اپنا ضلع منتخب کریں۔

    آسام میں اسکول ٹیچرس کی 8000 خالی آسامیوں کوکیا گیا ختم! آخر کیا ہیں وجوہات؟ جانیے تفصیلات

    ۔علامتی تصویر۔

    ۔علامتی تصویر۔

    آل انڈیا یونائیٹڈ ڈیموکریٹک فرنٹ (اے آئی یو ڈی ایف) کے تنظیمی جنرل سکریٹری امین الاسلام نے کہا کہ حکومت نے بے روزگار نوجوانوں کو نوکریاں دینے کے بجائے ہزاروں نوکریاں ختم کردیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Assam | Mumbai | Jammu | Delhi | Lucknow
    • Share this:
      آسام حکومت نے منگل کے روز کہا کہ وہ مستقل اسکول اساتذہ کی 8,000 خالی آسامیوں کو ختم کردے گی کیونکہ کنٹراکٹ فیکلٹی ممبران کی ایک بڑی تعداد پہلے ہی سربا سکشا ابھیان (SSA) کے ذریعے کام کر رہی ہے۔ اپوزیشن جماعتوں اور طلبہ تنظیموں نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہ قدم مقامی میڈیم اسکولوں کے مفادات کے خلاف ہے۔

      وزیر تعلیم رنوج پیگو نے کہا کہ ریاستی حکومت نے 2020 میں لوئر پرائمری اور اپر پرائمری اسکولوں میں ایس ایس اے کے تحت کام کرنے والے 11,206 کنٹریکٹ پر کام کرنے والے اساتذہ کو 2020 میں باقاعدہ پے اسکیل اور دیگر مراعات پیش کیے ہیں، جس میں 60 سال کی عمر تک سروس کی مدت کی پیشکش بھی شامل ہے۔

      انہوں نے ایک فیس بک پوسٹ میں کہا کہ حکومت نے دوغلے پن اور مالی غیرجانبداری سے بچنے کے لیے باقاعدہ اساتذہ کی 8000 منظور شدہ پوسٹوں کو خالی رکھنے کا فیصلہ کیا۔ وزیر تعلیم نے کہا کہ چونکہ یہ خالی آسامیاں منجمد رکھی گئی ہیں اور کنٹریکٹ پر اساتذہ کی ریٹائرمنٹ تک طویل مدت تک خالی رہیں گی، اسی لیے حکومت نے مالی نظم و ضبط کے لیے انہیں ختم کرنا سمجھداری سمجھا ہے۔ تاہم انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت مستقبل میں اندراج میں اضافے کی وجہ سے جب بھی ضرورت ہو آسامیاں تشکیل دے سکتی ہے۔

      اس اعلان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے آسام جاتیہ پریشد کے صدر لورین جیوتی گوگوئی نے الزام لگایا کہ عہدوں کو ختم کرنے کا قدم کم اندیشی اور عوامی تعلیمی نظام کے خلاف ہے۔ انہوں نے کہا کہ مقامی میڈیم اسکولوں کے خلاف حکومت کی اس طرح کی سازشیں بہت پرانی ہیں اور اس کے تحت تازہ ترین ہزاروں اساتذہ کی آسامیوں کو ختم کیا جائے گا۔ شعبۂ تعلیم سے متعلق اس طرح کا فیصلہ ہرگز قابل قبول نہیں ہے۔ جو کہ ایک آئینی سبجیکٹ ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      آل انڈیا یونائیٹڈ ڈیموکریٹک فرنٹ (اے آئی یو ڈی ایف) کے تنظیمی جنرل سکریٹری امین الاسلام نے کہا کہ حکومت نے بے روزگار نوجوانوں کو نوکریاں دینے کے بجائے ہزاروں نوکریاں ختم کردیا ہے۔

      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: