ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بیڈ اور دوا سے لیکر آکسیجن تک، اس ہیلپ لائن نمبر پر کریں کال، ہر مدد کا امکان یہاں

نوئیڈا میں بھی کووڈ کا قہر بڑھتا جا رہا ہے۔ ایسی صورتحال میں کئی لوگ مریضوں کیلئے اسپتالوں میں بیڈ، دوا کی سہولیات اور آکسیجن کو لیکر پریشان ہیں۔ مریضوں کے من یں کئی طرح کے سوال آتے ہیں، کئی باتوں کو لیکر شک رہتا ہے لیکن جواب دینے والا کوئی نہیں نظر آتا۔ اس کیلئے نوئیڈا میں ایک ہیلپ لائن نمبر شروع کیا گیا ہے جہاں ہر سوال کا جواب دیا جاتا ہے۔

  • Share this:
بیڈ اور دوا سے لیکر آکسیجن تک، اس ہیلپ لائن نمبر پر کریں کال، ہر مدد کا امکان یہاں
وئیڈا میں ایک ہیلپ لائن نمبر شروع کیا گیا ہے جہاں ہر سوال کا جواب دیا جاتا ہے۔

کورونا کے معاملے پورے ملک میں بڑھتے جارہے ہیں۔ اسی کے پیش نظر وزیراعلی اروند کیجریوال (Arvind Kejriwal ) نے راجدھانی دہلی میں کورونا کا قہر بدستور جاری رہنے کے درمیان لاک ڈاؤن کو ایک اور ہفتے کے لئے بڑھا دیا گیا۔ وہیں نوئیڈا میں بھی کووڈ کا قہر بڑھتا جا رہا ہے۔ ایسی صورتحال میں کئی لوگ مریضوں کیلئے اسپتالوں میں بیڈ، دوا کی سہولیات اور آکسیجن کو لیکر پریشان ہیں۔ مریضوں کے من یں کئی طرح کے سوال آتے ہیں، کئی باتوں کو لیکر شک رہتا ہے لیکن جواب دینے والا کوئی نہیں نظر آتا۔ اس کیلئے نوئیڈا میں ایک ہیلپ لائن نمبر شروع کیا گیا ہے جہاں ہر سوال کا جواب دیا جاتا ہے۔


بتادیں کہ ملک بھر میں کورونا وبا کی شکل اختیار کر چکا ہے، ریاستوں کا حال برا ہے، یوپی میں بھی حالات بے قابو ہیں۔ راجدھانی دہلی سے متصل گوتم بدھ نگر کا بھی برا حال ہے۔ لوگوں کو نہیں پتہ کہ کہاں جانچ کرانی ہے؟ مریضوں کو اسپتال میں بیڈ نہیں مل رہے ہیں لوگوں کو مدد نہیں پہنچ پا رہی ہے۔ کئی لوگوں کو صحیح جانکاری نہیں ہے کہ کن نمبر کال کرکے مدد حاصل کریں۔


اب مریضوں کی سہولیت کیلئے نوئیڈا میں ایک انٹی گریٹیڈ کنٹرول روم شروع کیا گیا ہے جہاں سبھی سوالوں کا فورا جواب دیا جا رہا ہے۔ کنٹرول روم کے شروع ہوتے ہی روزانہ یزاروں کی تعداد میں کال آتی نظر آرہی ہیں اور لوگوں کی پریشانی کا حل بھی ہو رہا ہے۔ یہ کنٹرول روم کا ہیلپ لائن نمبر 1800 419 2211 ہے۔


دہلی میں کورونا وبا کا قہر بڑتھا ہی جا رہا ہے ایسے میں دہلی کے وزیراعلی اروند کیجریوال (Arvind Kejriwal ) نے بتایا کہ یہ پابندیاں 3 مئی 2021 پیر کی صبح 5 بجے تک جاری رہیں گی۔دہلی کے وزیر اعلی نے کہا کہ لاک ڈاؤن ہمیشہ ہی آخری آپشن ہوتا ہے اور موجودہ صورتحال لاک ڈاؤن میں توسیع کا مطالبہ کرتی ہے۔کیجریوال نے کہا کہ پچھلے کچھ دنوں میں مثبت شرح میں معمولی کمی کی وجہ سے امید کی کرن ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت آنے والے وقت کے صورتحال کو دیکھتے ہوئے فیصلہ لیاجائیگا۔


کیجریوال نے کہا کہ دہلی کو آکسیجن کے بحران پر بھی کا سامناہے اور کہا کہ انہوں نے ایک ایسا پورٹل شروع کیا ہے جو آکسیجن کی تیاری کے بہتر انتظام کے لئے آکسیجن مینوفیکچررز، سپلائی کرنے والوں اور اسپتالوں کے درمیان تال میل کا کام کریگا۔یہ ویب سائٹ  ہر دو گھنٹے میں اپ ڈیٹ کیا جائے گا۔ اس کے لیے مرکزی اور ریاستی ٹیمیں مل کر کام کر رہی ہیں۔کیجریوال نے یہ بھی اعتراف کیا کہ دہلی حکومت کی طرف سے غلطیاں ہوئیں اور آکسیجن وقت پر اسپتالوں تک نہیں پہنچ پایا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ دہلی آکسیجن کی مطلوبہ مقدار وصول نہیں کررہا ہے اور اس نے دوسری ریاستوں سے مدد لی ہے۔


گھریلو تاجروں کی تنظیم کنفیڈریشن آف آل انڈیا ٹریڈرز (سی اے آئی ٹی) نے بھی دہلی حکومت سے اپیل کی تھی کہ وہ وبائی بیماری کو قابو میں کرنے کے لئے لاک ڈوان کو مزید 26 اپریل تک بڑھا دے۔ وزیراعلیٰ کیجریوال کو لکھے گئے خط میں CAIT نے کہا کہ موجودہ اعدادوشمار کو دیکھتے ہوئے دہلی میں صورتحال کافی تشویشناک ہے۔کنفیڈریشن نے ایک بیان میں کہا کہ ’کنفیڈریشن نے دہلی میں تالاب ڈاون میں توسیع کے لئے 26 اپریل سے اپیل کی ہے اور جب صورتحال بہتر ہوجائے گی تو لاک ڈاؤن کو ختم کیا جاسکتا ہے‘‘۔
Published by: Sana Naeem
First published: Apr 25, 2021 05:29 PM IST