உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا کے 15,815 نئے کیسز درج، ایکٹو کیسز میں آئی کمی

    Youtube Video

    Coronavirus in India: مرکزی وزارت صحت کے ذریعہ شیئر کیے گئے اعداد و شمار کے مطابق، صحت یابی کی شرح 98.53 فیصد ہے۔ ملک میں کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں کی کل تعداد 4,35,93,112 تک پہنچ گئی ہے۔

    • Share this:
      گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ہندوستان میں کورونا وائرس کے انفیکشن کے 15,815 نئے کیسز درج کیے گئے ہیں۔ اس دوران 68 اموات ہوئیں اور 20,018 لوگ انفیکشن سے پاک ہو گئے۔ اب ملک میں کورونا وائرس کے ایکٹو مریضوں کی تعداد 1,19,264 تک پہنچ گئی ہے۔ یومیہ پازیٹو ریٹ  4.36 فیصد ہے۔ ہفتہ 13 اگست کو مرکزی وزارت صحت کے ذریعہ شیئر کیے گئے اعداد و شمار کے مطابق، صحت یابی کی شرح 98.53 فیصد ہے۔ ملک میں کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں کی کل تعداد 4,35,93,112 تک پہنچ گئی ہے۔

      کل تک ملک میں کورونا وائرس کے ایکٹو کیسز کی تعداد 1,23,535 تھی جس میں آج 4271 پوائنٹس کی کمی واقع ہوئی ہے۔ مرکزی وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق، کورونا وائرس کے فعال کیس کل انفیکشن کا 0.28 فیصد ہیں۔ مرکزی وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق، کورونا وائرس کے فعال کیس کل انفیکشن کا 0.28 فیصد ہیں۔ ملک میں اب تک 5,26,996 لوگ اس انفیکشن کی وجہ سے اپنی جان گنوا چکے ہیں۔

      ہندوستان میں کورونا وبا کی وجہ سے پہلی موت مارچ 2020 میں ہوئی تھی۔ ہندوستان میں کورونا ویکسین کی تعداد 2,07,71,62,098 تک پہنچ گئی ہے۔ ساتھ ہی، گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا ویکسین کی 24,43,064 خوراکیں لگائی گئی ہیں۔

      گزشتہ 24 گھنٹے میں Coronavirus کے16299 نئے کیس، 53 کی موت، دہلی اور مہاراشٹر نے بڑھائی فکر


      Monkeypox کو لیکر ایکشن میں حکومت، نگرانی کیلئے بنایا ٹاسک فورس


      اس سے قبل جمعہ کو دارالحکومت دہلی میں 2,136 نئے کوویڈ 19 کیس درج ہوئے تھے اور 10 اموات ہوئیں۔ محکمہ صحت کی طرف سے فراہم کردہ اعداد و شمار کے مطابق، ان نئے معاملات کے ساتھ، دہلی میں ایکٹو کیسز بڑھ کر 8,343 ہو گئے ہیں۔ یہ لگاتار دسواں دن ہے جب شہر میں ایک دن میں 2000 سے زیادہ کورونا وائرس کے انفیکشن پائے گئے ہیں۔ قومی دارالحکومت میں کورونا وائرس کے انفیکشن کی مثبت شرح 15.02 فیصد ریکارڈ کی گئی ہے۔ اس سے قبل جمعرات کو شہر میں 2,726 نئے کیسز اور 6 اموات رپورٹ ہوئیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: