உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پانچ نیشنل ایوارڈ جیتنے والیShabana Azmiکتنی تعلیم یافتہ ہیں؟ جانیے اُن کی تعلیمی قابلیت

    شبانہ اعظمی (فائل فوٹو)

    شبانہ اعظمی (فائل فوٹو)

    Shabana Azmi Education: فلم انکور میں لکشمی کا کردار، فلم نشانت میں سشیلا کا کردار، فلم جنون میں فردوس کا کردار، فلم پار میں راما کا کردار اور فلم فائر میں رادھا کا کردار۔ شبانہ کو ان کرداروں کے لیے کافی پذیرائی ملی ہے۔

    • Share this:
      Shabana Azmi Education:شبانہ اعظمی ہندی فلم انڈسٹری کا ایک ایسا نام ہے، جنہوں نے اپنی زبردست ایکٹنگ کے دم پر بڑا نام کمایا ہے۔ وہ ہندی سینما کی ایک ایسی اداکارہ ہیں، جنہوں نے آرٹ سینما کے ساتھ کمرشیل فلموں میں بھی کافی اچھا کام کیا۔

      سال 1974 کی فلم انکور میں انہوں نے اتنی زبردست اداکاری کی کہ پہلی فلم میں ہی بہترین اداکارہ کا نیشنل ایوارڈ ان کے کھاتے میں آگیا۔ شبانہ اپنے فلمی کیریئر میں پانچ بار نیشنل ایوارڈ جیتنے میں کامیاب ہو چکی ہیں۔ شبانہ کی خاصیت یہ ہے کہ وہ اپنے کرداروں کو اس طرح اپنے اندر بسا لیتی ہیں کہ ناظرین ان کی اداکاری سے حیران رہ جاتے ہیں۔ اس کا ثبوت ان کے نبھائے گئے کئی کرداروں میں نظر آتا ہے۔

      فلم انکور میں لکشمی کا کردار، فلم نشانت میں سشیلا کا کردار، فلم جنون میں فردوس کا کردار، فلم پار میں راما کا کردار اور فلم فائر میں رادھا کا کردار۔ شبانہ کو ان کرداروں کے لیے کافی پذیرائی ملی ہے۔ شاندار ایکٹنگ کا مظاہرہ کرنے والی شبانہ اعظمی تعلیم کے معاملے میں بھی بہت آگے رہی ہیں۔ ان کے پرستار شاید ہی جانتے ہوں گے کہ شبانہ اعظمی ہندی سنیما کی ان چند اداکاراؤں میں سے ایک ہیں جو کافی پڑھی لکھی ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Khatron Ke Khiladi 12:جنت زبیر کے ساتھ افیئر کی خبروں پر بولے مسٹر فیضو-اس کی وجہ سے ہم ۔۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Kiara Advani:کیارا اڈوانی نے سدھارتھ ملہوترا کے ساتھ رشتے پر توڑی خاموشی!

      اسکولنگ اور ہائر ایجوکیشن
      شبانہ اعظمی 18 ستمبر 1950 کو مشہور شاعر کیفی اعظمی کے ہاں پیدا ہوئیں۔ شبانہ اعظمی کو اسکول کی تعلیم کے لیے ممبئی کے کوئین میری اسکول بھیج دیا گیا۔ اسکول کی تعلیم کے بعد وہ اپنی اعلیٰ تعلیم کے لیے ممبئی کے سینٹ زیویئر کالج گئیں اور وہاں سے سائیکالوجی میں ڈگری حاصل کی اور پھر ایف ٹی آئی آئی سے اداکاری کا کورس کرکے بالی ووڈ میں قدم رکھا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: