اپنا ضلع منتخب کریں۔

    National Education Day پر کیا ہے سال 2022 کی تھیم، یہاں جانئے پوری تفصیل

    National Education Day: ہر سال انسانی وسائل کی ترقی کی وزارت کی طرف سے یوم تعلیم پر ایک مختلف تھیم ترتیب دی جاتی ہے تاکہ کسی خاص موضوع یا مسئلے پر خصوصی توجہ دی جا سکے۔

    National Education Day: ہر سال انسانی وسائل کی ترقی کی وزارت کی طرف سے یوم تعلیم پر ایک مختلف تھیم ترتیب دی جاتی ہے تاکہ کسی خاص موضوع یا مسئلے پر خصوصی توجہ دی جا سکے۔

    National Education Day: ہر سال انسانی وسائل کی ترقی کی وزارت کی طرف سے یوم تعلیم پر ایک مختلف تھیم ترتیب دی جاتی ہے تاکہ کسی خاص موضوع یا مسئلے پر خصوصی توجہ دی جا سکے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      آج 11 نومبر کو قومی یوم تعلیم کے طور پر منایا جاتا ہے۔ یہ 2008 سے ملک کے پہلے وزیر تعلیم مولانا ابوالکلام آزاد کی یوم پیدائش کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ ہندوستان میں قومی یوم تعلیم تعلیمی اداروں کو مضبوط بنانے اور تعلیمی معیار کو آگے بڑھانے کے مقصد سے منایا جاتا ہے۔ یہ ہندوستان کے نظام تعلیم کی بنیاد رکھنے میں مولانا آزاد کے کردار اور ایک آزاد ہندوستان کی تعمیر کے لیے ان کی کوششوں کے اعزاز کے لیے منایا جاتا ہے۔

      قومی یوم تعلیم 2008 سے ہر سال منایا جاتا ہے۔ 2008 میں، انسانی وسائل کی ترقی کی وزارت (MHRD) نے 11 نومبر کو ہندوستان کے لیے قومی یوم تعلیم کے طور پر اعلان کیا۔ اب MHRD کا نام بدل کر وزارت تعلیم کر دیا گیا ہے۔

      سال 2022 کی تھیم سال 2022 کے قومی یوم تعلیم کی تھیم ہے تبدیلی، 'کورس، ٹرانسفارمنگ ایجوکیشن ہے۔ یہ تھیم ہندوستان میں تعلیمی نظام کو بدلتے وقت کے مطابق ڈھالنے کے لیے اصلاحات کا مطالبہ کرتا ہے۔ ہر سال انسانی وسائل کی ترقی کی وزارت کی طرف سے یوم تعلیم پر ایک مختلف تھیم ترتیب دی جاتی ہے تاکہ کسی خاص موضوع یا مسئلے پر خصوصی توجہ دی جا سکے۔

      مکہ میں پیدا ہوئے مولانا ابوالکلام آزاد کی یہ نایاب تصویریں، کیا آپ نے دیکھیں


      راجیو گاندھی قتل معاملے میں سپریم کورٹ کا بڑا فیصلہ، سبھی 6قصوروار کو رہا کرنے کا حکم



      مولانا ابوالکلام آزاد کون تھے؟

      مولانا ابوالکلام آزاد 11 نومبر 1888 کو مکہ میں پیدا ہوئے جو اس وقت سلطنت عثمانیہ کا حصہ تھا۔ مکہ اب سعودی عرب میں ہے۔ ان کا اصل نام سید غلام محی الدین احمد بن خیر الدین الحسینی تھا لیکن بعد میں وہ مولانا ابوالکلام آزاد کے نام سے مشہور ہوئے۔ آزاد کے والد افغان نژاد مسلمان عالم تھے۔ ان کے والد کا انتقال بہت چھوٹی عمر میں ہو گیا تھا، اس لیے وہ دہلی میں اپنے نانا کے ساتھ رہنے لگے۔ 1857 کی ہندوستانی بغاوت کے دوران، وہ ہندوستان چھوڑ کر مکہ میں آباد ہو گئے۔ بعد میں مولانا ابوالکلام آزاد ہندوستان واپس آئے اور اپنے خاندان کے ساتھ کلکتہ شہر میں بس گئے۔ مولانا آزاد کو 1992 میں بعد از مرگ ملک کے سب سے بڑے شہری اعزاز بھارت رتن سے نوازا گیا تھا۔

      مولانا آزاد کی پیدائش 11 نومبر 1888 کو ہوئی تھی۔ وہ آزاد ہندوستان میں تعلیم کے کلیدی معمار کے طور پر جانے جاتے ہیں۔ یہ دن ملک کی تعمیر، ادارہ سازی اور تعلیم کے میدان میں مولانا آزاد کی مثالی خدمات کو یاد کرنے کے لیے منایا جاتا ہے۔ وہ کہتے تھے کہ ’’اسکول وہ تجربہ گاہیں ہیں جو ملک کے مستقبل کے شہری پیدا کرتی ہیں‘‘۔
      مورخین کے مطابق انھوں نے اعلیٰ تعلیم، تکنیکی اور سائنسی تحقیق اور عصری تعلیم کے ساتھ ساتھ علم پر مبنی جدید اداروں کی بنیاد رکھی۔ مرحوم وزیر تعلیم نے مشرقی علوم و ادب میں تحقیق کو بھی فروغ دیا۔ انہوں نے فنون لطیفہ کو ترقی دینے اور ہندوستان میں سماجی، مذہبی اور ثقافتی روابط پیدا کرنے کے لیے تین اکیڈمیاں بھی قائم کیں۔ جس میں للت کلا اکیڈمی (Lalit Kala Academy)، سنگیت ناٹک اکیڈمی (Sangeet Natak Academy) اور ساہتیہ اکیڈمی (Sahitya Academy) قابل ذکر ہے۔ یہی نہیں بلکہ انہوں نے خواتین کے لیے تعلیم اور 14 سال تک کے بچوں کے لیے مفت اور لازمی پرائمری تعلیم کی بھی وکالت کی۔

      آئی آئی ٹی کھڑگپور (IIT Kharagpur)، یونیورسٹی گرانٹس کمیشن (UGC)، انڈین کونسل فار کلچرل ریلیشنز (ICCR)، انڈین انسٹی ٹیوٹ آف سائنس (IISc) بنگلور اور کونسل آف سائنٹیفک اینڈ انڈسٹریل ریسرچ (CSIR) سمیت کئی ادارے انھوں نے ہی قائم کیے تھے۔ ان کا انتقال 22 فروری 1958 کو 69 سال کی عمر میں ہوا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: