உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دسویں اور بارہویں بورڈ کے نتائج سے غیر مطمئن طلبا کیلئے خصوصی امتحان کا کیاگیا انعقاد

    Youtube Video

    خصوصی امتحان کا انعقاد ان طلبا کے لئے کیاگیا ہے جو اپنے امتحان نتائج سے غیر مطمئن ہیں ۔ دسویں بورڈ کے خصوصی امتحان میں نوہزار طلبا جبکہ بارہویں بورڈ کے خصوصی امتحان میں ساڑھے پانچ ہزار طلبا شرکت کر رہے ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      مدھیہ پردیش میں دسویں اور بارہویں بورڈ طلبا کے لئے آج سے خصوصی امتحان 10th & 12th Classes examination کا انعقاد شروع ہوگیا ہے ۔محکمہ اسکول تعلیم کی جانب سے ریاست کے سبھی اضلاع میں خصوصی امتحان کے لئے مراکز بنائے گئے ہیں۔ خصوصی امتحان کا انعقاد ان طلبا کے لئے کیاگیا ہے جو اپنے امتحان نتائج سے غیر مطمئن ہیں ۔ دسویں بورڈ کے خصوصی امتحان میں نوہزار طلبا جبکہ بارہویں بورڈ کے خصوصی امتحان میں ساڑھے پانچ ہزار طلبا شرکت کر رہے ہیں۔

      دسویں بورڈ خصوصی امتحان special annual examination کا انعقاد پندرہ ستمبر تک جاری رہے گا جبکہ بارہویں بورڈ کا خصوصی امتحان اکتیس ستمبر تک جاری رہے گا۔ ریاست کے سبھی مراکز پر کووڈ گائیڈ لائن کے تحت کیاگیا ہے۔

      واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں کورونا قہر کے سبب شیوراج سنگھ حکومت نے دسویں بورڈ کے امتحان کو منسوخ کرتے ہوئے انٹرنل اسسمنٹ اور پری بورڈ کے نتائج کی بنیاد پر ہائی اسکول کا نتیجہ جاری کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ حالانکہ حکومت کی جانب سے طلبا کو ایک خاص موقع دینے کا اعلان کیا گیا ہے وہ طلبا جو بورڈ نتائج سے مطمئن نہیں ہیں یا وہ اپنی رینکنگ میں سدھار کرنا چاہتے ہیں۔ وہ بورڈ کے ذریعہ پچیس ستمبر سے منعقد ہونے والے خصوصی امتحان میں شرکت کر سکتےہیں ۔ دوہزار اٹھارہ میں ایم پی دسویں بورڈ کا نتیجہ ۶۶ فیصد تھا جبکہ دوہزار انیس دسویں بورڈ کا نتیجہ ایکسٹھ اعشاریہ بتیس فیصد رہااور دوہزار بیس میں دسویں بورڈ کے امتحان میں ترقی دیکھنے کو ملی تھی اور دسویں بورڈ کا نتیجہ باسٹھ اعشاریہ چوراسی فیصد درج کیاگیا تھا۔ امسال ایم پی بورڈ نے سبھی طلبا کو پاس کیا ہے۔

      وہیں مدھیہ پردیش میں شیوراج سنگھ حکومت کے ذریعہ میڈیکل کالج کے نصاب میں ہیڈگوار اور دین دیال اپادھیائے کی سوانح شامل کرنے کے معاملے میں بی جے پی اور کانگریس کے درمیان سیاست اپنے عروج پر پہنچ گئی ہے ۔ بی جے پی قیادت میڈیکل طلبا کے نصاب میں ممتاز مجاہدین آزادی اورعظیم شخصیات کی سوانح عمری کو پڑھانے کو وقت کی ضرورت سے تعبیر کر رہی ہے۔ وہیں کانگریس نے حکومت کے اقدام کو بی جے پی کے بھگوا ایجنڈے سے تعبیر کرتے ہوئے اسےسرکار نہیں بلکہ سرکس چلانے سے تعبیر کیا ہے ۔

       
      Published by:Sana Naeem
      First published: