உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Uttar Pradesh : نئی نسل ، پیشہ ورانہ تعلیم اور ترقی کے نئے امکانات 

    Uttar Pradesh : نئی نسل ، پیشہ ورانہ تعلیم اور ترقی کے نئے امکانات 

    Uttar Pradesh : نئی نسل ، پیشہ ورانہ تعلیم اور ترقی کے نئے امکانات 

    نئی نسل کے مستقبل کومستحکم بنانے اور تعلیمی معیار کو بلند کرنے کے لیے جدید تکنیک اور جدید علوم سے واقفیت ضروری ہے ، خوردنی اشیاء کے تحفظات کے تعلق سے جو تحقیق کی جارہی ہے اس نے متعلقہ شعبے سے منسلک لوگوں کے لئے نئے امکانات پیدا کئے ہیں ۔

    • Share this:
    لکھنو : اگر نئی نسل کو جدید علوم اور جدید تکنیک سے ہم آہنگ کردیا جائے تو وہ مختلف محاذوں اور میدانوں میں اپنے نقش مرتسم کرنے کے ساتھ ساتھ روشن مستقبل کی امین بن سکتی ہے ۔ موجودہ عہد میں خوردنی اشیاء کا تحفظ ایک اہم مسئلہ ہے، اس کے پیش نظر پوری علمی و تحقیقی دنیا میں ایک انقلاب برپا ہے ، جہاں ایک طرف ہمارے سائنسداں ،ماہرینِ نباتات، اور پیشہ ورانہ صنعت سے متعلقہ محقق کھانے پینے کی چیزوں کو لمبے وقت تک برقرار رکھنے، ان کے معیار اور فوائد کو قائم رکھنے کے لئے شب و روز جدو جہد کررہے ہیں، نئے نئے تجربات کررہے ہیں،  وہیں زندگی کے جدید اور تیز رفتار طریقہء کار محققین کے سامنے نئے نئے چیلنجز بھی پیش کررہے ہیں۔

    ان سبھی موضوعات کو بہتر طریقے سے سمجھنے، خوردنی اشیاء کو برقرار رکھنے کے عمل سے متعلقہ نئی تحقیقات سے آشنا ہونے اور اس میدان میں نئے ابواب کھولنے کے لئے انٹیگرل یونیورسٹی کے بایوانجیبئرنگ ڈپارٹمنٹ ، فیکلٹی آف انجینئرنگ کی جانب سے ایک خصوصی اور اہم پیش رفت کے تحت انڈو-ازبک میٹ اور بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد کیا جارہاہے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: آئل اینڈ نیچرل گیس کارپوریشن لمیٹڈ میں بڑے پیمانے پر بھرتیاں، جانیے تفصیلات


    اس تعلق سے اہم تعلیمی خدمات انجام دے رہی ، ڈپارٹمنٹ آف بایو انجینئرنگ کی سربراہ  ڈاکٹر الوینافاروقی کے مطابق اس مجوزہ کانفرنس میں موضوع کی مناسبت سے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والی اہم اور ممتاز شخصیات کو مدعو کیا جارہاہے، اپنے اپنے میدانوں کے ماہرین موضوع کا حق اداکرنے، طلبا و طالبات کو ضروری معلومات فراہم کرنے اور ریسرچ اسکالر کے لئے بہتر راستے ہموار کرنے کے لئے ضروری معلومات بھی فراہم کریں گے اور ان کے ساتھ باقاعدہ تبادلہءِ خیال کے دوران خوردنی اشیاء کے تحفظ کے عمل کو عملی طور پر پیش کرنے کے کیے ضروری نکات اور اہم منظر نامے بھی سامنے آئیں گے۔

     

    یہ بھی پڑھئے: انڈین کوسٹ گارڈ میں 71 پوسٹوں پر بھرتیاں، نوٹیفکیشن جاری


    ڈاکٹر الوینا فاروقی یہ بھی وضاحت کرتی ہیں کہ انٹیگرل یونیورسٹی کے بانی و چانسلر ، پرو چانسلر، وائس چانسلر۔ رجسٹرار  اور دیگر اہم سربراہوں کی ہدایات اور مشوروں پر عمل کرتے ہوئے اس مجوزہ انڈو۔ازبک میٹ کو خصوصی طور پر منظم کیا جارہا ہے جس کی تیاریاں شروع کردی گئی ہیں ہمیں یقین ہے کہ ماہرین کے علم و شعور سے انٹیگرل یونیورسٹی کے طلبا و طالبات کو یقینی طور پر فائدہ پہنچے گا اور حال کی کوششیں مستقبل میں روشن امکانات لے کر سامنے آئیں گی اور ہم دنیا کے سامنے ایک نظیر پیش کرسکیں گے۔

    حالانکہ بین الاقوامی کانفرنس کے انعقاد کے لئے 24 اور 25 نومبر کی تاریخیں متعین کی گئی ہیں تاہم اس اہم کانفرنس کی اہمیت اور افادیت کے پیش نظر ضروری تیاریاں ابھی سے شروع کردی گئی ہیں ۔ ڈاکٹر الوینا فاروقی نے یہ بھی واضح کیا کہ اس اہم پروگرام کو آن لائن اور آف لائن دونوں سطحوں پر منظم کرنے کی تجویز بھی ذمہ داران کے سامنے پیش کی گئی ہے اور اس تجویز کی پیش کش کا مقصد بھی یہی ہے کہ اس اہم پیش رفت سے کانفرنس میں ملک اور بیرونی ممالک کے زیادہ سے زیادہ ماہرین شریک ہوسکیں اور یونیورسٹی کی اس پیش رفت سے ہندوستان اور بیرونی ممالک کے زیادہ سے زیادہ اساتذہ ،محققین اور طلبا و طالبات بھی فیضیاب ہو سکیں ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: