ہوم » نیوز » انٹرٹینمنٹ

بی ایم سی نے غلط ارداے سے توڑا کنگنا کا دفتر، بھرنا ہو گا ہرجانہ: بامبے ہائی کورٹ

ہائی کورٹ نے کنگنا کے دفتر کے نقصان کا اندازہ کرنے کا حکم دیا ہے۔ اس سلسلہ میں حکام مارچ 2021 تک اپنی رپورٹ عدالت کو سونپیں گے۔ نقصان کی تلافی کے لئے ایجنسی کی رپورٹ پر فیصلہ ہائی کورٹ بعد میں سنائے گا۔

  • Share this:
بی ایم سی نے غلط ارداے سے توڑا کنگنا کا دفتر، بھرنا ہو گا ہرجانہ: بامبے ہائی کورٹ
بی ایم سی نے غلط ارداے سے توڑا کنگنا کا دفتر، بھرنا ہو گا ہرجانہ: بامبے ہائی کورٹ

ممبئی۔ بالی ووڈ اداکارہ کنگنا رنوت (Kangana Ranaut) کے ممبئی واقع دفتر میں 9 ستمبر کو بی ایم سی کے ذریعہ کی گئی توڑ پھوڑ کو لے کر بامبے ہائی کورٹ نے اپنا فیصلہ سنا دیا ہے۔ عدالت نے کہا کہ بی ایم سی کی کارروائی بدبختانہ رویے سے کی گئی ہے۔ عدالت نے کہا کہ بی ایم سی کو کنگنا رنوت کے دفتر میں توڑ پھوