ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

کورونا سے شرح اموات میں اضافہ، بھوپال کے قبرستان میں جگہ کی کمی، جے سی بی مشین سے کھودی جا رہی ہیں قبریں

کورونا سے ہونے والی اموات کو دیکھتے ہوئے قبرستان کمیٹی نے ایڈوانس میں نہ صرف قبروں کو کھودنے کا سلسلہ شروع کیا ہے بلکہ جے سی بی مشین سے قبریں کھودی جا رہی ہیں تاکہ یہاں آنے والی میت کی تدفین میں ہونے والی مشکلات سے لوگوں کو بچایا جا سکے۔

  • Share this:
کورونا سے شرح اموات میں اضافہ، بھوپال کے قبرستان میں جگہ کی کمی، جے سی بی مشین سے کھودی جا رہی ہیں قبریں
کورونا وائرس سے شرح اموات میں اضافہ، بھوپال کے قبرستان میں جگہ کی کمی

بھوپال۔ مدھیہ پردیش میں حکومت اور انتظامیہ کی تمام کوششوں کے باوجود کورونا مریضوں کی نہ صرف تعداد میں اضافہ جاری ہے بلکہ شرح اموات میں بھی اضافہ درج کیا جا رہا ہے۔ ان سب کے باوجود عوام ہیں کہ بیدار ہونے کا نام نہیں لے رہے ہیں۔ بھوپال میں یوں تو 23 قبرستان موجود ہیں جس میں سے جھدا قبرستان کو کورونا سے ہونے والی موت کی تدفین کے لئے ریزرو کیاگیا ہے۔


جھدا قبرسان 26 ایکڑ زمین پر پھیلا ہوا ہے۔ اس کے ایک دروازے سے عام بیماریوں سے ہونے والی موت کے بعد میت کو لاکر دفن کیا جاتا ہے جبکہ دوسرے دروازے کو صرف کورونا سے ہونے والی میت کو لانے اور دفن کرنے کے لئے استعمال کیاجاتا ہے۔جھدا قبرستان میں کورونا سے ہونے والی اموات کی تعداد میں اتنا اضافہ ہو گیا ہے کہ قبرستان میں جگہ کی کمی محسوس ہونے لگی ہے۔ یہی نہیں جو زمین بچی ہے وہ اتنی پتھریلی ہے کہ اس کی کھدائی کرنے پر صرف پتھر باہر نکلتے ہیں۔ ایسے میں قبرستان کے اندر تدفین کے لئے مٹی کی بھی بہت کمی ہوگئی ہے۔


کورونا سے ہونے والی اموات کو دیکھتے ہوئے قبرستان کمیٹی نے ایڈوانس میں نہ صرف قبروں کو کھودنے کا سلسلہ شروع کیا ہے بلکہ جے سی بی مشین سے قبریں کھودی جا رہی ہیں تاکہ یہاں آنے والی میت کی تدفین میں ہونے والی مشکلات سے لوگوں کو بچایا جا سکے۔


فائل فوٹو


جھدا قبرستان کمیٹی کے صدر ریحان گولڈن کہتے ہیں کہ لاک ڈاؤن کے زمانے میں ضلع انتظامیہ نے جھدا قبرستان کو کووڈ ۱۹ سے ہونے والی موت کی تدفین کے لئے ریزرو کیا تھا۔ پہلے بھی جس طرح سے کورونا سے موتیں ہوئی تھیں اس کو دیکھتے ہوئے ضلع انتظامیہ اور حکومت دونوں سے قبرستان کے لئے نئی جگہ دینے کی گزارش کی گئی تھی مگر حکومت اور ضلع انتظامیہ کی جانب سے اس سمت میں کوئی پہل نہیں کی گئی ہے۔ اب ہمارے پاس بمشکل 80 سے 90 قبروں کی جگہ بچی ہے۔ ایک ایک دن میں کووڈ۔19 سے ہونے والی کئی کئی موتوں کے سبب گورکن کم ہونے سے قبریں تیار کرنے میں مشکلات آرہی تھیں اس لئے جے سی بی مشین سے ایڈوانس میں قبروں کے کھودنے کا عمل جاری ہے۔

یہی نہیں یہاں پر قبرستان میں جو جگہ بچی ہوئی ہے اس میں پتھر کی بڑی بڑی چٹانیں موجود ہیں۔ انہیں کھودنے کے بعد نیچے سے پتھر نکلتے ہیں۔ جبکہ قبر میں مردے کو دفن کے لئے مٹی کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہمیں جگہ کے ساتھ مٹی کی بھی سخت ضرورت ہے۔ اگر حکومت اور انتظامیہ نے اس جانب توجہ نہیں دی تو آنے والے دنوں میں مشکلات میں اور اضافہ ہو گا۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 27, 2020 10:35 AM IST