راہل گاندھی نے'جن اکانشا ریلی' میں کہا 'ہم چھوٹے وعدے کرتے ہیں، لیکن جھوٹے نہیں'۔

اپوزیشن جماعتوں کے لیڈران نے ملک کی سالمیت اوراتحاد کوبرقراررکھنے کے لئے بی جے پی کو اقتدارسے بے دخل کرنے کی اپیل کی ہے۔

Feb 03, 2019 02:31 PM IST | Updated on: Feb 03, 2019 04:25 PM IST
راہل گاندھی نے'جن اکانشا ریلی' میں کہا 'ہم چھوٹے وعدے کرتے ہیں، لیکن جھوٹے نہیں'۔

راہل گاندھی پٹنہ میں منعقدہ جن اکانشا ریلی کے دوران۔

راہل گاندھی نے پٹنہ کے گاندھی میدان میں کانگریس کی جن اکانشا ریلی (عوام کی امیدوں والی ریلی) میں خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ بہارمیں سبھی سیٹیں عظیم اتحاد کو ملنی چاہئے۔ پہلی ہرت کرانتی ہریانہ -پنجاب میں ہوئی تھی ، دوسری کرانتی میں بہارکا بھی تعاون ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ مدھیہ پردیش، راجستھان اورچھتیس گڑھ میں فیکٹریوں کا جال بچھائیں گے۔ تین ریاستوں کے کسانوں نے وزیراعظم مودی کو جواب دیا ہے۔

ملک میں کانگریس کی حکومت آئی توجوکام ہم نے تین ریاستوں میں کیا وہ پورے ملک میں کریں گے۔ تیجسوی یادو کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ وہ نوجوان لیڈرہیں۔ ہم سب عزت سے پیارسے لوک سبھا اوراسمبلی انتخابات میں اکثریت کے ساتھ حکومت بنانے جارہے ہیں۔ انہوں نے کانگریس حکومت کی حصولیابیوں کا ذکرکرتے ہوئے کہا کہ ہماری حکومت بنی توملک کے ہرغریب کے کھاتے میں پیسہ ڈالیں گے۔

Loading...

راہل گاندھی نے کہا کہ کانگریس پارٹی بیک فٹ پرنہیں فرنٹ فٹ پرکھیلے گی اورچھکا بھی لگائے گی۔۔ ملک کے کسانوں کا پیسہ اب سیدھے طورپرصنعت کاروں کی جیت میں جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بہارپھرسے تعلیم کا سینٹر بن سکتا ہے۔ بہاریوں میں کوئی کمی نہیں ہے۔ بہارکونہ نتیش کمارنے روزگاردیا اورنہ ہی وزیراعظم مودی نے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے بہار تعلیم کا سینٹرتھا، لیکن اب بے روزگاری کا سینٹرہے۔ پٹنہ یونیورسٹی کی حالت اب بہت بری ہوگئی ہے، لیکن مودی جی نے کچھ نہیں کیا۔ بہارمیں پہلے پوری دنیا کے لوگ پڑھنے آتے تھے۔ اب بہارمیں ڈگریاں 5-6 سال میں ملتی ہیں۔  کانگریس کی حکومت آئی توپٹنہ یونیورسٹی سینٹرل یونیورسٹی کا درجہ ملے گا۔ راہل نے کہا کہ وزیراعظم نے دو کروڑ روزگارکے وعدے کئے، لیکن کیا ہوا؟

راہل گاندھی نے کہا کہ ہندوستان کے کسانوں کی جیب میں حکومت نے 17 روپئے ڈالے ہیں۔ ملک کے صنعت کاروں کے جیب میں پیسے جاتے ہیں۔ 126 ہوائی جہاز ملنے کا معاملہ طے اورواضح تھا۔ کانگریس نے فرانس کی حکومت سے کہا تھا کہ رافیل اچھا ہے۔ انہوں نے وزیراعظم کے بیرون ممالک سفرپرسوال کھڑے کئے۔ ساتھ ہی نوٹ بندی پرتبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نے نوٹ بندی کرکے کسانوں اورعام لوگوں کو بینکوں کے سامنے کھڑا کردیا۔

