ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

مہاراشٹر میں 31 مئی تک Lockdown بڑھنا طے،  18+ کے ویکسینیشن پر لگا بریک

مہاراشٹرا (Maharashtra) جو کورونا وبا سے سب سے زیادہ متاثر نظر آرہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مہاراشٹر میں کورونا انفیکشن کے بڑھتے ہوئے معاملات کے پیش نظر لاک ڈاؤن (Lockdown) کو بڑھانا طے مانا جا رہا ہے۔

  • Share this:
مہاراشٹر میں 31 مئی تک Lockdown بڑھنا طے،  18+ کے ویکسینیشن پر لگا بریک
ورونا وائرس کی دوسری لہر سے ملک بری طرح متاثر ہوا ہے۔

ممبئی۔ کورونا وائرس کی دوسری لہر سے ملک بری طرح متاثر ہوا ہے۔ صورتحال یہ ہے کہ ہر روز کورونا انفیکشن (Corona Infection) کے کیسز 4 لاکھ کے قریب پہنچ رہے ہیں۔ مہاراشٹرا (Maharashtra) جو کورونا وبا سے سب سے زیادہ متاثر نظر آرہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مہاراشٹر میں کورونا انفیکشن کے بڑھتے ہوئے معاملات کے پیش نظر لاک ڈاؤن (Lockdown) کو بڑھانا طے مانا جا رہا ہے۔


بتایا جاتا ہے کہ بدھ کو کابینہ کے اجلاس میں وزارت صحت اور وزراء نے اگلے 15 دن (31 مئی) کے لئے لاک ڈاؤن میں توسیع کی تجویز پیش کی ہے۔ کابینہ کی میٹنگ کے بعد وزیر صحت راجیش ٹوپے نے کہا کہ ریاست میں صورتحال کی نوعیت کو دیکھنے کے بعد 15 دن کے لاک ڈاون میں توسیع کی جائے گی یا نہیں ، اس کا حتمی فیصلہ وزیر اعلی ادھاو ٹھاکرے کریں گے۔



بی ایم سی نے بدھ کو جانکاری دی ہے کہ ممبئی میں بلیک فنگس سے متاثر تقریبا 111 مریضوں کا علاج مختلف اسپتالوں میں چل رہا ہے ۔ یہ سبھی مریض کورونا سے شفایاب ہوچکے ہیں ۔ دراصل یہ جانکاری بی ایم سی کے لیڈر پربھاکر شندے کی مانگ پر دستیاب کرائی گئی ہے ۔ بی ایم سی کی اسٹینڈنگ کمیٹی کے سامنے ایڈیشنل میونسپل کمشنر سریش کاکانی نے کہا ہے کہ بلیک فنگس کے 38 مریضوں کا علاج بی وائی نائر اسپتال میں ، 34 کا کے ای ایم اسپتال ، 32 کا سیان اسپتال اور سات کا کوپر اسپتال میں ہورہا ہے ۔ ان میں زیادہ تر مریض ممبئی سے باہر کے رہنے والے ہیں ۔

بلیک فنگس کے خلاف لڑائی کو لے کر بی ایم سی نے میڈیکل ایکسپرٹس کا ایک پینل تیار کیا ہے ۔ اب یہی پینل طے کرے گا کہ سبھی اسپتالوں میں مریضوں کے علاج کیسے کیا جائے گا ۔ بی ایم سی کی سینٹرل پرچیز اتھاریٹی اینٹی فنگل دوا ایفوٹیرسن بی کی خرید کررہی ہے ، جس کا بلیک فنگس کے علاج میں استعمال کیا جائے گا ۔

کاکانی کا کہنا ہے کہ بلیک فنگس کی بیماری متعدی نہیں ہے ۔ کووڈ اسپتالوں میں ڈاکٹر اس بیماری کے علاج کیلئے اہل ہیں ۔ اگر اس بیماری کو جلد پکڑ لیا جائے تو پوری طرح سے علاج ممکن ہے ۔ غور طلب ہے کہ بدھ کو تھانے کے ایک ہیلتھ افسر نے کہا تھا کہ دو مریضوں کی بلیک فنگس کی وجہ سے موت ہوگئی ہے اور چھ دیگر کا علاج جاری ہے ۔ ڈاکٹروں کے مطابق بلیک فنگس انفیکشن کے زیادہ تر معاملات انہیں کورونا مریضوں میں سامنے آرہے ہیں ، جن میں ڈائبٹیز کی پریشانی پہلے سے موجود ہے ۔

بلیک فنگس کا میوکورمائیکوسس ایک پھپھوند میوکور سے پھیلتا ہے ، جو گیلی سطحوں پر پایا جاتا ہے ۔ یہ سب سے زیادہ آنکھ کو متاثر کرتا ہے ۔ لیکن اس کے ساتھ ہی وہ ناک اور دماغ کو بھی متاثر کرتا ہے ۔ دماغ کے متاثر ہونے پر اس کا علاج بہت مشکل ہوجاتا ہے ۔ یہ بہت کم ہونے والا انفیکشن ہے ، لیکن ایک جان لیوان انفیکشن ہے ۔
Published by: Sana Naeem
First published: May 13, 2021 09:13 AM IST