نابالغ لڑکی کو اغوا کر کے پانچ مہینے تک ریپ کرتا رہا شادی شدہ شخص

خاتون پولیس اسٹیشن نے نابالغ لڑکی کا دیر رات چورو کے سرکاری اسپتال میں میڈیکل کرایا۔ ڈاکٹر کے مطابق، متاثرہ پانچ ماہ سے حاملہ ہے

May 03, 2019 10:39 AM IST | Updated on: May 03, 2019 10:39 AM IST
نابالغ لڑکی کو اغوا کر کے پانچ مہینے تک ریپ کرتا رہا شادی شدہ شخص

علامتی تصویر

راجستھان کے چورو ضلع میں انسانیت کو شرمسار کر دینے والا ایک ایسا معاملہ سامنے آیا ہے جسے سن کر کسی کی بھی روح کانپ جائے گی۔ یہاں ایک شادی شدہ شخص نابالغ لڑکی کو اغوا کرنے کے بعد اسے یرغمال بنا کر پانچ مہینے تک ریپ کرتا رہا۔ ملزم متاثرہ لڑکی کے کنبہ کا جاننے والا ہے۔ پولیس نے لڑکی کو گجرات کے احمدآباد سے برآمد کیا ہے۔ خاتون پولیس اسٹیشن نے نابالغ لڑکی کا دیر رات چورو کے سرکاری اسپتال میں میڈیکل کرایا۔ ڈاکٹر کے مطابق، متاثرہ پانچ ماہ سے حاملہ ہے۔ وہیں، ملزم موقع سے فرار ہونے میں کامیاب رہا۔ پولیس ملزم کی تلاش کر رہی ہے۔

اطلاعات کے مطابق، پانچ ماہ پہلے نومبر 2018 میں ضلع کے رڈکھلا گاؤں سے اس سولہ سال کی نابالغ لڑکی کو اسی کے کنبہ کے شادی شدہ شخص ابھیمنو نے بہلا پھسلا کر اغوا کر لیا تھا۔ متاثرہ لڑکی 12 ویں کلاس کی طالبہ ہے۔ ابھیمنو اسے ٹیوشن پڑھاتا تھا۔ اس دوران اس نے طالبہ کو اپنے جال میں پھنسایا اور اپنے گاؤں لے جا کر اس کی عصمت دری کی۔ اس کے بعد ملزم نے طالبہ کو شادی کا جھانسہ دے کر اسے اغوا کر لیا۔ ملزم طالبہ کو لے کر جموں گیا جہاں وہ نابالغ لڑکی کو یرغمال بنا کر تین مہینے تک اس کی عصمت دری کرتا رہا۔ اس کے بعد وہ طالبہ کو لے کر گجرات کے احمدآباد چلا گیا جہاں پچھلے دو مہینے سے ملزم نے طالبہ کو یرغمال بنا رکھا تھا۔

Loading...

ادھر، طالبہ کے اہل خانہ نے خاتون پولیس اسٹیشن میں 26 نومبر 2018 کو شک کی بنیاد پر ملزم ابھیمنو کے خلاف اغوا کئے جانے کا معاملہ درج کرایا۔ اس کے بعد پولیس کال ڈیٹیل اور موبائل لوکیشن کی بنیاد پر ملزم کی تلاش میں جٹ گئی۔ اس دوران ملزم مسلسل سم بدلتا رہا جس کی وجہ سے اس کے لوکیشن کا پتہ لگانے میں پولیس کو پریشانی ہوتی رہی۔ آخر کار ایک طویل وقت کے بعد پولیس کو ملزم کے موبائل کی لوکیشن گجرات کے احمدآباد میں ملی۔ جس کے بعد پولیس ٹیم نے طالبہ کو احمد آباد سے برآمد کیا۔ پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ ملزم ابھیمنو جلد ہی پولیس کی گرفت میں ہو گا۔

 

Loading...