نابالغ 4 سالہ معصوم کی عصمت دری کرنے والے ٹیچر کا معاملہ ہائی کورٹ پہنچا

ہائی کورٹ کے جج ایس کے سیٹھ اور جج سبودھ ابھينكر کی دو رکنی بنچ نے دونوں معاملے کی سماعت مشترکہ طور پر کرنے کے لئے ہدایات جاری کئے ہیں۔

Oct 24, 2018 11:49 PM IST | Updated on: Oct 24, 2018 11:54 PM IST
نابالغ 4 سالہ معصوم کی عصمت دری کرنے والے ٹیچر کا معاملہ ہائی کورٹ پہنچا

علامتی تصویر

چار سال کی معصوم بچی کی عصمت دری کرنے والے مجرم ٹیچر کو مدھیہ پردیش کی ڈسٹرکٹ کورٹ ستنا نے پھانسی کی سزا سنائی تھی۔ حکم کی تصدیق کے لئے ڈسٹرکٹ کورٹ نے اس معاملے کو ہائی کورٹ کو سونپا تھا ۔ سزا ئے موت کے خلاف ملزم ٹیچر نے بھی ہائی کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔ہائی کورٹ کے جج ایس کے سیٹھ اور جج سبودھ ابھينكر کی دو رکنی بنچ نے دونوں معاملے کی سماعت مشترکہ طور پر کرنے کے لئے ہدایات جاری کئے ہیں۔

استغاثہ کے مطابق ملزم مهندرراج گونڈ شراب کے نشے میں 30 جون اور یکم جولائی 2018 کی رات چار سالہ معصوم بچی کے گھر پہنچا۔ وہ کچھ دیر تک اس کے والد سے بات کرتا رہا اور پھر وہاں سے چلا گیا۔ بچی کے والد جب رفع حاجت کے لئے گئے تو ملزم ٹیچر بچی کو اغوا کرکے جنگل میں لے گیا اور وہاں اس کی عصمت دری کرکے معصوم بچی کو شدید زخمی حالت میں چھوڑ کر فرار ہو گیا تھا۔

پولیس نے اطلاع ملنے پررپورٹ درج کرکے معاملے پر فوراً کارروائی کی ۔ بچی کو شدید حالت میں علاج کے لئے دہلی میں واقع ایمس اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ پولیس ملزم ٹیچر مہندر کے گھر پہنچی تو اس نے فرار ہونے کی کوشش کی ۔ پولیس نے اسے پکڑ کر پوچھ گچھ کی تو اس نے اپنا جرم قبول کر لیا تھا۔ڈسٹرکٹ کورٹ نے معاملے کی سماعت کرتے ہوئے ٹیچر کو مجرم

Loading...

یہ بھی پڑھیں : سیکس پاور کی دوائیں کھاکر پہلوان شوہر چھوٹے بچوں کے ہی سامنے کرتا تھا ریپ ، بیوی نے ختم کی کہانی

Loading...