ہوم » نیوز » تعلیم و روزگار

رانچی: جھارکھنڈ کے مدرسہ و سنسکرت اساتذہ نے  محکمہ تعلیم پر امتیازی  سلوک کا لگایا الزام ، دی احتجاج کی وارننگ

آل جھارکھنڈ مدرسہ ٹیچرس ایسوسی ایشن کی ایک اہم نشست مدرسہ اسلامیہ رانچی میں ایسوسی ایشن کے صدر سید فضل الہدیٰ کی زیر صدارت ہوئی۔ نشست میں ریاست کے 186 مدرسوں اور سنسکرت اسکولوں کے اساتذہ نے حصہ لیا۔

  • Share this:
رانچی: جھارکھنڈ کے مدرسہ و سنسکرت اساتذہ نے  محکمہ تعلیم پر امتیازی  سلوک کا لگایا الزام ، دی احتجاج کی وارننگ
رانچی۔

رانچی: آل جھارکھنڈ مدرسہ ٹیچرس ایسوسی ایشن کی ایک اہم نشست مدرسہ اسلامیہ رانچی میں ایسوسی ایشن کے صدر سید فضل الہدیٰ کی زیر صدارت ہوئی۔ نشست میں ریاست کے 186 مدرسوں اور سنسکرت اسکولوں کے اساتذہ نے حصہ لیا۔ نشست میں مدرسوں اور سنسکرت اسکولوں کے اساتذہ نے مدرسوں اور سنسکرت اسکولوں کے تئیں محکمہ تعلیم کے رویہ کے خلاف سخت ناراضگی کا اظہار کیا۔ نشست سے خطاب کرتے ہوئے ایسوسی ایشن کے جنرل سکریٹری حامد غازی نے کہا کہ حکومت کے ذریعہ بقایہ تنخواہوں کی ادائیگی کے احکامات جاری کرنے کے باوجود محکمہ تعلیم میں بیٹھے افسران مدرسوں کے اساتذہ کے بقایہ کی ادائیگی نہیں کر رہے ہیں ، جو سراسر ظلم ہے۔ محکمہ تعلیم میں بیٹھے عہدیدار دوہری پالیسی اپنائے ہوئے ہیں اور مدرسوں کے ساتھ سوتیلا سلوک کررہے ہیں۔


انہوں نے کہا کہ مدرسہ اساتذہ گذشتہ تین سالوں سے تنخواہوں سے محروم ہیں ، بھوک مری کے شکار ہیں اور محکمہ تعلیم کے افسران بار بار مدرسوں کی جانچ کے احکامات جاری کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جب تک اساتذہ و ملازمین کے سبھی طرح کے بقایا تنخواہ کی ادائیگی نہیں کی جاتی اس وقت تک ہم مدرسوں کی کسی بھی قسم کی جانچ نہیں کرائیں گے۔ مدرسوں کا گذشتہ تین سالوں میں کئی بار جانچ کی گئی ہے ، پھر مزید تفتیش کی ضرورت کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے تمام بقایا کی ادائیگی کی جائیں اور جو مدرسے معیار کو پورا نہیں کرتے ہین انہیں پورا کرنے کے لئے ایک سال کا وقت دیا جائے۔حامد غازی نے کہا کہ اگر محکمہ تعلیم کے افسران مدرسوں کے تئیں مثبت رویہ نہیں اپناتے نہیں ہیں تو ہم لوگ سڑکوں پر اترنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

نشست میں ایسوسی ایشن کے جنرل سکریٹری حامد غازی ، صدر سید فضل الہدیٰ ، نائب صدر مولانا رضوان قاسمی ، ترجمان و سکریٹری نشرواشاعت مولانا حماد قاسمی ، سرپرست شرف الدین رشیدی ، مولانا ریاض اسعد ، مسلم حسین ، ظفر عادل ، مولانا شجاع الحق، جتیندر پانڈے ، سریکانت پانڈے سمیت جھارکھنڈ کے تمام اضلاع کےمدرسوں کے پرنسپل اور ایسو سی ایشن کے ذمہ داران نے شرکت کی۔


مدرسوں کی بار بار جانچ کی مخالفت میٹنگ میں موجود ایسوسی ایشن کے عہدیداروں نے مدرسوں کی بار بار جانچ کی مخالفت کی۔ کہا ہے کہ پچھلے تین سالوں میں مدرسوں کی کئی سطحوں پر جانچ کی گئی اور ہم نے جانچ میں مدد بھی کی۔ لیکن اب ہم بھوکے رہ کر کسی بھی طرح کی تحقیقات میں تعاون نہیں کریں گے ۔
محکمہ کے انڈر سکریٹری اوپیندر سنہا پر سنگین الزام عائد کرتے ہوئے نشست میں موجود مختلف اضلاع کے اساتذہ نے کہا کہ اوپیندر سنہا کا رویہ مدرسوں کے تئیں مثبت نہیں ہے۔ وہ مدارس کو بند کرانے پر تلے ہوئے ہیں۔ اساتذہ نے بتایا کہ انڈر سکریٹری اپیندر سنہا مدرسوں کی صرف منفی رپورٹ حکومت کو پیش کرتے ہیں اور انہیں گمراہ کرتے ہیں۔ اساتذہ کے مطابق اپیندر سنہا نے ان سے ملنے گئے اساتذہ کے سامنے کہا ہے کہ "میں جب تک محکمہ میں رہوں گا اس وقت تک مدرسوں کو آگے نہیں بڑھنے دوں گا"۔ اس بیان سے اساتذہ میں سخت ناراضگی ہے۔
Published by: Sana Naeem
First published: Jan 29, 2021 05:02 PM IST