شملہ میں چلتی کار میں ہریانہ کی 19 سالہ لڑکی کی آبروریزی ، آدھی ننگی حالت میں سڑک پر پھینکا

متاثرہ کا الزام ہے کہ چلتی کار میں اس کی آبروریزی کی گئی اور پھر نصف عریاں حالت میں پھینک دیا گیا ۔ متاثرہ نے گڑیا ہیلپ لائن کے ذریعہ ریپ کی شکایت کی تھی ۔ وہیں لڑکی کے ساتھ ریپ کے معاملہ میں پولیس بھی سوالات کی زد میں ہے۔

Apr 30, 2019 12:06 PM IST | Updated on: Apr 30, 2019 12:06 PM IST
شملہ میں چلتی کار میں ہریانہ کی 19 سالہ لڑکی کی آبروریزی ، آدھی ننگی حالت میں سڑک پر پھینکا

علامتی تصویر ۔

ہریانہ کی 19 سالہ لڑکی سے ہماچل کی راجدھانی شملہ میں ریپ کا واقعہ سامنے آیا ہے۔ لڑکی کا الزام ہے کہ چلتی کار میں اس کی آبروریزی کی گئی ہے۔ وہ اتوار ( 28 اپریل ) رات تقریبا دس بجے مال روڈ سےآرہی تھی ، تبھی ڈھلی بھٹا کوفر شاہراہ پر ایک کار رکی اور اس کو گاڑی میں کھینچ لیا ۔

متاثرہ کا الزام ہے کہ چلتی کار میں اس کی آبروریزی کی گئی اور پھر نصف عریاں حالت میں پھینک دیا گیا ۔ متاثرہ نے گڑیا ہیلپ لائن کے ذریعہ ریپ کی شکایت کی تھی ۔ وہیں لڑکی کے ساتھ ریپ کے معاملہ میں پولیس بھی سوالات کی زد میں ہے۔

دعوی ہے کہ لڑکی سے پہلے بھی چھیڑ چھاڑ کی گئی تھی اور واردات سے پہلے لڑکی لکڑ بازار چوکی میں شکایت لے کر پہنچی تھی ، لیکن اس کو یہ کہہ کر ٹال دیا گیا کہ یہ حلقہ ڈھلی تھانہ میں نہیں آتا ہے۔ 19 سالہ لڑکی آبائی طور پر ہریانہ کی رہنے والی ہے۔ وہ شملہ میں پرائیویٹ کالج میں پڑھتی ہے۔

ڈی ایس پی ہیڈ کوارٹر پرمود شکلا نے کہا کہ تھانہ ڈھلی میں مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔ جانچ کی جارہی ہے ۔ منگل کو لڑکی کی میڈیکل رپورٹ آئے گی ، اس کے بعد ہی اس معاملہ میں کچھ کہا جاسکتا ہے۔

Loading...

یہ بھی پڑھیں : انسانیت شرمسار ! وحشی باپ نے اپنی ہی 13 سالہ بیٹی کا کیا ریپ ، بچانے گئی ماں پر حملہ کرکے ہوا فرار

 

 

Loading...