உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Cumin farming:پورے سال رہتی ہے اس پروڈکٹ کی مانگ، شروع کریں اس کا بزنس، 3 مہینے میں کمائیں 2 لاکھ روپے

    کچھ نوکریاں ایسی بھی ہیں جن میں زیادہ سرمایہ کاری کی ضرورت نہیں ہوتی اور کوئی بھی شخص آسانی سے کر سکتا ہے۔

    کچھ نوکریاں ایسی بھی ہیں جن میں زیادہ سرمایہ کاری کی ضرورت نہیں ہوتی اور کوئی بھی شخص آسانی سے کر سکتا ہے۔

    Cumin farming: اگر زیرے کی قیمت 100 روپے فی کلو کے حساب سے لی جائے تو فی ہیکٹر کمائی 80000 روپے ہے۔ اس طرح فی ہیکٹر خالص منافع 50000 روپے ہے۔ ایسے میں اگر 4 ہیکٹر میں بھی زیرہ کاشت کیا جائے تو تقریباً 3 ماہ میں 200000 روپے کی بچت ہو سکتی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:Business idea:آج کل نوجوانوں کا سیلف ایمپلائمنٹ کی طرف رجحان بڑھ رہا ہے، بہت سے پڑھے لکھے لوگوں نے کورونا کے دور میں زراعت کو بطور روزگار منتخب کیا ہے۔ آج کاشتکاری میں بھی پیسے کمانے(Earn money from farming) کے بہت امکانات ہیں۔ بہت سے لوگ اس میں اچھی خاصی کمائی(Earn Money) بھی کر رہے ہیں۔ اگر آپ بھی کاشتکاری کے ذریعے اچھا پیسہ کمانا چاہتے ہیں تو آپ کو زیرے کی کاشت(Cumin farming) کرنی چاہیے۔

      زیرہ ایک ایسی ہی فصل ہے، جو مصالحوں میں استعمال ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ دواؤں کی خصوصیات کی وجہ سے اس سے ادویات بھی بنائی جاتی ہیں۔ اس لیے اس کی مانگ سال بھر رہتی ہے اور اس سے اچھی خاصی کمائی ہوتی ہے۔ اگر زیرہ کی کاشت کی جائے اور اس کی مارکیٹنگ صحیح طریقے سے کی جائے تو یہ کاروبار آپ کے لئے کافی منافع بخش ہوسکتا ہے۔

      موسم اور مٹی
      زیرہ کی کاشت کے لیے چکنی مٹی موزوں ہے۔ یہ سردیوں کے موسم میں بویا جاتا ہے۔ زیرہ کا پودا زیادہ گرمی برداشت نہیں کر سکتا۔ زیرہ کی بوائی کے وقت درجہ حرارت 24 سے 28 ڈگری سینٹی گریڈ اور پودے کی نشوونما کے وقت 20 سے 22 ڈگری سینٹی گریڈ ہونا چاہئے۔ بوائی نومبر کے تیسرے ہفتے سے دسمبر کے پہلے ہفتے تک کی جاناچاہیے۔

      کھیت کی تیاری
      زیرہ کی بوائی سے پہلے کھیت میں گہرا ہل چلانا چاہیے۔ اس کے بعد روٹاویٹر چلا کر مٹی کو بھربھرا کردیں۔ اگر روٹاویٹر نہ ہو تو دو تین ہل چلانے کے بعد سہاگہ (پاٹا) لگا کر زمین کو برابر کرنا چاہیے۔ زیرہ کو مناسب نمی میں بویا جائے۔ بوائی کے لیے بہتر اقسام اور بیج کا استعمال کریں۔

      بہترین قسموں کا کریں انتخاب
      ہندوستان میں مختلف ریاستوں میں مختلف اقسام کی بوائی کی جاتی ہے۔ لہذا، آپ مختلف قسم کے انتخاب کے لیے اپنی ریاست کے محکمہ زراعت یا زرعی یونیورسٹی سے رابطہ کر سکتے ہیں۔ RZ 19 اور 209، RZ 223 اور GC 1-2-3 کی اقسام اچھی سمجھی جاتی ہیں۔ ان اقسام کے بیج 120-125 دنوں میں پک جاتے ہیں۔ ان اقسام کی اوسط پیداوار 510 سے 530 کلوگرام فی ہیکٹر ہے۔

      بیج اور دوری
      ایک ہیکٹر میں 12 کلوگرام بیچ(Cumin seed) زیرہ کافی ہوتا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ آپ کو ایک ایکڑ میں پانچ کلو گرام بیج بونا ہوگا۔ خیال رہے کہ بیج 1 سے 1.5 سینٹی میٹر دور رکھ کر بویا جائے۔ اس سے زیادہ کی گہرائی پر بیج کا بونا، بیج کے اُگنے کو کم کردیتا ہے۔ ہمیشہ لائنوں میں بیج بوئے۔ بیج چھڑک کر نہ بویں۔ لائن سے لائن کا فاصلہ 25 سینٹی میٹر رکھیں۔

      کتنی ہوگی کمائی؟
      اب اگر پیداوار اور اس سے کمائی کی بات کی جائے تو زیرہ کی اوسط پیداوار 7-8 کوئنٹل بیج فی ہیکٹر بنتی ہے۔ زیرہ کی کاشت پر تقریباً 30,000 روپے فی ہیکٹر خرچ ہوتے ہیں۔ اگر زیرے کی قیمت 100 روپے فی کلو کے حساب سے لی جائے تو فی ہیکٹر کمائی 80000 روپے ہے۔ اس طرح فی ہیکٹر خالص منافع 50000 روپے ہے۔ ایسے میں اگر 4 ہیکٹر میں بھی زیرہ کاشت کیا جائے تو تقریباً 3 ماہ میں 200000 روپے کی بچت ہو سکتی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: