ہوم » نیوز » عالمی منظر

وزیر اعظم عمران خان کی موجودگی میں بولے مولانا۔ خواتین کے چھوٹے کپڑے پہننے کی سزا ہے کورونا

مولانا طارق جمیل نے ہفتہ کے روز احساس ٹیلی تھون فنڈ ریزنگ ایونٹ کی اپنی تقریر میں کہا کہ عورتوں کے چھوٹے کپڑے پہننے کی وجہ سے ملک پر کورونا وائرس جیسا خطرہ آیا ہے۔

  • Share this:
وزیر اعظم عمران خان کی موجودگی میں بولے مولانا۔ خواتین کے چھوٹے کپڑے پہننے کی سزا ہے کورونا
عمران خان کی موجودگی میں بولے مولانا۔ خواتین کے چھوٹے کپڑے پہننے کی سزا ہے کورونا

اسلام آباد۔ پاکستان میں کورونا انفیکشن (Coronavirus)کے معاملے بڑھنے کے باوجود علما کی ضد پر مسجدیں کھول دی گئی ہیں۔ حالانکہ، معاملہ صرف اسی پر نہیں رکا، بلکہ ایک مولانا نے خواتین کو کورونا انفیکشن پھیلنے کے لئے قصوروار بتا دیا۔ پاکستان کے مشہور مولانا طارق جمیل (Maulana Tariq Jameel) نے دعویٰ کیا ہے کہ عورتوں کے غلط کاموں کی سزا دنیا بھگت رہی ہے اور کورونا وائرس اسی کا نتیجہ ہے۔ چونکانے والی بات یہ ہے کہ اس دوران پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان  (Imran khan)  بھی موجود تھے۔


مولانا طارق جمیل نے ہفتہ کے روز احساس ٹیلی تھون فنڈ ریزنگ ایونٹ کی اپنی تقریر میں کہا کہ عورتوں کے چھوٹے کپڑے پہننے کی وجہ سے ملک پر کورونا وائرس جیسا خطرہ آیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ عورتوں کے برے کاموں کی سزا ہے جو پوری قوم کو بھگتنی پڑ رہی ہے۔ بتا دیں جب طارق جمیل یہ بول رہے تھے تو اس دوران عمران خان بھی اسی پروگرام میں لائیو موجود تھے۔




طارق جمیل نے اس پروگرام میں یہ بھی کہا کہ وہ کھل کر یہ بات کہتے آئے ہیں کہ عورتوں کے چھوٹے کپڑے پہننے کی سزا سب کو مل رہی ہے اور کورونا وائرس بھی ان میں سے ایک ہے۔ جمیل نے آگے کہا کہ کچھ ٹی وی چینلوں نے جھوٹی خبر چلائی کہ میں اپنے کہے پر معافی مانگ چکا ہوں۔ میں جو کہتا ہوں اس پر قائم ہوں۔ میں معافی نہیں مانگتا۔ اگر میرے منھ سے معافی جیسا کچھ بھی نکلا تو وہ صرف جلدبازی میں کی گئی غلطی رہی ہو گی۔

مولانا جمیل کے اس بیان کی ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان نے مذمت کی ہے اور ان سے معافی مانگنے کے لئے کہا ہے۔ حقوق انسانی کمیشن نے ایک بیان جاری کر کے کہا کہ ہم مولانا طارق جمیل سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ خواتین کے خلاف کئے گئے اس ناشائستہ تبصرے کو جلد از جلد واپس لے لیں۔
First published: Apr 27, 2020 11:33 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading