ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

Fact Check: کیا چائے پینے سے نہیں ہوتا ہے کورونا ؟ جانئے کیا ہے سچائی

PIB Fact Check: سوشل میڈیا پر ان دنوں ایک خبر پھیلائی جارہی ہے کہ زیادہ سے زیادہ چائے پینے سے کورونا سے بچا جاسکتا ہے ۔ آخر کیا ہے اس کی سائی ، آئیے یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں ۔

  • Share this:
Fact Check: کیا چائے پینے سے نہیں ہوتا ہے کورونا ؟ جانئے کیا ہے سچائی
Fact Check: کیا چائے پینے سے نہیں ہوتا ہے کورونا ؟ جانئے کیا ہے سچائی

نئی دہلی : کورونا وائرس سے ان دنوں ہندوستان میں ہر طرف تباہی مچی ہوئی ہے ۔ ہر روز چار ہزار سے زیادہ لوگوں کی جان جارہی ہے ۔ اس وائرس سے بچنے کی تدبیر ویکسین ، ماسک اور سماجی فاصلہ ہے ۔ تاہم سوشل میڈیا پر اس جان لیوا وائرس سے بچنے کیلئے لوگ طرح طرح کے نئے نسخے آزما رہے ہیں ، جس کی وجہ سے لوگ فرضی خبر میں بھی پھنس جاتے ہیں ۔ اسی کڑی میں ان دنوں ایک خبر پھیلائی جارہی ہے کہ زیادہ سے زیادہ چائے پینے سے کورونا سے بچا جاسکتا ہے ۔ آخر کیا ہے اس کی سچائی آئیے یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں ۔


سوشل میڈیا پر ایک اخبار کی کلپ شیئر کی جارہی ہے ۔ اس کی ہیڈلائن میں لکھا ہے : خوب چائے پیئیں اور پلائیں ، چائے پینے والوں کیلئے ایک خوشخبری ۔ اس خبر میں دعوی کیا گیا ہے کہ چائے پینے سے کورونا وائرس کے انفیکشن کو روکا جاسکتا ہے اور اس سے متاثر شخص جلد شفایاب بھی ہوسکتا ہے ۔


کیا ہے دعوی ؟


کچھ لوگ سوشل میڈیا پر یہ بھی دعوی کررہے ہیں کہ چین کے اسپتالوں نے کورونا کے شکار اپنے مریضوں کو دن میں تین مرتبہ چائے دینا شروع کردیا اور اس کا انہیں فائدہ بھی ہوا ۔ میسیج میں امریکہ کے سی این این نیوز چینل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ چین کے کورونا وائرس ماہرین اپنی موت سے پہلے یہ بتا کر گئے کہ Methylxanthine, Theobromine اور Theophylline کیمیکل کورونا وائرس کو مار سکتے ہیں ۔ یہ تینوں کیمیکل چائے میں پائے جاتے ہیں ۔



فرضی ہے خبر

سرکار نے اپنے ٹویٹر ہینڈل پر اس خبر کو فرضی بتایا ہے ۔ PIBFactCheck کے مطابق یہ دعوی فرضی ہے ۔ اس کی کوئی سائنسی تصدیق نہیں ہے ۔ یعنی آگے سے آپ کو سوشل میڈیا پر ایسی خبر نظر آتی ہے تو پھر آپ اس کو فارورڈ نہ کریں ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: May 09, 2021 05:25 PM IST