کولکاتا کتاب میلے میں اردو کتابوں کی کم خریداری سے پبلشروں میں مایوسی

کولکاتہ۔ کولکاتہ کتاب میلے میں دیگر زبانوں کی کتابوں کےساتھ اردو کی کتابیں بھی لوگوں کی توجہ کا مرکز ہیں تاہم کتابوں کی سست خریداری سے پبلیشروں میں مایوسی دیکھی جارہی ہے۔

Feb 04, 2016 07:49 PM IST | Updated on: Feb 04, 2016 07:50 PM IST
کولکاتا کتاب میلے میں اردو کتابوں کی کم خریداری سے پبلشروں میں مایوسی

کولکاتہ۔ کولکاتہ  کتاب میلے میں  دیگر زبانوں کی کتابوں کےساتھ اردو کی کتابیں بھی لوگوں کی توجہ کا مرکز ہیں تاہم کتابوں کی سست خریداری سے  پبلیشروں میں مایوسی دیکھی جارہی ہے۔ کتاب میلے میں لٹریری فیسٹیول کے ساتھ ساتھ مختلف ثقافتی پروگرام بھی منعقد کئے جارہے ہیں۔ یہ میلہ ۷ فروری کو اختتام پذیر ہوگا۔

کولکاتا تہذیب و ثقافت کا شہر ہے۔  یہاں کے لوگوں میں کتابیں پڑھنے کا جنون ہے۔ مختلف ممالک کے مصنفّوں کی کتابیں پڑھنا اور انکے خیالات کو جاننایہاں کے لوگوں کا اہم شوق ہے۔ یہی وجہ ہے کہ کولکاتا کتاب میلہ یہاں کے لوگوں کے لئے کسی تیوہار  سے کم نہیں ہے۔  ریاست بھر سے لوگ یہاں کتاب میلے میں آتے اور کتابیں خریدتے ہیں۔ کتاب میلے میں مختلف زبانوں کی کتابیں ہیں ۔ ہر عمر کے لوگ شامل ہورہے ہیں اور اپنی پسند کی کتابیں خرید رہے ہیں۔ان میں اردو کی کتابوں کے بھی ۶ اسٹال لگائے گئے ہیں  ۔ان اسٹالوں میں ادبی کتابوں کے ساتھ ساتھ مذہبی کتابیں بھی موجود ہیں۔  پبلیشروں کے مطابق  اردو والے کتابیں کم خریدتے ہیں تاہم کچھ پبلیشروں کے مطابق  بورڈ  کے امتحان کے باعث اس سال میلے میں طلباء کی بھیڑ کم دیکھی جارہی ہے۔ویسے  جو لوگ وہاں آ رہے ہیں ان لوگوں نے   کتاب میلے کو اہم بتاتے ہوئے اسکے فروغ پر توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

Loading...

Loading...