غازی آباد میں تین سپا سینٹرس پر چھاپے ، 19 لڑکے و لڑکیاں گرفتار ، کنڈوم سمیت کئی دیگر قابل اعتراض اشیا برآمد

گزشتہ رات مخبروں کی اطلاع کی بنیاد پر غازی آباد پولیس نے ایک ٹیم تشکیل دی اور علاقہ میں چل رہے تین سپا سینٹروں پر لگاتار چھاپہ ماری کی ۔

Oct 06, 2019 07:01 PM IST | Updated on: Oct 06, 2019 07:01 PM IST
غازی آباد میں تین سپا سینٹرس پر چھاپے ، 19 لڑکے و لڑکیاں گرفتار ، کنڈوم سمیت کئی دیگر قابل اعتراض اشیا برآمد

علامتی تصویر

دہلی سے متصل غازی آباد میں گزشتہ رات تین سپا سینٹروں پر چھاپہ ماری کی گئی ۔ غازی آباد پولیس نے چھاپہ ماری کرکے 19 لوگوں کو گرفتار کیا ہے ۔ یہ چھاپے ضلع کے نیتی کھنڈ ایریا میں مارے گئے ۔ خیال رہے کہ اندرا پورم تھانہ پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ علاقہ میں سپا سینٹرس کی آڑ میں سیکس ریکیٹ چل رہے ہیں ۔ ساتھ ہی یہ سپا سینٹرس بھی غیر قانونی طریقہ سے چلائے جارہے ہیں ۔ غازی آباد پولیس جب ان سپا سینٹرس پر پہنچی تو وہاں پر کئی لڑکے لڑکیاں قابل اعتراض حالت میں ملے ۔

بتادیں کہ گزشتہ رات مخبروں کی اطلاع کی بنیاد پر غازی آباد پولیس نے ایک ٹیم تشکیل دی اور علاقہ میں چل رہے تین سپا سینٹروں پر لگاتار چھاپہ ماری کی ۔ چھاپہ ماری کو کافی خفیہ طریقہ سے انجام دیا گیا ۔ پولیس کا کہنا ہے کہ مقامی لوگوں کی شکایت کے بعد چھاپہ ماری کی گئی  ۔ پولیس نے چھاپہ مارنے کے بعد ان سپا سینٹروں سے 10 لڑکے اور 9 لڑکیوں کو گرفتار کیا ہے ۔ ایک سپا سینٹر آپریٹر کو بھی گرفتار کیا گیا ہے جبکہ دو سپا سینٹروں کے آپریٹرس فرار ہیں ۔

Loading...

ان سپا سینٹروں سے کئی قابل اعتراض اشیا برآمد ہوئی ہیں ، ان میں نشے کی گولیاں ، کنڈوم ، سگریٹ کے پیکیٹس وغیرہ شامل ہیں ۔ بتایا جارہا ہے کہ گرفتار لڑکیاں غازی آباد کے آس پاس کے علاقہ کی رہنے والی ہیں ۔ پولیس نے ملزمین کے خلاف پیٹا ایکٹ کے تحت کارروائی کی ہے ۔ پولیس نے بتایا کہ ملزمین سے پوچھ گچھ جاری ہے ۔ پوچھ گچھ میں کئی ہائی پروفائل لوگوں کے نام بھی سامنے آسکتے ہیں ۔

فی الحال غازی آباد پولیس نے معاملہ درج کرکے جانچ شروع کردی ہے ۔ تینوں سپا سینٹروں سے کچھ کاغذات بھی برآمد کئے گئے ہیں ، جس کی جانچ چل رہی ہے۔ غازی آباد پولیس کا کہنا ہے کہ موبائل نمبروں سے پتہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ کون کون لوگ یہاں مستقل طور پر آتے تھے ۔ تینوں سپا سینٹروں کو سیل کردیا گیا ہے ۔ پولیس کا کہنا ہے کہ گرفتار سبھی لڑکے لڑکیوں کو عدالت میں پیش کر کے جیل بھیج دیا جائے گا ۔

Loading...