفیت میں ہے، مبینہ طور پر دس دنوں میں کووڈ۔19 کی وجہ سے 40 افراد کی موت ہوگئی۔ سرپنچ سریش کمار نے اس خبر کو بریک کرنے کے بعد ضلعی انتظامیہ اور محکمہ صحت کے نمائندے گاؤں پہنچ گئے۔ جاں بحق ہونے والے افراد کے لواحقین سے اب اس وائرس کا ٹیسٹ لیا جارہا ہے۔

دیہاتیوں نے دعویٰ کیا ہے کہ سرپنچ نے اموات کی جو تعددا بتائی ہے۔ وو غلط ہے۔ جب کہ اموات اس سے بھی زیادہ ہورہی ہے۔

روہتک کے سب ڈویژنل مجسٹریٹ راکیش سینی نے کہا کہ ’’گاؤں میں اموات کے بعد لوگ خوفزدہ ہیں۔ ہم ان کو حوصلہ دے رہے ہیں کہ کووڈ کا امتحان لیا جائے۔ اس کے بعد یہ واضح ہوجائے گا کہ مرنے والے کووڈ تھا یا نہیں۔

اتر پردیش
کانپور کے بڑے صنعتی قصبے میں کووڈ 19 میں بڑے پیمانے پر اضافہ ہوا ہے۔ اس کے علاوہ 5 مئی کو شہر میں 24 گھنٹوں میں ریکارڈ 67 کووڈ اموات ریکارڈ کیں۔ تاہم دیہی علاقوں سے کوئی ریکارڈ نہیں ہے۔ کانپور رورل ایریا سے حکام نے اعداد و شمار تک رسائی سے انکار کیا۔

گجرات
گجرات حکومت نے 36 شہروں میں نائٹ کرفیو نافذ کردیا ہے۔ اگرچہ انتظامیہ شہروں میں ٹرانسمیشن کا سلسلہ توڑنے کی کوشش کر رہی ہے، لیکن دیہات میں صورتحال خوفناک ہے۔ گجرات کے دیہی علاقوں میں ڈاکٹروں اور طبی عملے کی شدید قلت ہے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 07, 2021 11:23 AM IST