ورلڈ کپ 2019 میں اس ملک کے کھلاڑیوں کو نہیں مل رہی معیاری سہولیات ، آئی سی سی سے کیا شکوہ

سری لنکا نے پچوں کے معیار اور ٹریننگ سہولتوں پر سوال اٹھاتے ہوئے بین الاقوامی کرکٹ کونسل (آئی سی سی) سے شکایت کی ہے۔

Jun 14, 2019 07:26 PM IST | Updated on: Jun 14, 2019 09:21 PM IST
ورلڈ کپ 2019 میں اس ملک کے کھلاڑیوں کو نہیں مل رہی معیاری سہولیات ، آئی سی سی سے کیا شکوہ

سری لنکا کی ٹیم ۔ فوٹو : سری لنکا کرکٹ ٹویٹر ۔

سری لنکا نے پچوں کے معیار اور ٹریننگ سہولتوں پر سوال اٹھاتے ہوئے بین الاقوامی کرکٹ کونسل (آئی سی سی) سے شکایت کی ہے۔ سری لنکا کے ٹیم منیجر اسانتھا ڈی میل نے آئی سی سی کو خط لکھ کر کہا ہے کہ ان کی ٹیم کے میچوں کے لئے پچ اچھی نہیں دی جا رہی ہیں اور ساتھ ہی ٹریننگ سہولیتیں اور رہائش بھی معیاری نہیں ہیں ۔ سری لنکا کے حالیہ دو مقابلے برسٹل میں بارش کی نذر ہو گئے تھے جبکہ کارڈف میں دو میچوں میں اسے ہریالی پچ ملی تھیں۔ سری لنکا کو کارڈف میں نیوزی لینڈ کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا اور افغانستان کو شکست دینے میں بھی اسے مشکلات کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

چار میچوں میں چار پوائنٹس لے چکی سری لنکا کی ٹیم کو ہفتہ کو آسٹریلیا سے اوول میں مقابلہ ہونا ہے جہاں بڑے اسکور والے میچ رہے ہیں لیکن سری لنکا کو یہ دیکھ کر افسوس ہو رہا ہے کہ اسے ایک اور گرین پچ دی جا رہی ہے جہاں حالات آسٹریلیا کے مواقف ہوں گی۔ ڈی میل نے کہاکہ ہمیں پتہ چلا ہے کہ ہمارے چار میچوں میں کارڈف اور برسٹل میں آئی سی سی نے گرین ٹاپ تیار کئے ہیں جبکہ انہی سائٹس پر جب دوسری ٹیموں نے میچ کھیلے ہیں تو انہیں اسپاٹ وکٹ ملے ہیں جس پر بڑے اسکور بنے ہیں۔اوول میں آسٹریلیا کے خلاف دی جا رہی پچ بھی گرین ٹاپ ہے۔

انہوں نے آئی سی سی پر ہی سوال اٹھاتے ہوئے کہاکہ یہ غیر مناسب ہے کہ آئی سی سی کچھ ٹیموں کے لئے مختلف پچ تیار کر رہی ہے اور کچھ ٹیموں کے لئے دوسری پچ۔ ہم سرکاری طور پر آئی سی سی کے سامنے یہ معاملہ لا رہے ہیں۔ ڈی میل نے ان کی ٹیم کو دی جا رہی سہولتوں پر بھی سوال اٹھایا ہے۔ ڈی میل نے کہاکہ کارڈف میں مشق سہولت تسلی بخش نہیں تھی۔ تین نیٹ کے بجائے ہمیں دو نیٹ ہی دیے گئے۔ برسٹل میں ہمیں جس ہوٹل میں ٹھہرایا گیا اس میں سوئمنگ پول ہی نہیں تھا جبکہ یہ ہر ٹیم کے لئے پہلی ضرورت ہے۔ خاص طور پر تیز گیند بازوں کو اپنے پٹھوں کو آرام دینے کے لئے سوئمنگ پول سے مدد ملتی ہے۔ پاکستان اور بنگلہ دیش کے لیے برسٹل میں جن ہوٹلوں میں ٹھہرایا گیا تھا ان میں سوئمنگ پول تھے۔

سری لنکا منیجر نے ناراضگی کے ساتھ کہاکہ ہم نے ان خامیوں کو اٹھاتے ہوئے آئی سی سی کو چار دن پہلے خط لکھا تھا لیکن اب تک ان کا کوئی جواب نہیں آیا ہے۔ ہم آئی سی سی کو خط لکھنا اس وقت تک جاری رکھیں گے جب تک جواب نہیں آ جاتا۔

Loading...

Loading...