Congress President @RahulGandhi arrives at the Gandhi Maidan in Patna to address the hundreds of people gathered for the #JanAkankshaRally pic.twitter.com/cugbAbM1nO

تیجسوی یادو نے کہا کہ سی بی آئی اورای ڈی لگاکربھی کوئی میرے والد لالو پرساد یادو کولوگوں کے دل سے نہیں نکال سکتا۔ حکومت سی بی آئی اورای ڈی سے لوگوں کوڈراتی ہے۔ انہوں نے اسپیشل پیکیج کے بہانے بہاراورمرکزی حکومت پرنشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت نے سب سے زیادہ سوتیلا برتاوبہارسے کیا۔ جیتن رام مانجھی نے کہا کہ آنے والے الیکشن میں سبھی اتحاد مل کراین ڈی اے کو ہٹائیں۔ انہوں نے کہا کہ آج تبدیلی کا دن ہے۔  

تیجسوی یادو نے فرقہ وارانہ ماحول خراب کرنے کے لئے مرکزی وزیرگری راج سنگھ پرنشانہ سادھا۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن آتے ہی بی جے پی کو رام مندرکی یاد آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب کچھ لیڈرلوگوں کے جذبات کھیلیں گے، اس سے آپ کو بچ کررہنا ہوگا۔ بی جے پی کے لوگ ملک سے آئین کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔ تیجسوی یادو نے کہا کہ کانگریس ملک کی سب سے بڑی پارٹی ہے، سب کوساتھ لے کرچلیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ راہل گاندھی میں وزیراعظم بننے کی صلاحیت موجود ہے۔

ممبرپارلیمنٹ طارق انورنے ملک سے فرقہ وارانہ طاقتوں کوہٹانے کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ راہل گاندھی کی قیادت میں ہی ملک کوبچایا جاسکتا ہے۔ طارق انورنے کہا کہ ملک کی ایکتا اوراتحاد کوکانگریس ہی بچاسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریلی کی بھیڑ بتارہی ہے کہ کانگریس کے پاس کتنی طاقت ہے۔ ممبرپارلیمنٹ رنجیتا رنجن نے کہا کہ اندرا گاندھی نے اسی اسٹیج سے تقریرکی تھی، آج پھرسے تاریخ دوہرائی جائے گی۔

سابق مرکزی وزیرشرد یادو نے اوپیندرکشواہا پرہوئے حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں مخالف ٹیم کے لیڈروں کوستایا جارہا ہے، کسی کوسی بی آئی توکسی کوای ڈی سے ہورہا ہے۔ شرد یادو نے کہا کہ ملک سے بی جے پی اورنریندرمودی حکومت کی حکومت کو ہرحال میں ہٹانا ہے۔ آباواجداد کی قربانی کے بعد بھی ملک میں آج غیراعلانیہ ایمرجنسی ہے۔

تقریباً تین دہائی کے بعد کانگریس کی اس ریلی میں بڑی تعداد میں لوگ جمع ہوئے۔  یہ بہارمیں پہلا موقع ہوگا جب الیکشن سے ٹھیک پہلےعظیم اتحاد کے سہارے کانگریس نے اپنی طاقت دکھائی ہے۔ پارٹی کے قومی صدرراہل گاندھی تین ریاستوں کے وزرائےاعلیٰ کے ساتھ اس ریلی میں شامل ہوئے۔ ان کے ساتھ راجستھان کے وزیراعلیٰ اشوک گہلوت، مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ اورچھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ بھوپیش بگھیل بھی ریلی میں شامل ہوئے۔ اسٹیج پرراہل گاندھی کا شانداروالہانہ استقبال کیا گیا۔ اس موقع پرحاجی پورٹرین حادثہ کے مہلوکین کوکانگریس صدرراہل گاندھی سمیت سب نے ایک منٹ کی خاموشی اختیار کر کےخراج عقیدت پیش کی۔

Loading...