உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    PIB Fact Check: سرکاری نوکریوں کی پیشکش کرنے والی یہ ویب سائٹ جعلی ہے! جانیے تفصیلات

    ایک جعلی ویب سائٹ نے منسٹری آف اسکیل ڈیولپمنٹ سے وابستہ ہونے کا دعویٰ کیا ہے۔

    ایک جعلی ویب سائٹ نے منسٹری آف اسکیل ڈیولپمنٹ سے وابستہ ہونے کا دعویٰ کیا ہے۔

    آن لائن دھوکہ دہی سے محفوظ ضروری ہے۔ جن کے نتیجے میں مالیاتی نقصان ہو سکتا ہے۔ ملازمت کے خواہشمندوں کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ وہ محتاط رہیں۔ اسی لیے بھرتی اور ملازمت کے مواقع سے متعلق رابطے کے لیے صرف سرکاری ویب سائٹس پر انحصار کریں۔

    • Share this:
      منسٹری آف اسکیل ڈیولپمنٹ (Ministry of Skill Development) سے وابستہ ہونے کا دعویٰ کرنے والی ایک جعلی ویب سائٹ کے خلاف بہت سے امیدواروں کی شکایات اٹھائے جانے کے چند دن بعد پریس انفارمیشن بیورو فیکٹ چیک نے سرکاری ملازمت کے خواہشمندوں کو ایک فرضی ویب سائٹ کے خلاف خبردار کیا ہے۔ اس ویب سائٹ کا دعویٰ ہے کہ وہ ہنر مندی کی ترقی اور انٹرپرینیورشپ کی وزارت سے وابستہ ہیں۔ متعدد یونیورسٹیوں کے طلبا کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ اومی کرون کے خطرے کے پیش نظر آن لائن امتحانات کا مطالبہ کر رہے ہیں اور جعلی نوٹس نے بہت سے لوگوں میں خوف و ہراس پھیلا دیا ہے۔

      جعلی ویب سائٹ rashtriyaunnatikendra.org سرکاری پروجیکٹوں میں بھرتی کے بہانے نوکری کے خواہشمندوں سے درخواست کی فیس کے طور پر 1,645 روپے ادا کرنے کو کہہ رہی ہے۔ پی آئی بی فیکٹ چیک (PIB Fact Check) نے اتوار کو ویب سائٹ کے خلاف ایک الرٹ ٹویٹ کیا اور اسکل ڈیولپمنٹ اور انٹرپرینیورشپ کی وزارت اور ’راشٹریہ اننتی کیندر‘ (Rashtriya Unnati Kendra) نامی تنظیم کے درمیان کسی بھی تعلق کی تردید کی۔

      فرضی ویب سائٹ نے دعویٰ کیا تھا کہ راشٹریہ ترقی کیندر کو نوکری کے خواہشمندوں کو آن لائن پورٹل کے ذریعے ہنر کی تربیت اور روزگار کے مواقع کے لیے رجسٹر کرنے کی اجازت دینے کے لیے متعارف کرایا گیا تھا۔ تنظیم کا دعویٰ ہے کہ تقریباً 224 برانچوں کے نیٹ ورک کے ساتھ پورے ہندوستان میں موجودگی ہے اور اس کا کل کاروبار 500 کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔ ویب سائٹ میں بتایا گیا ہے کہ راشٹریہ اننتی کیندر چندی گڑھ میں رجسٹرڈ ہے۔


      حکومت کے اسکل انڈیا پروگرام کا حصہ ہونے کا دعویٰ کرنے والی ویب سائٹ نے تمام زمروں کے ملازمت کے خواہشمندوں سے کہا تھا کہ وہ بھرتی کے عمل میں بیٹھے کے لیے 1645 روپے فیس ادا کریں۔ سنہ 2015 میں Skill India کو متعارف کرایا گیا تھا جس کا مقصد لوگوں کو مارکیٹ اور صنعتوں کی طرف سے مانگی گئی مہارتوں میں تربیت دینا تھا۔ یہ تنظیم دیگر سرکاری شراکت داروں جیسے انڈیا پوسٹ، ISRO، HAL، GAIL اور بہت سے دوسرے کے ساتھ کام کرنے کا دعویٰ بھی کرتی ہے۔

      محتاط رہنے کا مشہورہ:

      آن لائن دھوکہ دہی سے محفوظ ضروری ہے۔ جن کے نتیجے میں مالیاتی نقصان ہو سکتا ہے۔ ملازمت کے خواہشمندوں کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ وہ محتاط رہیں۔ اسی لیے بھرتی اور ملازمت کے مواقع سے متعلق رابطے کے لیے صرف سرکاری ویب سائٹس پر انحصار کریں۔ اس سے قبل پی آئی بی فیکٹ چیک نے طلبا کو سوشل میڈیا پر گردش کرنے والے جعلی یو جی سی نوٹیفکیشن کے بارے میں خبردار کیا تھا۔ جعلی نوٹیفکیشن میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ یو جی سی نے یونیورسٹیوں اور اداروں کو آف لائن سمسٹر امتحانات منعقد کرنے کی ہدایت دی تھی۔ تاہم پی آئی بی فیکٹ چیک نے پایا کہ ایسا کوئی نوٹس یو جی سی نے جاری نہیں کیا تھا۔
      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: