உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Delhi School: سپریم کورٹ کی پھٹکار کے بعد دہلی حکومت کا بڑا فیصلہ، کل سے اگلے حکم تک بند رہیں گے اسکول

    دہلی حکومت کو اس وجہ سے بھی لگی پھٹکار۔۔۔

    دہلی حکومت کو اس وجہ سے بھی لگی پھٹکار۔۔۔

    Delhi School News:دہلی حکومت نے کل یعنی جمعہ سے تمام اسکول بند (Delhi School Closed) رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سلسلے میں دہلی کے وزیر ماحولیات گوپال رائے نے کہا، 'حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے تمام اسکول کل سے بند کر دیے جائیں گے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: ملک کی راجدھانی دہلی میں مسلسل ہوا کے بگڑتے معیار پر سپریم کورٹ (Supreme Court) نے سخت موقف اختیار کیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی عدالت کی طرف سے پھٹکار کے بعد دہلی حکومت نے کل یعنی جمعہ سے تمام اسکول بند (Delhi School Closed) رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سلسلے میں دہلی کے وزیر ماحولیات گوپال رائے نے کہا، 'حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ دہلی کے تمام اسکول کل سے بند کر دیے جائیں گے۔

      اس کے ساتھ گوپال رائے نے کہا کہ آلودگی بڑھ رہی ہے جس کی وجہ سے یہ فیصلہ لیا گیا ہے۔ اگلے حکم تک اسکول بند رہیں گے۔ اس سے پہلے سی جے آئی این وی رمن نے دہلی حکومت کی سرزنش کی کہ آپ نے اسکول بند نہیں کئے۔ چھوٹے بچے اسکول جا رہے ہیں، اخبارات میں آ رہے ہیں۔ وہیں آپ سرکاری ملازمین کو گھر سے کام کرنے پر مجبور کر رہے ہیں اور بچوں کو اسکول بھیجا جا رہا ہے۔

      بتادیں کہ دیوالی کے بعد سے دہلی میں فضائی آلودگی انتہائی سنگین زمرے میں ہے۔ اس کی وجہ سے دیوالی کے بعد دہلی حکومت نے اسکولوں میں فزیکل کلاسز بند کردی تھیں، لیکن 29 نومبر سے اسکول دوبارہ کھل گئے اور آف لائن کلاسز شروع ہوگئیں۔ یہی نہیں اس دوران کئی اسکولوں میں امتحانات ہو رہے تھے۔ اب 3 دسمبر سے اسکول دوبارہ بند ہوں گے تو آف لائن کلاسز بھی نہیں ہوں گی۔

      دہلی حکومت کو اس وجہ سے بھی لگی پھٹکار۔۔۔
      یہی نہیں، سپریم کورٹ نے جمعرات کو 'ریڈ لائٹ آن، گاڑی آف' مہم کے لیے دہلی حکومت کو پھٹکار لگاتے ہوئے کہا کہ یہ ایک پاپولسٹ نعرے کے سوا کچھ نہیں ہے۔ چیف جسٹس این وی رمنا، جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ اور جسٹس سوریہ کانت کی خصوصی بنچ نے کہا کہ عام آدمی پارٹی کی حکومت نے پچھلی سماعت میں گھر سے کام کرنے، لاک ڈاؤن کو نافذ کرنے اور اسکولوں اور کالجوں کو بند کرنے جیسے اقدامات کرنے کی یقین دہانی کرائی تھی لیکن اس کے باوجود یہ بچے اسکول جا رہے ہیں اور بالغ گھر سے کام کر رہے ہیں۔

      بنچ نے کہا، ' بیچارے نوجوان بینر اٹھائے سڑک کے بیچ کھڑے ہیں، ان کی صحت کا کون خیال کر رہا ہے؟ ہمیں دوبارہ کہنا پڑے گا کہ یہ ایک پاپولسٹ نعرے کے علاوہ اور کیا ہے؟'

      اسی وقت دہلی حکومت کی طرف سے پیش ہوئے سینئر وکیل ابھیشیک منو سنگھوی نے حلف نامہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ حکومت نے مختلف اقدامات کئے ہیں۔ اس پر تبصرہ کرتے ہوئے بنچ نے کہا کہ یہ آلودگی کی ایک اور وجہ ہے، روزانہ اتنے حلف نامے۔ اس کے علاوہ بنچ نے کہا، 'کیا حلف نامے میں یہ بتایا گیا ہے کہ سڑک پر کتنے نوجوان کھڑے ہیں؟ پروموشن کے لیے؟ ایک نوجوان سڑک کے بیچوں بیچ بینر لیے کھڑا ہے۔ یہ کیا ہے؟ کسی کو ان کی صحت کا خیال رکھنا ہے۔

      اس کے جواب میں سنگھوی نے کہا کہ یہ 'لڑکے' سول رضاکار ہیں۔ بتا دیں کہ وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے 21 اکتوبر سے 15 نومبر تک 'ریڈ لائٹ آن، گاڑی آف' مہم کا آغاز کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر شہر میں 10 لاکھ گاڑیاں اس مہم میں شامل ہوتی ہیں تو ایک سال میں پی ایم 10 کی سطح بڑھ جائے گی۔ 1.5 ٹن اور PM 2.5 کی سطح 0.4 ٹن کم ہو جائے گی۔ اس پہل کے تحت، محکمہ ٹرانسپورٹ کے سرکاری اہلکار، رضاکار اور ٹریفک پولیس والے مسافروں سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ گرین لائٹ کے آن ہونے کا انتظار کرتے ہوئے گاڑی کو روک دیں۔ حکومت نے اس مہم کی مدت 30 نومبر تک بڑھا دی تھی۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: