உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کووڈ ۔19: سیکس ورکرز کی خراب صورت حال پر خواتین کمیشن نے لیا نوٹس، دہلی پولیس سے مانگا جواب

    دہلی خواتین کمیشن کی چیر پرسن سواتی مالیوال کی فائل فوٹو

    دہلی خواتین کمیشن کی چیر پرسن سواتی مالیوال کی فائل فوٹو

    دہلی خواتین کمیشن کی چیر پرسن سواتی مالیوال نے کہا ”جی بی روڈ میں رہنے والی عورتیں بہت خراب حالت میں رہنے پر مجبور ہیں۔ کورونا وبا اس وقت خوفناک شکل اختیار چکی ہے اور ہمیں فکر ہے کہ جی بی روڈ میں کام کرنے والی خواتین کس پوزیشن میں رہ رہی ہیں۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی۔ دہلی خواتین کمیشن نے جی بی روڈ میں رہنے والی عورتوں کو لاک ڈاؤن کی وجہ سے بہت سی مشکلات کا سامنا کرنے کی میڈیا رپورٹس کے بعد دہلی پولیس کو نوٹس جاری کر کے خواتین کی صورت حال کی معلومات طلب کی ہے۔ دہلی خواتین کمیشن کی چیر پرسن سواتی مالیوال نے کہا ”جی بی روڈ میں رہنے والی عورتیں بہت خراب حالت میں رہنے پر مجبور ہیں۔ ہم کئی سال سے کوشش کر رہے ہیں کہ اس ریکیٹ کو بند کروایا جائے۔ کورونا وبا اس وقت خوفناک شکل اختیار چکی ہے اور ہمیں فکر ہے کہ جی بی روڈ میں کام کرنے والی خواتین کس پوزیشن میں رہ رہی ہیں۔ ضروری ہے کہ ان سب کو ضرورت کا سامان مل پائے اور ساتھ ہی ساتھ سوشل ڈسٹینسنگ پر بھی عمل ہو۔ ہم نے پولیس کو نوٹس جاری کیا ہے اور ان سے پوچھا ہے کہ اس صورت حال میں وہ کیا کیا قدم اٹھا رہی ہے جس سے ان خواتین اور بچوں کو مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے“۔


      میڈیا رپورٹس سے کمیشن کو اطلاع ملی تھی کہ جی بی روڈ میں رہ رہی عورتوں کو لاک ڈاؤن کی وجہ سے مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ جی بی روڈ میں کام کرنے والی خواتین خوفناک پوزیشن میں چھوٹے چھوٹے کمروں میں رہنے پر مجبور ہیں جو اس عالمی وبا کے دور میں ان کے لئے بہت خطرناک ہے۔ دہلی خواتین کمیشن طویل عرصے سے جی بی روڈ میں رہ رہی عورتوں کی خراب صورت حال کو لے کر آواز اٹھاتا رہا ہے اور اب تک بہت سی خواتین کو اس ریکیٹ سے رہا بھی کرا چکا ہے۔ جی بی روڈ میں قریب 2000 خواتین اور بچے رہتے ہیں۔

      لاک ڈاؤن کی صورت حال میں سوشل ڈسٹینسنگ پر عمل اور ان خواتین کو کھانے اور پرسنل ہائجین سے منسلک اشیاء کے انتظام کو لے کر بھی اس نوٹس میں پولیس انتظامیہ سے سوال کئے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ نوٹس میں پوچھا گیا ہے کہ پولیس کی طرف سے لاک ڈاؤن کی پوزیشن میں ان خواتین کو مناسب طریقے سے کھانا مل پا رہا ہے۔ ساتھ میں یہ بھی پوچھا گیا ہے کہ کیا پولیس کی طرف سے یہ یقینی بنانے کی سمت میں کوئی قدم اٹھائے گئے ہیں کہ جی بی روڈ میں سوشل ڈسٹینسنگ پر عمل کیا جا رہا ہے۔
      Published by:Nadeem Ahmad
      First published: