உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Covid-19: نو ریاستوں میں کورونا کیسوں میں پھر سے اضافہ، مرکز نے ظاہر کی تشویش، کہا ٹسٹنگ میں ہو اضافہ

    بہت سی ریاستوں میں ناقص نگرانی، ناقص جانچ اور اوسط سے کم ویکسینیشن ہے۔

    بہت سی ریاستوں میں ناقص نگرانی، ناقص جانچ اور اوسط سے کم ویکسینیشن ہے۔

    انہوں نے کہا کہ کسی بھی قسم کی سستی کے نتیجے میں ان اضلاع میں حالات خراب ہوں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریاستوں کو 9 جون کو جاری کردہ نظر ثانی شدہ نگرانی کی حکمت عملی کے مطابق نگرانی کرنی چاہیے۔

    • Share this:
      مرکزی حکومت نے بدھ کے روز نو ریاستوں کے 115 اضلاع کی کووڈ۔19 کی صورتحال کا جائزہ لیا ہے، جہاں کورونا کیسوں میں اضافہ ریکارڈ کیا جارہا ہے۔ اس جائزے کے دوران جن ریاستوں میں کورونا کیسوں میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے، ان میں کیرالہ، مغربی بنگال، تامل ناڈو، مہاراشٹر، آسام، آندھرا پردیش، ہماچل پردیش، میزورم اور اروناچل پردیش شامل ہیں۔ ان ریاستوں کو مشورہ دیا گیا کہ وہ کووڈ کے مریضوں کی طبی علامات پر دھیان دیں اور قرنطینہ کیسوں کی سختی سے نگرانی کریں۔

      اس بات کی نشاندہی کی گئی کہ آندھرا پردیش، اروناچل پردیش، آسام، مغربی بنگال، مہاراشٹرا اور ہماچل پردیش میں فی ملین آبادی کے اوسط ٹیسٹ قومی اوسط سے کم ہیں۔ حکومت نے یہ بھی بتایا کہ میزورم، اروناچل پردیش اور آسام کی ریاستوں میں آر ٹی۔ پی سی آر (RT-PCR) ٹیسٹوں کا حصہ بہت کم ہے اور ہماچل پردیش، کیرالہ اور مغربی بنگال کی ریاستوں میں قومی اوسط سے کم ہے۔

      اس میں کہا گیا ہے کہ ہمیں یہ ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے کہ کووڈ ختم نہیں ہوا ہے۔ عالمی منظر نامے کو دیکھتے ہوئے ہمیں ہائی الرٹ رہنے کی ضرورت ہے۔ نیتی آیوگ کے ممبر (صحت) وی کے پال نے کہا کہ بہت سی ریاستوں میں ناقص نگرانی، ناقص جانچ اور اوسط سے کم ویکسینیشن ہے۔

      مزید پڑھیں: 

      اس کے پیش نظر پال نے ریاستوں پر زور دیا کہ وہ پازیٹیو کیس والے علاقوں میں جانچ کو بہتر بنائیں، حکمت عملی کے مطابق نگرانی میں اضافہ کریں اور کووڈ ویکسینیشن کو تیز کریں۔ مزید برآں مرکزی صحت کے سکریٹری راجیش بھوشن نے ہدایت دی کہ تمام اضلاع میں آر ٹی۔ پی سی آر ٹسٹنگ کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔

      مزید پڑھیں:


      انہوں نے کہا کہ کسی بھی قسم کی سستی کے نتیجے میں ان اضلاع میں حالات خراب ہوں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریاستوں کو 9 جون کو جاری کردہ نظر ثانی شدہ نگرانی کی حکمت عملی کے مطابق نگرانی کرنی چاہیے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: