ہوم » نیوز » تعلیم و روزگار

سول سروسیز امتحان میں کامیابی کے چند اہم ترین رہنمایانہ نکات: جاننا بیحد ضروری، ہوسکتا ہے آپ کا خواب مکمل

گزشتہ چند ایک برسوں میں ہوئے ان امتحانات اور ان میں کامیاب طلبا سے گفتگو اور جائزے کے بعد چندا یک اہم ترین نکات تیار کئے گئے ہیں جو ان امتحانات میں شریک طلبا کے لیے بڑے کام کے ہیں۔ اب سول سروسیز کا پریلمنری امتحان 4 اکتوبر 2020 کو ہونے والا ہے اس ضمن میں بھی یہ نکات طلبا کے لیے سود مند ہو سکیں گے۔ آئیے انہیں سلسلہ وار قابل عمل بناتے ہیں۔

  • Share this:
سول سروسیز امتحان میں کامیابی کے چند اہم ترین رہنمایانہ نکات: جاننا بیحد ضروری، ہوسکتا ہے آپ کا خواب مکمل
سول سروسیز

سول سروسیز  ( Civil Services) ہندوستان کی اہم ترین اور اعلیٰ ترین خدمات ہیں جن سے وابستہ ہونے کا خواب ہر ایک نوجوان کا ہوتا ہے۔ یہ خواب گریجویشن کے بعد مکمل ہو سکتا ہے اور اس کے لیے طلبا شروع ہی سے یعنی دسویں کے بعد سے ہی پکا ارادہ کرتے ہیں اور گریجویشن کی تکمیل تک یہ ان امتحانات کے بارے میں پڑھتے اور اپنے آپ کو تیار کر نے لگتے ہیں۔ یہ عام طور سے سنجیدہ طلبا کا رجحان اور تیاری کا ایک پلان ہوتا ہے۔ جب یہ گریجویٹ ہوجاتے ہیں تب پوری یکسوئی کے ساتھ اچھے سے اچھے ادارے میں اس کی کوچنگ حاصل کرتے ہیں اور پھر امتحان میں شریک ہوتے ہیں۔


جیسا کہ سب کو پتہ ہے کہ سول سروسیز یعنی IAS, IPS, IFS وغیرہ بننے کے تین امتحانی مرحلے ہوتے ہیں۔ پہلا پریلیمنری امتحان، دوسرا مین امتحان اور ان دونوں میں کامیابی کے بعد آخری مرحلہ انٹرویو کا ہوتا ہے۔ جو اس محاورے کے مطابق ہوتا ہے کہ ہاتھی نکل گیا دم اٹک گئی۔ یعنی تینوں مرحلے بہت ہی کلیدی ہوتے ہیں۔ کسی ایک مرحلے کو بھی ہم یوں ہی سمجھ کر تساہل نہیں برت سکتے۔ ہر ایک مرحلے کا ایک، آدھا اور پاؤ نمبر بھی آخری رینک سازی میں اہم رول ادا کرتا ہے۔ یوں کہا جائے تو بجا ہے کہ طالب علم کو ہر ایک مرحلے میں اپنی پوری سنجیدگی، یکسوئی اور مہارت ثابت کرنی ہے اور نمبرات کی شکل میں ثبت کر نی ہے۔


گزشتہ چند ایک برسوں میں ہوئے ان امتحانات اور ان میں کامیاب طلبا سے گفتگو اور جائزے کے بعد چندا یک اہم ترین نکات تیار کئے گئے ہیں جو ان امتحانات میں شریک طلبا کے لیے بڑے کام کے ہیں۔ اب سول سروسیز کا پریلمنری امتحان 4 اکتوبر 2020 کو ہونے والا ہے اس ضمن میں بھی یہ نکات طلبا کے لیے سود مند ہو سکیں گے۔ آئیے انہیں سلسلہ وار قابل عمل بناتے ہیں۔ ان نکات اور اس جائزے کے لیے ہم جامعہ ملیہ اسلامیہ ریذیڈنشیل کوچنگ اکیڈیمی کے دو طلبا (روشن جنھوں نے پریلمس میں 152 سکور کیا اور فرمان احمد خان جنھیں 2019 میں آئی اے ایس سروس ملی)کے شکر گزار ہیں۔


پرچہ حل کرنے سے متعلق

وہ کام جو کرنے ہیں۔۔۔

٭ ہمیشہ جرنل اسٹڈیز کے پرچے میں شامل تمام 100 سوالات پڑھنے کی کوشش کیجئے۔ اس سے فائدہ یہ ہوگا کہ جو آپ کو مشکل لگ رہا تھا، اس مطالعے کے بعد وہ سوال آسان لگنے لگے گا۔

منظق استعمال کیجئے۔ اپنی نالج کو موجودہ کرنٹ افیرس سے جوڑ کر سوال سمجھنے کی کوشش کیجئے۔

٭ ان قطعی الفاظ پر دھیان رکھئیے۔ صرف، ہمیشہ،تمام،تیزرفتار سے،مکمل،وغیرہ(only,always,all,drastically,completely,etc)

٭ تمام 4 آپشنس کا بہ غور جائزہ لیجئے،کیونکہ ان میں سے ایک جو موزوں ہو،آپ کو چننا ہے

اگر آپ کو لگے کہ پہلے پہلے سوال مشکل ہیں تو درمیانی سوالات جو آسان لگیں حل کر نا شروع کر دیں ٭

٭ عمومی اور ترجیحی طور پر کم از کم 80-95سوالات کی تحلیل مسابقتی کہلائی جاسکتی ہے

(passag/comprehension) ٭ سی۔سیاٹ کے متن / معانی والے حصے پر مکمل طور سے نشانات کے لیے انحصار مناسب نہ ہوگا۔یہ گذشتہ دو سال کے پرچہ سوالات کے جائز ہ کے بعد نتیجہ اخذ کیا جا سکا ہے۔ اس لیے جہاں تک ممکن ہو ٭ معمولی ریزننگ اور کوانٹی ٹیٹو اپٹی ٹیوڈ والے سوالات کو حل کرنے پر توجہ کی جائے

٭ پہلے راؤنڈمیں کسی بھی سوال پر دومنٹ سے زیادہ وقت صرف نہ کریں۔

وہ کام جو نہیں کرنے ہیں۔

٭ امتحان سے پہلے کم از کم 6گھنٹے نیند کونظرا نداز نہیں کرنا چاہیے۔اگر آپ کونیندنہ آئے تو آنکھیں بند کرکے رکھیں۔تاکہ امتحان کا وقت آپ چوکنا رہ سکیں۔

٭ امتحانوں کے وقفے کے بیچ زیادہ کھانے سے بچئیے۔
Published by: sana Naeem
First published: Oct 02, 2020 09:00 PM IST