உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    India First Again: برطانیہ میں تعلیم اور ملازت کیلئے ویزا حاصل کرنے میں ہندوستانی سب سے آگے

    ایلس نے اپنی پچھلی درخواست کا بھی اعادہ کیا جس میں طلبا سے کہا گیا کہ وہ جلد از جلد ویزوں کے لیے درخواست دیں

    ایلس نے اپنی پچھلی درخواست کا بھی اعادہ کیا جس میں طلبا سے کہا گیا کہ وہ جلد از جلد ویزوں کے لیے درخواست دیں

    برطانوی ہائی کمیشن کی پریس ریلیز میں بتایا گیا کہ ہندوستان نے چین کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ چین کے شہریوں سے زیادہ ہندوستانی طلبہ برادری کی ایسی بڑی تعداد ہے، جنھیں برطانیہ میں اسپانسرڈ اسٹڈی ویزا جاری کیا جا رہا ہے۔ UK Study & Work Visas

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Internationalu, Indiaukukuk
    • Share this:
      UK Study & Work Visas: ہندوستانیوں شہریوں کی بیرون ممالک میں تعلیم اور ملازمت کے لیے خلیجی ممالک، آسٹریلیا کے علاوہ برطانیہ ایک اہم ترجیح رہا ہے۔ جمعرات کو جاری ہونے والے برطانوی ہائی کمیشن کے تحت امیگریشن کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ جون 2022 کو ختم ہونے والے تعلیمی سال میں 118,000 ہندوستانی طلبہ نے اسٹوڈنٹ ویزا (student visa) حاصل کیا۔ یہ پچھلے سال کے مقابلے میں 89 فیصد اضافہ ہے۔ یہ تعداد چین کے شہریوں سے بھی زیادہ ہے۔

      برطانوی ہائی کمیشن کی پریس ریلیز میں بتایا گیا کہ ہندوستان نے چین کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ چین کے شہریوں سے زیادہ ہندوستانی طلبہ برادری کی ایسی بڑی تعداد ہے، جنھیں برطانیہ میں اسپانسرڈ اسٹڈی ویزا جاری کیا جا رہا ہے اور وہ وہاں اپنے بہتر مستقل کے ساتھ ساتھ مستقل رہائش کے لیے بھی کوشاں ہے۔ پریس ریلیز میں اس بات پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے کہ برطانیہ مسافروں اور تعطیلات کے لیے بھی ایک مقبول مقام ہے۔

      جون 2022 کو ختم ہونے والے سال میں 258,000 سے زیادہ ہندوستانیوں نے وزیٹر ویزا حاصل کیے ہیں۔ یہ پچھلے سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 630 فیصد اضافہ تھا کیونکہ بیشتر علاقوں میں اب بھی عالمی وبا کورونا وائرس (CoVID-19) پابندیاں ابھی بھی برقرار ہیں۔ جون 2022 کو ختم ہونے والے سال میں تقریباً 103,000 ہندوستانیوں نے بھی کام کے ویزے حاصل کیے۔ جن میں ہنر مند اور وقتی طور پر کنٹراکٹ کی بنیاد پر کام کرنے بھی شامل ہیں۔ ۔ پچھلے سال کی اسی مدت کے مقابلے میں یہ 148 فیصد اضافہ درج کیا گیا ہے۔

      ہنرمند ورکر ویزا حاصل کرنے والے ہندوستانیوں کو سرفہرست قومیت کا درجہ حاصل ہے۔ عالمی سطح پر دیئے گئے تمام ہنر مند کام کے ویزوں میں ہندوستانیوں کا 46 فیصد حصہ ہے۔ اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ برطانیہ میں تعلیم اور ملازمت کی ہندوستانیوں کی نظر میں کتنی اہمیت ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      برطانیہ کی طرف سے دیے گئے تمام وزیٹر ویزوں میں ہندوستانیوں کا سب سے زیادہ تناسب 28 فیصد تھا۔ ہندوستانیوں کی جانب سے کام کے لیے بیرون ممالک میں رہنے والوں تارکین وطن کی یہ بڑی تعداد ہے، جو کہ ورک ویزا پر برطانیہ نقل مکانی کرکے اپنے ملکوں میں آمدنی کو منتقل کرتے ہیں اور اس پر اچھا خاصی ٹیکس بھی لگتا ہے۔ جس کی قومی آمدنی میں حصہ داری ہوتی ہے۔

       
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: