உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Biden-Harris Administration: بائیڈن-ہیرس انتظامیہ کی طلبا کے قرض سے چھٹکاراہ کی اسکیم

    امریکی صدر جو بائیڈن

    امریکی صدر جو بائیڈن

    عالمی وبا کورونا وائرس کے ذریعہ پیدا ہونے والے معاشی چیلنجوں کی وجہ سے بائیڈن ہیرس انتظامیہ (Biden-Harris Administration) نے طلبا کے قرض کی ادائیگی کے وقفے کو متعدد بار بڑھایا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaUSAUSA
    • Share this:
      Biden-Harris Administration: امریکہ حصول تعلیم کے دوران قرضوں کی بڑی اہمیت ہوتی ہے، کیونکہ امریکی تعلیمی اداروں میں فیس کی ادائیگی کے لیے سود کی ضرورت پڑتی ہے۔ ان حالات میں متوسط طبقہ کے طلبا قرضوں کے بوجھ میں دبے ہوئے ہیں۔ حال ہی میں امریکہ کے صدر جو بائیڈن، نائب صدر کملا ہیریس اور امریکی محکمہ تعلیم نے اعلان کیا ہے کہ وہ کام کرنے والے اور متوسط ​​طبقے کے طلبا کے قرض کی ادائیگی میں نرمی کریں گے۔ یہ پیکیج تین اقساط میں دیا جائے گا۔

      اس پلان میں 20,000 ڈالر تک کے قرض کی معافی شامل ہے۔ بہت سے قرض لینے والے اپنے آپ سے پوچھ رہے ہوں گے کہ ’مجھے اس امداد کا دعوی کرنے کے لیے کیا کرنا ہوگا؟‘ آنے والے ہفتوں میں مزید تفصیلات کا اعلان کیا جائے گا۔ جب یہ عمل باضابطہ طور پر شروع ہو جائے تو مطلع کرنے کے لیے محکمہ تعلیم مزید معلومات فراہم کرسکتا ہے۔

      بائیڈن انتظامیہ کا طلبا کے قرض سے نجات کا منصوبہ

      حصہ 1۔ طلبا کے قرض کی ادائیگی کے وقفے کی حتمی توسیع:

      ادائیگی کی ہموار منتقلی کو یقینی بنانے اور غیر ضروری ڈیفالٹس کو روکنے کے لیے بائیڈن-ہیرس انتظامیہ 31 دسمبر 2022 تک توقف کی آخری مدت میں توسیع کرے گی اور اس ضمن میں ادائیگیاں جنوری 2023 میں دوبارہ شروع ہوں گی۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      عالمی وبا کورونا وائرس کے ذریعہ پیدا ہونے والے معاشی چیلنجوں کی وجہ سے بائیڈن ہیرس انتظامیہ نے طلبا کے قرض کی ادائیگی کے وقفے کو متعدد بار بڑھایا ہے۔ اس کی وجہ سے صدر بائیڈن کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے کسی بھی شخص کو قرض کی ادائیگی میں ایک ڈالر بھی ادا نہیں کرنا پڑا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: