உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    خوشخبری! اس سال 10 فیصدی سے زیادہ بڑھے گی سیلری، جانیے کیا کہہ رہی ہیں کمپنیاں

    کورونا کے دور میں پچھلے دو سال ملازمین کے لیے بہت مشکل تھے۔ ملازمین کو تنخواہ میں کٹوتی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

    کورونا کے دور میں پچھلے دو سال ملازمین کے لیے بہت مشکل تھے۔ ملازمین کو تنخواہ میں کٹوتی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

    سروے میں شامل 786 کمپنیوں میں سے 60 فیصد نے کہا ہے کہ وہ اپنے ملازمین کو وائی فائی کوریج الاؤنس فراہم کریں گی۔ صرف 10 فیصد کمپنیوں نے سفری الاؤنس کو کم یا منسوخ کرنے کی بات کہی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:کورونا دور میں پہلے ہی تنخواہ کٹوتی اور جاب جانے جیسے مسائل سے نبرد آزما نوکری پیشہ ملازمین کے لئے سال 2022 بڑی خوشخبری لایا ہے۔ اس سال کمپنیاں 10 فیصد سے زیادہ تنخواہ بڑھانے کی تیاری میں ہیں۔ ایسا ہوتا ہے تو سیلری میں ہونے والا اضافہ کورونا دور سے پہلے کی سطح پر پہنچ جائے گا۔

      کارن فیری انڈیا (Korn Ferry India)نے اپنی سالانہ سروے رپورٹ میں کہا ہے کہ سال 2022 میں اوسط تنخواہ اضافہ 9.4 فیصدی ہونے کا امکان ہے، جب کہ سال 2021 میں اوسطاً اضافہ 8.4 فیصدی تھا۔ اتنا ہی نہیں کورونا دور سے پہلے 2019 میں اوسطاً 9.25 فیصدی سیلری بڑھی تھی۔ سروے میں زیادہ تر کاروباریوں نے کہا ہے کہ اس سال بزنس پر وبا کا زیادہ اثر نہیں نظر آئے گا۔ اس سے کمپنیوں کو اپنا منافع بڑھانے میں بھی مدد ملے گی۔

      اس لئے بڑھی تنخواہ میں اضافے کی امید
      گزشتہ چند سہ ماہیوں سے کمپنیاں مضبوط منافع بخش نتائج کا اعلان کر رہی ہیں۔ تنخواہ میں اضافہ زیادہ تر کاروبار کی کارکردگی، انڈسٹری میٹرکس (industry metrics) اور بینچ مارکنگ کے رجحانات پر منحصر ہوگا۔ اس کے علاوہ کمپنیاں بھی ٹیلنٹ کو اپنے ساتھ منسلک رکھنے کے لیے تنخواہ میں بڑا اضافہ کرنا چاہتی ہیں۔ سروے سے پتا چلا ہے کہ 40 فیصد ملازمین سرگرمی سے نئی ملازمت کی تلاش میں ہیں۔

      آئی ٹی سیکٹر سب سے زیادہ بڑھائے گا سیلری
      ٹیک کمپنیوں کے ملازمین کی تنخواہوں میں اس سال 10.5 فیصد اور کنزیومر سیکٹر میں 10.1 فیصد اضافہ متوقع ہے۔ اس کے بعد لائف سائنس میں تنخواہ 9.5 فیصد، سروس، آٹو اور کیمیکل کمپنیوں میں 9 فیصد تک بڑھ سکتی ہے۔ سروے میں شامل 786 کمپنیوں میں سے 60 فیصد نے کہا ہے کہ وہ اپنے ملازمین کو وائی فائی کوریج الاؤنس فراہم کریں گی۔ صرف 10 فیصد کمپنیوں نے سفری الاؤنس کو کم یا منسوخ کرنے کی بات کہی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: