بہار کے دربھنگہ میں دو انجینئرز کے قتل سے سنسنی، اپوزیشن نے کہا جنگل راج کی واپسی

پٹنہ۔ بہار میں نئی حکومت قائم ہوئے ایک ماہ سے زیادہ ہو گئے مگر جرم کے واقعات تھمنے کا نام نہیں لے رہے ہیں۔

Dec 27, 2015 10:02 AM IST | Updated on: Dec 27, 2015 10:02 AM IST
بہار کے دربھنگہ میں دو انجینئرز کے قتل سے سنسنی، اپوزیشن نے کہا جنگل راج کی واپسی

پٹنہ۔ بہار میں نئی حکومت قائم ہوئے ایک ماہ سے زیادہ ہو گئے مگر جرم کے واقعات تھمنے کا نام نہیں لے رہے ہیں۔ پوری ریاست میں قتل، لوٹ اور ڈکیتی جیسے جرائم کا گراف بڑھتا ہی جا رہا ہے۔ مجرموں کے حوصلے اتنے بلند ہو گئے ہیں کہ کھلے عام جرائم کو انجام دیا جا رہا ہے۔ بہار کے دربھنگہ میں ایک نجی سڑک تعمیراتی کمپنی کے دو انجینئرز کو مجرموں نے دن دہاڑے گولی مار کر قتل کر دیا۔ یہ واقعہ اس وقت ہوا جب دربھنگہ کے بھیری میں انجینئر سڑک کی تعمیر کرا رہے تھے۔ تبھی موٹرسائیكل سوار بدمعاشوں نے دونوں کو گولی مار کر قتل کر دیا۔

تعمیراتی کمپنی کے مطابق، تین دن پہلے کمپنی سے رنگداری مانگی گئی تھی اور نہ دینے پر جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تھی۔ پولیس اس معاملے میں 6 افراد کو حراست میں لے کر پوچھ گچھ کر رہی ہے۔

Loading...

دربھنگہ کے بھیری علاقے میں اس وقت افراتفری مچ گئی جب ایس ایچ 88 پر بھیری میں گولیوں کی آواز سنائی دینے لگی۔ ارد گرد کے لوگ کچھ سمجھ پاتے اس سے پہلے ہی دو بائک پر سوار چار بدمعاش اپنا کام کر چکے تھے۔ ان بدمعاشوں نے ایک نجی کمپنی کے پروجیکٹ منیجر مکیش کمار اور انجینئر برجیش کمار کو گولیوں سے چھلنی کر دیا۔ آنا فانا میں دونوں کو لہیریاسرائے ہسپتال پہنچایا گیا لیکن تب تک دونوں کی موت ہو چکی تھی۔

ایک چشم دید راٹھور کے مطابق شیوراجپور میں واقعہ کو انجام دینے دو لوگ آئے تھے۔ وہ لوگ اندھا دھند گولی چلا کر وہاں سے بھاگ گئے۔ انہوں نے بتایا کہ میرے پروجیکٹ انجینئر اور روڈک کو گولی لگی ہے۔ دونوں انجینئر سڑک کی تعمیر سے منسلک کمپنی میں کام کرتے تھے۔ واردات کے بعد سے کمپنی کا کام بند ہو گیا ہے۔ ارد گرد کے لوگ ہی نہیں پولیس بھی مان رہی ہے کہ تین دن پہلے کمپنی سے رنگداری مانگی گئی تھی لیکن کمپنی کی طرف سے رنگداری نہیں دی گئی۔ دہشت کا عالم یہ ہے کہ کمپنی سے وابستہ لوگ بھی اس معاملے میں صاف صاف کچھ کہنے سے بچ رہے ہیں۔

 

Loading...