فوج جیسے باوقار ادارے پر الزام تراشی سے گریز کیا جائے: گورنر مغربی بنگال

کلکتہ۔ مغربی بنگال میں ریاستی سیکریٹریٹ نوبانا کے پاس ٹول پلازہ سمیت ریاست بھر کے مختلف ٹول پلازہ پر فوجی جوانوں کی تعیناتی پر وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی اور ترنمول کانگریس کے اعتراضات و اور احتجاج پر مغربی بنگال کے گورنر کیسری ناتھ ترپاٹھی نے کہا کہ فوج جیسے ذمہ دار اور باوقار اداروں کے خلاف الزام تراشی سے گریز کیا جانا چاہیے۔

Dec 03, 2016 08:07 PM IST | Updated on: Dec 03, 2016 08:07 PM IST
فوج جیسے باوقار ادارے پر الزام تراشی سے گریز کیا جائے: گورنر مغربی بنگال

کلکتہ۔ مغربی بنگال میں ریاستی سیکریٹریٹ نوبانا کے پاس ٹول پلازہ سمیت ریاست بھر کے مختلف ٹول پلازہ پر فوجی جوانوں کی تعیناتی پر وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی اور ترنمول کانگریس کے اعتراضات و اور احتجاج پر مغربی بنگال کے گورنر کیسری ناتھ ترپاٹھی نے کہا کہ فوج جیسے ذمہ دار اور باوقار اداروں کے خلاف الزام تراشی سے گریز کیا جانا چاہیے۔ نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے گورنر کیسری ناتھ ترپاٹھی نے کہا کہ ہر ایک شخص کو فوج جیسے باوقار اور ذمہ دارادارے کے خلاف الزام تراشی کرنے سے پرہیز کرنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ فوج کی توہین اور بدنام کرنے کی کوشش نہیں کرنی چاہیے۔دوسری جانب مرکزی حکومت نے بھی ممتا بنرجی کے ذریعہ فوجی جوانوں کی تعیناتی پر اعتراضات پر سخت حملے شروع کردیے ہیں ۔ مرکزی وزیر اطلاعات و نشریات وینکیا نائیڈو ، مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ کرن رجیجو نے فوج جیسے ادارے پر سیاست کو افسوس ناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ فوجی کی تعیناتی معمول کے ایکسر سائز کا حصہ ہے مگر اس کو سیاسی فائدہ کیلئے بدنام کیا جارہا ہے۔

مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ کرن رجیجو نے انڈیگو کی فلائٹ جس میں وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی پٹنہ سے کلکتہ آرہی تھیں کو تیل ختم ہونے کے باوجود نصف گھنٹے تک نیتاجی سبھاش چندر بوس ائیر پورٹ اترنے نہیں دینے کی اجازت پر کہا کہ انڈیگو کا پائلٹ کوئی القاعدہ کا رکن نہیں تھا کہ وہ ممتا بنرجی کی جان کا دشمن ہے اور نہ ہندوستان پاکستان ہے کہ یہاں فوجی بغاوت ہوسکتی ہے ۔اس لیے فوج کو سیاست سے الگ رکھنا چاہیے۔ دوسری جانب سے 72گھنٹے کی ایکسر سائز مکمل ہونے کے بعد ریاست کے تمام ٹول پلازہ جہاں پر فوج کو تعینات کیا گیا تھا کو ہٹادیا گیا ہے ۔وزارت دفاع کے سی پی آر او ایس ایس بردی نے کہا کہ 72گھنٹے کی ایکسر سائز کے بعد پال ہٹ ٹول پلازہ سمیت دیگر تمام ٹول پلازہ سے فوجیوں کو ہٹا دیا گیا ہے ۔ ترنمول کانگریس نے ریاستی حکومت کو مطلع کیے بغیر ریاست کے 9ٹول پلازہ پر فوجی جوانوں کی تعیناتی پر سخت اعتراض کیا تھا ۔ممتا بنرجی نے اس صورت حال کو ایمرجنسی سے تعبیر کرتے ہوئے کہا تھا کہ ریاستی سیکریٹریٹ نوبانا سے محض 500میٹر کی دوری پر فوج کی تعیناتی افسوس ناک ہے ۔فوج اور مرکزی حکومت کا دعویٰ تھا کہ ریاستی انتظامیہ کو اس کے بارے میں مطلع کردیا گیا تھا مگر بنگال حکومت کا دعویٰ ہے کہ کلکتہ پولس نے ریاستی سیکریٹریٹ کے قریب ہگلی ندی کے ٹول پلازہ پر فوجیوں کی تعیناتی پر اعتراض کیا تھا۔

ممتا بنرجی فوج کی تعیناتی پر احتجاج کرتے ہوئے 36گھنٹے تک ریاستی سیکریٹریٹ میں یہ کہتی رہیں کہ وہ جمہوریت کے تحفظ کیلئے یہاں رہیں گی۔کل شام وہ ریاستی سیکریٹریٹ سے گھر روانہ ہوئیں۔ دوسری جانب کل ترنمول کانگریس کے سینئر وزراء اور ممبران اسمبلی نے راج بھون تک مارچ کیا اور صدر دروازے پر دھرنا دیا مگر گورنر کے نہیں ہونے کی وجہ سے ڈھائی گھنٹے کے بعد دھرنا ختم کردیا گیا ۔

Loading...

Loading...