உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نئے سال میں آئیں گی بمپر نوکریاں، لیکن کورونا کا نیا ویرینٹ بڑھاسکتا ہے تشویش

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    سال 2020 کے پہلے چھ مہینوں میں اقتصادی سرگرمیوں پر وبا کی پہلی لہر کا بہت خراب اثر پڑا تھا۔ اس سے روزگار ب ازار کے رسمی اور غیر رسمی دونوں ہی سیکٹرس پر برا اثر دیکھا گیا تھا۔

    • Share this:
      نوکریوں کی تلاش کررہے لوگوں کے لئے سال 2022 نئی اُمیدیں لے کر آسکتا ہے۔ وبا کے خطرے کے درمیان، اقتصادی سرگرمیوں میں آئی تیزی سے کمپنیاں کاروبار میں آمدنی بڑھنے سے مثبت راستے پر چل رہی ہیں، جس سے نئے سال میں نئے روزگار کے مواقع پیدا ہونے کی امید ہے۔ حالانکہ، کوویڈ-19 وبا کے لئے ذمہ دار کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ اومیکرون کو لے کر تشویش ضرور ہے۔

      وبا سے متعلق چیلنجز نہیں ہوئے ختم
      سال 2020 کے پہلے چھ مہینوں میں اقتصادی سرگرمیوں پر وبا کی پہلی لہر کا بہت خراب اثر پڑا تھا۔ اس سے روزگار ب ازار کے رسمی اور غیر رسمی دونوں ہی سیکٹرس پر برا اثر دیکھا گیا تھا۔ وبا سے جڑے چیلنجز ابھی پوری طرح ختم نہیں ہوئے ہیں لیکن وقت کے ساتھ روزگار کا نقطہ نظر اب زیادہ مثبت نظر آرہا ہے۔

      روزگار بازار پر نظر رکھنے والی فرم ٹیم لیز سروسز کے بزنس ہیڈ (گاہک اور حفظان صحت) اے بالاسبرامنین کہتے ہیں کہ اومیکرون ہو یا نہ ہو، اُن کے پاس یہ ماننے کے پختہ ثبوت ہیں کہ اب مکمل لاک ڈاون کے دن گزر چکے ہیں۔ چاہے ملازمین ہوں یا ایمپلائر یا پھر سرکاری ادارے ہوں، سب کو احساس ہوچکا ہے کہ زندگی اور ذریعہ معاش کے درمیان ایک صحیح توازن برقرار رکھنا ہوگا۔

      ملازمین کے پھر سے آفس لوٹنے کی مانگ زور پکڑرہی ہے اور کمپنیاں اپنی بھرتی اسکیم کو لے کر کافی پرامید بھی ہیں۔ مضبوط اقتصادی ترقی کے علاوہ کھپت کی سطح میں اضافہ اور ویکسینیشن کی کوریج میں اضافہ سے بھی اس میں تیزی آئی ہے۔

      کیا کہتے ہیں ماہرین؟
      SHRM انڈیا کے سینئر کنسلٹنٹ نتیہ وجئے کمار کہتے ہیں کہ اُنہیں پرائیوٹ ایکویٹی میں سرمایہ کاری ، انضمام اور حصول کے سودوں میں تیزی دیکھنے کو مل رہی ہے۔ ٹیکہ اندازی کی رفتار بڑھنے کے ساتھ ٹیلنٹ کی کمی کو دیکھتے ہوئے سال 2022 میں روزگار کا منظر نامہ روشن رہنے کی امید ہے۔ اسی کے ساتھ وہ کہتے ہیں کہ وبا کا برا دور گزر جانے کے بارے میں صرف وقت ہی بتاسکتا ہے لیکن بڑی کمپنیاں اور اسٹارٹ اپ نئی بھرتیوں کو لے کر پرتجسس ہیں۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: