உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شاہ رخ خان کے بیٹے آرین معاملے میں حیران کن انکشاف، گواہ نے کہا- 18 کروڑ میں ہوئی ڈیل، این سی بی نے الزام کو کیا مسترد

    شاہ رخ خان کے بیٹے آرین معاملے میں حیران کن انکشاف، گواہ نے کہا- 18 کروڑ میں ہوئی ڈیل

    شاہ رخ خان کے بیٹے آرین معاملے میں حیران کن انکشاف، گواہ نے کہا- 18 کروڑ میں ہوئی ڈیل

    Drugs Case: پرائیویٹ جاسوسی کے پی گوساوی (KP Gosavi) کا باڈی گارڈ بتانے والے پربھاکر سیل نے این سی بی (NCB) کے زونل ڈائریکٹر سمیر وانکھیڑے اور گوساوی پر پیسوں کی ڈیل کے الزام لگائے ہیں۔

    • Share this:
      ممبئی: نارکوٹکس کنٹرول بیورو (NCB) کی طرف سے کروز ڈرگس پارٹی معاملے (Cruise Drugs Party Case) میں گرفتار کئے گئے اداکار شاہ رخ خان (Shahrukh Khan) کے بیٹے آرین خان (Aryan Khan) کے معاملے میں نیا موڑ آگیا ہے۔ این سی بی کے گواہ نے اس معاملے میں حیران کن انکشاف کئے ہیں۔ خود کو اس معاملے سے جڑے شخص کے پی گوساوی (KP Gosavi) کا باڈی گارڈ بتانے والے پربھاکر سیل نے این سی بی کے زونل ڈائریکٹر سمیر وانکھیڑے اور گوساوی پر پیسوں کی ڈیل کے الزام لگائے ہیں۔ پرائیویٹ ڈیٹکٹیو کے پی گوساوی کی ہی تصویر آریل خان کے ساتھ وائرل ہوئی تھی۔ معاملے میں سمیر وانکھیڑے نے سبھی الزامات سے انکار کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ بعد میں اس کا مناسب جواب دیں گے۔

      پربھاکر سیل نام کے اس گواہ نے ایک حلف نامہ میں دعویٰ کیا ہے کہ اس نے کے پی گوساوی اور کسی سیم ڈسوزا کے درمیان 18 کروڑ روپئے کی ڈیل کی بات سنی تھی۔ ان میں سے 8 کروڑ روپئے این سی بی کے زونل ڈائریکٹر سمیر وانکھیڑے کو دیئے جانے تھے۔ اس نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ اس نے کے پی گوساوی سے روپئے لے کر سیم ڈسوزا تک پہنچائے تھے۔

      شاہ رخ خان کے بیٹے آرین خان ابھی جیل میں ہیں۔ انہیں کروز ڈرگس پارٹی معاملے میں گرفتار کیا گیا تھا۔
      شاہ رخ خان کے بیٹے آرین خان ابھی جیل میں ہیں۔ انہیں کروز ڈرگس پارٹی معاملے میں گرفتار کیا گیا تھا۔


      پربھاکر سیل وہی شخص ہے، جسے این سی بی نے 6 اکتوبر کو جاری کی گئی پریس ریلیز میں گواہ کے طور پر بتایا تھا۔ اب پربھاکر نے الزام لگایا ہے کہ کے پی گوساوی لاپتہ ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ اسے کے پی گوساوی کی جان کو خطرہ ہونے کا خدشہ ہے۔ اس لئے اس نے یہ حلف داخل کیا ہے۔ وہیں این سی بی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ سبھی الزام بے بنیاد ہیں۔ انہوں نے یہ بھی سوال کیا کہ اگر پیسوں کا لین دین ہوتا تو کوئی بھلا جیل میں کیوں ہوتا۔ ذرائع نے کہا کہ یہ سارے الزام این سی بی کی شبیہ بگاڑنے کے لئے لگائے جا رہے ہیں۔ آفس میں سی سی ٹی وی کیمرہ لگے ہیں۔ ایسا کچھ بھی کہیں نہیں ہوا ہے۔

      افسران کا یہاں تک کہنا ہے کہ وہ 2 اکتوبر سے پہلے پربھاکر سیل کو جانتے تک نہیں تھے۔ ذرائع نے کہا کہ اس کا یہ حلف نامہ این ڈی پی ایس کورٹ پہنچایا جائے گا۔ این سی بی بھی وہاں اپنا ردعمل ظاہر کرے گا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: