உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ممبئی کے مسلم تعلیمی ادارہ کی جانب سے افغانستان کے بچوں کے لئے آن لائن تعلیم کا انتظام

    ممبئی کے ایک معروف مسلم تعلیمی ادارہ نے افغانستان کے بچوں اور خواتین کو آن لائن تعلیم دینے کی پیشکش کی ہے ۔

    ممبئی کے ایک معروف مسلم تعلیمی ادارہ نے افغانستان کے بچوں اور خواتین کو آن لائن تعلیم دینے کی پیشکش کی ہے ۔

    ممبئی کے ایک معروف مسلم تعلیمی ادارہ نے افغانستان کے بچوں اور خواتین کو آن لائن تعلیم دینے کی پیشکش کی ہے ۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      کورونا وبا کے دوران ن لائن تعلیم و تربیت سے لےکر ہر شعبہ جات میں آن لائن چیزوں کا حصول عام ہوچکا ہے۔  ممبئی کے ایک معروف مسلم تعلیمی ادارہ نے افغانستان کے بچوں اور خواتین کو آن لائن تعلیم دینے کی پیشکش کی ہے ۔ جنگ زدہ متاثرہ ملک افغانستان میں اب جنگ بندی اور حالات معمولات پر واپس آنے کے بعد افغانستان کے اطفال اور خواتین کو علم کی شمع سے روشن کرے گا رضوی ایجوکیشن ٹرسٹ نےباضابطہ طور پر تعلیم سے محروم افغانستان کے بچوں اور خواتین کو تعلیمی میدان میں مدد کرنےکے ساتھ ہندوستان سے آن لائن تعلیم دینے کا فیصلہ کیا ہے جدید طرز سے یہ تعلیمی عمل جلد ہی شروع ہو گا اس میں ماہر اساتذ ہ اور رضوی ایجوکیشن کا عملہ افغانستا ن کے بچوں کو تعلیمی زیور سے آراستہ کرے گا تاکہ کوئی بھی تعلیم سے محروم نہ ہو افغانستان کی قونصلیٹ ذکیہ کی درخواست پر رضوی ٹرسٹ نے یہ ذمہ داری قبول کی ہے اور ہندوستان اور افغانستان کے دوستانہ تعلقات کو مزید استوار کرنے کی جانب یہ پہلا قدم ہو گا۔

      رضوی ایجوکیش ٹرسٹ کی سربراہ روبینہ اختر حسن رضوی نے بتایا کہ افغانستان اور ہندوستان میں دوستانہ تعلقات ہیں اس کے ساتھ ہی ایک انسانیت کا رشتہ بھی ہے۔ افغانستان کی قونصلیٹ محترمہ ذکیہ سے جب ہماری ملاقات ہوئی تو انہوں نے افغانستان کے حالات کا تذکرہ کرتے ہوئے افغانی عوام کے لئے تعاون کی درخواست کی چونکہ رضوی ایجوکیشن ٹرسٹ تعلیمی میدان میں کافی مقبول ہے۔ صرف ہی نہیں بلکہ ڈاکٹر اختر حسن رضوی کا یہ ادارہ یوپی الہ آباد میں بھی تعلیمی خدمات کی ساتھ یہاں بھی علم کی شمع سے ملک کو منور و روشن کر رہا ہے۔ اس لئے ہم نے افغانستان کے بچوں اور عورتوں کو زیور تعلیم سے آراستہ کرنےکا فیصلہ کیا ہے۔

      یہ تعلیمی سفر آن لائن ہو گا اس میں رضوی ایجوکیشن کی جانب سے سند بھی دی جائے گی اس تعلیمی سفر کے لئے ماہر اساتذہ اور ماہر تعلیم کی بھی خدمات حاصل کی جائے گی تاکہ دونوں ممالک میں مزید مستحکم دوستانہ تعلقات استوار ہے۔

      ذکیہ رضوی نے کہا کہ ڈاکٹر اختر حسن کی اجازت کے بعد تعلیمی ادارے نے یہ فیصلہ لیا نیز افغان قونصل کے اصرار پر دلی میں افغانستان مہاجرین کو بھی راشن کٹ کی تقسیم عمل میں لائی گئی۔ یہ خدمات انسانیت کے لئے کی گئی ہے کیونکہ خدمت خلق ہی انسانیت کا ایک حصہ ہے اس سے ہی رب کی خوشنودی حاصل ہوتی ہے۔
      روبینہ اختر حسن رضوی کی خدمات کے اعتراف میں افغانستان قونصلیٹ نے انہیں سند بھی عطا کی ہے۔ قونصلیٹ نے بذات خود روبینہ رضوی کی رہایش گاہ پر جاکر انہیں عزت بخشی اور افغانی عوام کی خدمت کے لئے اظہار تشکر کیا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: