உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    TVکی’سنسکاری بہو’سئی‘نے شیئر کیا فوٹو شوٹ کا ویڈیو، ماڈرن اوتار میں آئی نظر

    سنسکاری بہو کا نظر آیا بولڈ اوتار۔

    سنسکاری بہو کا نظر آیا بولڈ اوتار۔

    Ayesha Singh Photoshoot video: سائی عرف (عائشہ سنگھ) بھی سوشل میڈیا پر کافی ایکٹیو ہے۔ ہر روز وہ اپنی معمول کی تصویریں شیئر کرتی ہے۔ حال ہی میں سائی نے ممبئی میں سمندر کنارے کی ایک تصویر شیئر کی جس میں وہ بارش کا مزہ لے رہی ہیں۔

    • Share this:
      Ayesha Singh Photoshoot video: اسٹار پلس کے سوپر ہٹ شو 'گم ہے کسی کے پیار میں' (Ghum Hai Kisikey Pyaar Meiin)میں سادہ اور معصوم نظر آنے والی اداکارہ عائشہ سنگھ(Ayesha Singh) سائی کا کردار ادا کر رہی ہیں۔ چھوٹی اسکرین پر کلچرڈ اوتار میں نظر آنے والی عائشہ حقیقی زندگی میں کافی بولڈ اور گلیمرس ہیں۔ اس نے حال ہی میں اپنی بولڈ تصاویر سے سوشل میڈیا پر تہلکہ مچا دیا ہے۔ اب عائشہ نے اپنے بولڈ فوٹو شوٹ کا پورا سفر ایک ویڈیو میں شیئر کیا ہے۔

      عائشہ سنگھ کی اس ویڈیو میں وہ انتہائی ماڈرن اور فیشن ایبل انداز میں نظر آ رہی ہیں۔ کچھ دن پہلے سائی نے ایک بولڈ فوٹو شوٹ کروایا تھا۔ تصاویر میں سائی بہت سیکسی لگ رہی تھیں۔ اس نے قاتلانہ پوز دیے تھے۔ اب اداکارہ نے اپنے بولڈ فوٹو شوٹ کی ویڈیو شیئر کی ہے۔ اس میں وہ فوٹو شوٹ سے پہلے میک اپ روم میں تیار ہوتی نظر آرہی ہیں۔ کیمرے کے سامنے پیارا پوز دیتے ہوئے ویڈیو دیکھ کر مداح حیران رہ گئے۔ سائی کے اس اوتار کو لوگوں نے بہت پسند کیا ہے۔

      انسٹاگرام پر ویڈیو شیئر کرتے ہوئے عائشہ سنگھ نے کیپشن میں لکھا - 'کیونکہ مجھے اس گانے سے پیار ہو گیا ہے۔ دراصل، ویڈیو کے بیک گراؤنڈ میں 'براہمسترا' کا گانا 'کیسریا' چل رہا ہے۔



       




      View this post on Instagram





       

      A post shared by Ayesha Singh (@ayesha.singh19)





      یہ بھی پڑھیں:

      دشا پٹانی نے بتایاProject Kکے سیٹ پر کیسا تھا ساوتھ کے سوپر اسٹار پربھاس کا رویہ

      یہ بھی پڑھیں:
      Shamita Shettyنے راکیش باپٹ کے ساتھ کیا بریک اپ کا اعلان، زیادہ دن تک نہیں چلا یہ رشتہ

      سائی عرف (عائشہ سنگھ) بھی سوشل میڈیا پر کافی ایکٹیو ہے۔ ہر روز وہ اپنی معمول کی تصویریں شیئر کرتی ہے۔ حال ہی میں سائی نے ممبئی میں سمندر کنارے کی ایک تصویر شیئر کی جس میں وہ بارش کا مزہ لے رہی ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: