உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مدھیہ پردیش میں حکومتیں بدلیں، مگر نہیں بدلی تو مدارس اساتذہ کی تقدیر! 5 سال سے نہیں ملی تنخواہیں

    حکومت کی عدم توجہی کے سبب مدارس اساتذہ پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنخواہیں سے محروم ہیں ۔مدارس اساتذہ نے اپنے مسائل کو لیکر جہاں اب آرپارکی لڑائی کا خاکہ تیار کرتے ہوئے ریاست گیرسطح پر تحریک چلانے کی تیاری کررہے ہیں۔

    حکومت کی عدم توجہی کے سبب مدارس اساتذہ پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنخواہیں سے محروم ہیں ۔مدارس اساتذہ نے اپنے مسائل کو لیکر جہاں اب آرپارکی لڑائی کا خاکہ تیار کرتے ہوئے ریاست گیرسطح پر تحریک چلانے کی تیاری کررہے ہیں۔

    حکومت کی عدم توجہی کے سبب مدارس اساتذہ پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنخواہیں سے محروم ہیں ۔مدارس اساتذہ نے اپنے مسائل کو لیکر جہاں اب آرپارکی لڑائی کا خاکہ تیار کرتے ہوئے ریاست گیرسطح پر تحریک چلانے کی تیاری کررہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
    مدھیہ پردیش میں گزشتہ پانچ سالوں میں تین سرکاریں بدل چکی ہیں لیکن ان  پانچ سالوں میں مدارس اساتذہ کے مسائل کی جانب کسی نے توجہ نہیں دی ۔ایم پی مدرسہ بورڈ میں دوہزار اٹھارہ سے نہ تو کوئی کمیٹی ہے اور نہ ہی کوئی چیرمین ۔حد تو یہ ہے کہ آج مدرسہ بورڈ کی یوم تاسیس پر بھی کسی پروگرام کا انعقاد کیاگیا ۔حکومت کی عدم توجہی کے سبب مدارس اساتذہ پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنخواہیں سے محروم ہیں ۔مدارس اساتذہ نے اپنے مسائل کو لیکر جہاں اب آرپارکی لڑائی کا خاکہ تیار کرتے ہوئے ریاست گیرسطح پر تحریک چلانے کی تیاری کررہے ہیں۔ وہیں دوسری جانب حکومت کا وہی ایک جواب  جلد حل ہونگے مدارس اساتذہ کے مسائل ۔
    مدھیہ پردیش ادھونک مدرسہ کلیان سنگھ کے صدر حافظ محمد جنید کہتے ہیں کہ ایک جانب اچھے دن اور سب کا ساتھ سب کا وکاس کی بات کی جارہی ہے مگر دوسری جانب مدارس اساتذہ کو پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنحواہیں ادا نہیں کی گئیں ہیں ۔ کورونا قہر میں حکومت خود بتائے کہ مدارس اساتذہ اپنے گھر کو کیسے چلائیں ۔حکومتوں نے مدرسہ بورڈ کواس قدر فراموش کردیا ہے کہ مدرسہ بورڈ کا یوم تاسیس تک آج فراموش کردیاگیا ہے ۔ ایم پی حکومت سے بات کرتے ہیں تو وہ کہتے ہیں کہ مرکز پہلے اپنا ساٹھ فیصد بجٹ جاری کرے تب ہم کریں گے اور مرکزی وزارت اقلتی بہبود سے بات کرتے ہیں تو وہ صوبائی حکومت کی جانب ہمیں ٹال دیتے ہیں ۔تنٓخواہ کے انتظار ہمارے کتنے اساتذہ اللہ کو پیارے ہوچکے ہیں ۔ہمارے صبر کا پیمانہ لبریز ہوچکا ہے اور اب آر پارکی لڑائی ہوگی۔

    وہیں مدرسہ دینیات کے صہیب قریشی کہتے ہیں کہ مدھیہ پردیش کے سترہ سو پچاسی مدارس کے اساتذہ کو پانچ سال سے زیادہ عرصہ سے تنخواہیں نہیں ملی ہیں ۔مدارس اہل خیر کے تعاون پر چل رہے ہیں ،گزرکس طرح ہورہا ہے اسے لفظوں میں بیان کرنے سے قاصر ہوں۔ہم نے عدالت سے بھی رجوع کیا ہے اور اب اس معاملے کو لیکر عدالت سے لیکر اسمبلی تک تحریک چلائی جائیگی۔
    وہیں مدھیہ شیوراج سنگھ کابینہ کے سینئر وزیر وشواس سارنگ کہتے ہیں کہ ہماری سرکارسبھی سے بات کرنے اور مسائل کو حل کرنے میں یقین رکھتی ہے ۔ کمل ناتھ حکومت نے مدارس اساتذہ کے مسائل کو حل کیا ہوتا تو یہ آج مدارس اساتذہ کے یہ دن نہیں ہوتے ۔ ہماری سرکار سبھی کے مسائل کو حل کرنے کے لئے سنجیدہ ہے اور جلد ہی مسائل حل ہونگے۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: