உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Schools Reopen: ایک تہائی بچے زبان ہی بھول گئے! پڑھنے کی مہارت میں ہوئی کمی، کورونا کے بچوں کی تعلیم پر اثرات

    Youtube Video

    پانچویں جماعت کے جملہ طلبا میں سے تقریبا ایک تھائی طلبا دوسری جماعت کی کتاب روانی سے پڑھنے سے قاصر ہیں۔ وہ حروف تہجی ، اعداد ، بنیادی ریاضی کو یاد کرنے میں ناکام رہتے ہیں

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Share this:
      سومیا کلاسا

      ابھی چند ہفتے ہوئے ہیں کہ باقاعدہ اسکول کھل گئے ہیں اور اساتذہ ، والدین اور تعلیمی ماہرین پہلے ہی بچوں کی تعلیم میں بہت بڑا خلا محسوس کر رہے ہیں۔ چائلڈ رائٹس ٹرسٹ کے ڈائریکٹر ناگسمہا جی راؤ نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ’’زیادہ تر بچے اپنی مادری زبان میں واپس چلے گئے ہیں۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ بچے کی مادری زبان کیا ہے ، وہ سب سکول میں ایک عام زبان بولتے تھے۔ کبھی کبھی ایک سے زیادہ زبانیں بھی بولتے تھے۔ لیکن ان کے خاندانوں کے ساتھ رہنے سے وہ عام مواصلات سے بہت دور ہوگئے ہیں۔ یہ واضح طور پر چھوٹے بچوں میں دیکھا جاتا ہے جنہوں نے اپنا زیادہ تر وقت اپنے گھر کے اندر گزارا‘‘۔

      پانچویں جماعت کے جملہ طلبا میں سے تقریبا 1/3 طلبا دوسری جماعت کی کتاب روانی سے پڑھنے سے قاصر ہیں۔ وہ حروف تہجی ، اعداد ، بنیادی ریاضی کو یاد کرنے میں ناکام رہتے ہیں جیسے اضافہ اور گھٹاؤ اور ضرب میں انھیں مشکلات پیش آرہی ہیں اور وہ اپنے دوستوں سے آسانی سے بات نہیں کر سکتے۔

      فائل فوٹو۔(تصویر:نیوز18اردو)۔
      فائل فوٹو۔(تصویر:نیوز18اردو)۔


      بچوں نے سادہ جملے لکھنے کا اعتماد بھی کھو دیا ہے۔ ہم نے اپنے طلبا کے گھروں کا دورہ کیا اور انہیں اسکول آنے کی ترغیب دی۔ وہ بھی خوشی سے لوٹ آئے۔ لیکن پنسل تھامتے ہی ان کی مسکراہٹ دھندلا گئی اور کہا گیا کہ وہ گھر میں ان تمام دنوں میں کیا کریں۔ ان کے دماغ میں بہت ساری چیزیں ہیں ، لیکن انہیں کاغذ پر رکھنا بہت مشکل ہو رہا ہے۔ لیکن یہ مکمل طور پر ایک مختلف کھیل ہے۔ انہوں نے اپنی بنیادی مواصلاتی مہارت کھو دی ہے۔

      دیہی علاقوں میں یہ مسئلہ بہت عام ہے کیونکہ ان بچوں کے لیے آن لائن کلاسز اور سماجی ملاقاتیں دستیاب نہیں تھیں۔ ناگاسیما جی راؤ یہاں ایک اور بات نوٹ کرتے ہیں کہ دوستوں کے ساتھ کھیلتے ہوئے بچے بولتے ہیں۔ یہ مواصلات کی ایک بہت بڑی مشق ہے۔ کورونا کے دوران یہ نہیں ہوپایا ہے کیونکہ گروپ گیمز طویل عرصے تک نہیں کھیلے گئے تھے۔

      چائلڈ رائٹس ٹرسٹ نے رضاکاروں کی نشاندہی کی ہے اور انہیں تربیت دی ہے کہ دیہی بچوں میں بچوں کی مدد کریں۔ انہوں نے صرف بچوں کو ایک گروپ میں بٹھانے اور کہانیاں سنانے سے اپنا کام شروع کیا ہے۔ مسٹر راؤ کا کہنا ہے کہ ایک بار جب بچہ اعتماد سے بولتا ہے تو آدھا کھیل جیت جاتا ہے۔

      ماہرین کا دعویٰ ہے کہ سیکھنے کے اہم عوامل جیسے فوکس یہاں تک کہ کسی جگہ گھنٹوں بیٹھنے یا کسی کے کہنے کے بارے میں سوچنے کے قابل ہونا بچوں میں خاص طور پر 10 تا 12 سال سے کم عمر کے بچوں میں بہت زیادہ کمی واقع ہوئی ہے۔

      وہ پرانے دوستوں سے دوستی کرتے ہوئے بالکل نئی زندگی کا آغاز کر رہے ہیں، وہ سیکھ رہے ہیں جو انہوں نے دو سال پہلے حاصل کیا تھا ، دوستوں کے ساتھ چھوٹی چھوٹی لڑائیاں ہو رہی تھیں۔ کیرتھنا شرما کا کہنا ہے کہ یہ کتنی دور تک بچوں کی مدد کرے گی اور کتنی جلدی ایسی چیز ہے جو ہم یقینی طور پر نہیں جانتے۔ وہ ایک تربیت یافتہ رضاکار ہیں جو ایسے بچوں کی اسکول کی زندگی کو معمول پر لانے میں مدد کرتی ہیں۔

      کئی این جی اوز اور شہری مدد گروپ بچوں کو کوویڈ سے پہلے کی سطح تک پہنچنے میں مدد کرنے کے طریقے تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ چائلڈ رائٹس ٹرسٹ نے ’’ کمیونٹی سکول ‘‘ کے نام سے ایک تصور تیار کیا ہے جہاں پڑوسی علاقوں کے بچوں کے ایک گروپ کو چھت کے نیچے بلایا جاتا ہے اور انہیں سماجی میل میلاپ کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔

      رضاکاروں کا کہنا ہے کہ سماجی ملاوٹ ایک ایسی چیز ہے جس پر ہم بہت محنت کر رہے ہیں۔ کیا بچے اب بھی اسکول واپس جانے پر خوش ہیں؟ ہمیں سب سے پہلے اسکول کو ایک خوشگوار مقام بنانا چاہیے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: