ہوم » نیوز » تعلیم و روزگار

وادی کشمیر :اسکولوں میں شروع ہوگی تعلیمی سرگرمیاں، جاری کیے گئے احکامات

چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت تک کے طلبا کے لئے 8 مارچ سے اسکول کھولنے کا فیصلہ لیا گیا ہے۔اسی طرح 15 مارچ سے کے جی سے پانچویں جماعت تک اسکولوں کو کھولا جائیگا۔

  • UNI
  • Last Updated: Mar 06, 2021 02:55 PM IST
  • Share this:
وادی کشمیر :اسکولوں میں شروع ہوگی تعلیمی سرگرمیاں، جاری کیے گئے احکامات
کلاس روموں میں طلبا کے درمیان سماجی دوری کو یقینی بنایا جا سکتا ہے اور اس مہلک وبا کو طلبا میں پھیلنے سے روکا جاسکتا ہے۔

وادی کشمیر میں 8 مارچ سے اب جماعت اول سے آٹھویں کی بجائے چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت کے طلبا کے لئے ہی اسکول کھل جائیں گے۔ جبکہ کے جی سے پانچویں جماعت تک اسکول 15 مار چ سے کھل جائیں گے۔متعلقہ حکام کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ ضلع سری نگر اور ضلع بڈگام کے بعض اسکولوں میں عملے میں سے کچھ ملازموں کا کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کے پیش نظر لیا گیا ہے۔بتادیں کہ متعلقہ حکام کے اعلان کے مطابق وادی میں جماعت اول سے آٹھویں تک کے طلبا کے لئے 8 مارچ سے اسکول کھلنے والے تھے جبکہ جماعت نویں سے بارہویں جماعت تک کے طلبا کے لئے اسکول یکم مارچ سے کھلے ہیں۔ناظم تعلیم محمد یونس ملک نے بتایا کہ ضلع سری نگر اور ضلع بڈگام کے بعض اسکولوں میں عملے میں سے کچھ ملازموں کا کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کے پیش نظر اسکولوں کو جماعت اول سے آٹھویں کی بجائے چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت تک کے طلبا کے لئے 8 مارچ سے اسکول کھولنے کا فیصلہ لیا گیا ہے۔اسی طرح 15 مارچ سے کے جی سے پانچویں جماعت تک اسکولوں کو کھولا جائیگا۔


 وادی کشمیر میں 8 مارچ سے اب جماعت اول سے آٹھویں کی بجائے چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت کے طلبا کے لئے ہی اسکول کھل جائیں گے
وادی کشمیر میں 8 مارچ سے اب جماعت اول سے آٹھویں کی بجائے چھٹی جماعت سے آٹھویں جماعت کے طلبا کے لئے ہی اسکول کھل جائیں گے


انہوں نے بتایا کہ اس فیصلے سے کلاس روموں میں طلبا کے درمیان سماجی دوری کو یقینی بنایا جا سکتا ہے اور اس مہلک وبا کو طلبا میں پھیلنے سے روکا جاسکتا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ اسکولوں کے سربراہوں سے اسکولوں میں کورونا گائیڈ لائنز پر سختی سے عمل پیرا ہونے کی تاکید کی گئی ہے۔بتادیں کہ وادی کشمیر میں تعلیمی ادارے قریب ایک سال بعد کھلنے لگے ہیں۔ اسکولوں کو سال گذشتہ ماہ مارچ میں ہی کورونا لاک ڈاؤن کے پیش نظر بند کر دیا گیا تھا۔تاہم لوگوں کا کہنا ہے کہ وادی میں تعلیمی ادارے ایک نہیں بلکہ دو برسوں کے بعد کھل رہے ہیں کیونکہ پانچ اگست 2019 کے بعد پیدا شدہ صورتحال کے باعث وادی کشمیر میں دیگر سرگرمیوں کے ساتھ ساتھ تعلیمی سرگرمیاں بھی معطل ہو کر رہ گئی تھی۔

Published by: Mirzaghani Baig
First published: Mar 06, 2021 02:52 PM IST