ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

کوروناوائرس سے ہوئی موت تو رشتےداروں نے ہی لاش سے بنا لی دوری ، 12 گھنٹے ایمبولینس میں پڑی رہی لاش

کورونا انفیکشن کے خطرے نے سماجی اور جسمانی دوری بنائے رکھنے کی بیداری تو پیدا کی ہے لیکن کورونا انفیکشن سے ہوئی اموات کو لیکر اب خوف کا عالم یہ ہے کہ لوگ اپنے رشتےداروں کی میت سے بھی دوری بنا رہے ہیں تازہ معاملہ میرٹھ کا ہے جہاں گزشتہ روز کورونا انفیکشن سے متاثر مریض بھگوت شرما نام کے ایک ادھیڑ کی میڈیکل میں موت ہو گئی تھی۔

  • Share this:
کوروناوائرس سے ہوئی موت تو رشتےداروں نے ہی لاش سے بنا لی دوری ، 12 گھنٹے ایمبولینس میں پڑی رہی لاش
کورونا انفیکشن کے خطرے نے سماجی اور جسمانی دوری بنائے رکھنے کی بیداری تو پیدا کی ہے لیکن کورونا انفیکشن سے ہوئی اموات کو لیکر اب خوف کا عالم یہ ہے کہ لوگ اپنے رشتےداروں کی میت سے بھی دوری بنا رہے ہیں تازہ معاملہ میرٹھ کا ہے جہاں گزشتہ روز کورونا انفیکشن سے متاثر مریض بھگوت شرما نام کے ایک ادھیڑ کی میڈیکل میں موت ہو گئی تھی۔

کورونا انفیکشن کے خطرے نے  سماجی اور جسمانی دوری بنائے رکھنے کی بیداری تو پیدا کی ہے لیکن کورونا انفیکشن سے ہوئی اموات کو لیکر اب خوف کا عالم یہ ہے کہ لوگ اپنے رشتےداروں کی میت سے بھی دوری بنا رہے ہیں تازہ معاملہ میرٹھ کا ہے جہاں گزشتہ روز کورونا انفیکشن سے متاثر مریض بھگوت شرما نام کے ایک ادھیڑ کی میڈیکل میں موت ہو گئی تھی۔ محکمہ صحت کے زمہ داران کا کہنا ہے کہ کورونا سے موت کے معاملے میں ڈبلیو ایچ او کی گائیڈ لائن پر عمل کرتے ہوئے تمام احتیاط کے ساتھ لاش کو ان کے رشتےداروں کے سپرد کر دیا گیا تھا لیکن ایمبولینس کے ذریعہ میت کو آخری رسومات کے لیے سورج کنڈ شمشان گھاٹ لیے جانے کے بعد رشتےداروں منوج نام کا شخص لاش کو ایمبولینس میں ہی چھوڑ کر غائب ہو گیا اور رات نو بجے سے لیکر صبح تک میت ایمبولینس میں ہی پڑی رہی

سی ایم او ڈاکٹر راج کمار کا کہنا ہے کہ اس معاملے کی محکمہ صحت کو جانکاری ہونے کے بعد رشتےداروں سے رابطہ کیا گیا اور شمشان گھاٹ میں انتم سنسکار کروایا گیا اس دوران بھی رشتےداروں لاش سے دور ہی کھڑا رہا اور سبھی رسومات محکمہ صحت کے میڈیکل اسٹاف اور شمشان کے زمہ داران نے ہی ادا کرائی۔

اس سے قبل مرنے والے کے رشتےدار منوج نے محکمہ صحت اور میڈیکل کالج اسٹاف پر ہی لاش کی بے حرمتی کرنے کہ الزام لگایا تھا اور ، منوج کا کہنا تھا کہ 24 گھنٹے مورچری میں لاش پڑی رہنے کے بعد آخری رسومات کے لئے کے جانے کی اجازت دی گئی اور اسکے بعد شمشان میں بھی کسی طرح کا انتظام نہیں کیا گیا اور کوئی توجہ نہیں دی گئی ، منوج کا کہنا ہے کہ اس معاملے کی شکایت اُسنے ہی کی تھی جسکے بعد محکمہ صحت حرکت میں آیا لیکن سی ایم او نے اس الزام کی تردید کی ہے۔

First published: May 13, 2020 01:50 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading