ہوم » نیوز » تعلیم و روزگار

مدھیہ پردیش میں کورونا قہر جاری ، 31 جولائی تک بند رہیں گے اسکول

مدھیہ پردیش میں کورونا مریضوں کی مجموعی تعداد بڑھ کر تیرہ ہزار چار سوچونسٹھ ہوگئی ہے ۔ کورونا سے اب تک جہاں پانچ سو انسٹھ لوگوں کی موت ہوچکی ہے ، وہیں صوبہ میں کورونا کی وبائی بیماری سے اب تک دس ہزار ایک سو تیئس مریض صحتیاب ہوچکے ہیں ۔

  • Share this:
مدھیہ پردیش میں کورونا قہر جاری ، 31 جولائی تک بند رہیں گے اسکول
علامتی تصویر

مدھیہ پردیش میں کورونا کا قہر جاری ہے ۔ صوبہ میں کورونا مریضوں کی مجموعی تعداد بڑھ کر تیرہ ہزار چار سوچونسٹھ ہوگئی ہے ۔ کورونا سے اب تک جہاں پانچ سو انسٹھ لوگوں کی موت ہوچکی ہے ، وہیں صوبہ میں کورونا کی وبائی بیماری سے اب تک دس ہزار  ایک سو تیئس مریض صحتیاب ہوچکے ہیں ۔ ان لاک ون میں بازار اور آفس کو مشروط بنیادوں پر کھول تو دیا گیا ہے ، لیکن کورونا کا قہر کم ہونےکا نام نہیں لے رہا ہے ۔


مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج  سنگھ کی ہدایت پر محکمہ تعلیم نے پہلے تیس جون تک صوبہ کے سرکاری اور پرائیویٹ اسکول کو بند رکھنے کا احکام جاری کیا تھا ۔ اسکول کھولنے سے قبل آج پھر کورونا معاملات کو لے کر جائزہ میٹنگ کا انعقاد کیا گیا ۔ میٹنگ کے بعد محکمہ تعلیم نے صوبہ کے تمام سرکاری اور پرائیویٹ اسکولوں کو کورونا کے قہرکے چلتے اکتیس جولائی تک بند رکھنے کا حکم جاری کردیا ہے ۔ اسی کے ساتھ محکمہ تعلیم نے آن لائن تعلیمی سلسلہ کو جاری رکھنے کی بھی ہدایت دی ہے۔


مدھیہ پردیش کے وزیر داخلہ و وزیر صحت ڈاکٹر نروتم مشرا کہتے ہیں کہ کورونا ریکوری ریٹ میں ہم تیزی سے آگے کی طرف بڑھ رہے ہیں ، لیکن ابھی حالات ایسے نہیں ہیں کہ اسکولوں کو کھولا جائے ۔ یکم جولائی سے کل کورونا کے نام سے پورے مدھیہ پردیش میں مہم چلائی جائے گی ۔ پندرہ دن کی مہم میں ہم پورے مدھیہ پردیش کے شہریوں کا ہیلتھ سروے کر لیں گے اور بہت جلد ایک صحتمند ماحول میں ہم تعلیمی سلسلے کو جاری رکھیں گے۔


وہیں مدھیہ پردیش کانگریس کے سیئر لیڈر و سابق وزیر قانون پی سی شرما کہتے ہیں کہ شیوراج سنگھ سرکار کے دوہرے معیار کو دیکھ کر بڑا دکھ ہوتا ہے ۔ ایک طرف کورونا ریکوری ریٹ کے بڑھنے کی بات کی جارہی ہے تو وہیں دوسرے جانب اسکولوں کو کھولنے کی ہمت نہیں ہو رہی ہے ۔ جب اسکول نہیں کھولے جا رہے ہیں تو طلبہ سے اسکول والے فیس کس بنیاد پر وصول کر رہے ہیں ، اس کا سرکارکوئی جواب نہیں دے رہی ہے ۔ ہماری سرکار سے مانگ ہے کہ جب کورونا لاک ڈاؤن میں اسکولوں کی پڑھائی نہیں ہوئی ہے ، تو اس کی فیس نہ لی جائے اور جو اسکول مینجمنٹ من مانی کر رہے ہیں ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔

مدھیہ پردیش بی جے پی کے نائب صدر رامیشور شرما نے کورونا قہر میں صوبہ کے سرکاری اور پرائیویٹ اسکولوں کو اکتیس جولائی تک بند کرنے کے فیصلہ کو سرکار کا دانشمندانہ فیصلہ قرار دیا ہے۔ رامیشور شرما کہتے ہیں کہ ہم اسکولی بچوں کو لیباریٹری نہیں بنانا چاہتے ہیں ۔ یہ کمل ناتھ سرکار تھی ، جس نے سب کچھ جانتے ہوئے کورونا کے بیچ میں امتحان کو جاری رکھا تھا ۔ سرکار کی سبھی پہلوؤں پر گہری نظر ہے ۔ اسکول و کالج بھی کھلیں اور طلبہ کو صحتمند ماحول میں تعلیم دی جائے ، یہ سرکار کا عہد ہے۔

وہیں مدھیہ پردیش کانگریس کے ترجمان منور کوثر سرکار پر کورونا سے ہونے والی اموات اور مریضوں کی صحیح تعداد کو چھپانے کا الزام لگاتے ہیں ۔ سرکار نے اسکولوں کو اکتیس جولائی تک بند کرنے کا جو فیصلہ کیا ہے وہ ادھورا ہے۔ سرکار کو چاہئے کہ اس کے ساتھ اسکولوں کی فیس طلبہ سے نہ لی جائے ۔ بلکہ اسکولوں کے ہونے والے نقصان کی بھرپائی سرکار کی طرف سے کی جائے ۔ منور کوثر کہتے ہیں کہ سرکاری احکام میں آن لائن پڑھائی کی بات کی گئی ہے ۔ جب شہروں میں ٹھیک سے انٹرنیٹ نہیں چلتے ہیں اور بجلی ہمہ وقت نہیں رہتی ہے ، تو گاؤں کے بچے آن لائن تعلیم کیسے حاصل کر سکتے ہیں ، اس پر بھی سرکار کو غور کرنا چاہئے اور دوسرے متبادل نظام تعلیم کا انتظام کرنا چاہئے ، جس سے شہر اور گاؤں کے طلبہ ایک ساتھ استفادہ کر سکیں ۔
First published: Jun 29, 2020 10:02 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading