ایک سال میں پوری ہوئی وراٹ کوہلی کی مراد، یہ تحفہ پا کر چہرے پر دوڑ گئی خوشی

ایک سال بعد ایسا لگتا ہے کہ وراٹ کوہلی کی مراد پوری ہو گئی ہے۔

Oct 09, 2019 11:04 AM IST | Updated on: Oct 09, 2019 11:07 AM IST
ایک سال میں پوری ہوئی وراٹ کوہلی کی مراد، یہ تحفہ پا کر چہرے پر دوڑ گئی خوشی

وراٹ کوہلی۔ انوشکا شرما

نئی دہلی۔ جنوبی افریقہ کے خلاف تین میچوں کی سیریز کا پہلا ٹیسٹ جیتنے کے بعد ہندوستانی کپتان وراٹ کوہلی کے چہرے پر مسکراہٹ کی ایک وجہ اور تھی۔ وہ وجہ وشاکھاپٹنم ٹیسٹ میں استعمال کی گئی ایس جی بال تھی جسے لے کر کپتان کوہلی کافی خوش نظر آئے۔ مگر یہ بات کسی سے چھپی نہیں ہے کہ وراٹ کوہلی نے تقریبا ایک سال پہلے ایس جی بال کو لے کر کتنی سخت ناراضگی جتائی تھی۔

انہوں نے یہاں تک کہہ دیا تھا کہ اگر ممکن ہو تو دنیا بھر میں ٹیسٹ کرکٹ کے لئے ڈیوک گیند کا استعمال کیا جانا چاہئے۔ وراٹ کوہلی نے کہا تھا کہ ایس جی بال کچھ وقت میں ہی ڈھیلی ہو جاتی ہے اور اپنی چمک کھو دیتی ہے جس سے تیز گیندبازوں کو زیادہ مدد نہیں ملتی۔ وراٹ کوہلی کے علاوہ تیز گیندباز امیش یادو اور آف اسپنر آر اشون بھی ایس جی بال کی کوالٹی پر سوال اٹھا چکے ہیں۔

Loading...

مگر ایک سال بعد ایسا لگتا ہے کہ وراٹ کوہلی کی مراد پوری ہو گئی۔ وشاکھاپٹنم ٹیسٹ جیت کر جب بات بیان دینے کی آئی تو ہندوستانی کپتان نے واضح کر دیا کہ اس میچ میں استعمال کی گئی ایس جی بال کافی شاندار تھی۔

انہوں نے کہا ’’ ایس جی بال کا یہ لاٹ کافی بہتر ہے۔ یعنی کچھ تو بہتر ہوا ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ گیند 80 اووروں تک ہارڈ بنی رہے۔ یہ ٹیسٹ کرکٹ کے لئے مثالی صورت حال نہیں ہے۔ ہارڈ بال سے بلے بازوں کے لئے مشکلیں آتی ہیں۔ اگر گیند 80 اووروں تک ہارڈ نہ بھی رہے تو بھی 60 اووروں تک تو ہونا ہی چاہئے۔ اس سے میچ میں بنے رہنے میں مدد ملتی ہے۔ گیندباز آپ کے سامنے مشکلیں پیش کرتے ہیں۔ یہی ٹیسٹ کرکٹ کا مزہ ہے‘‘۔

Loading...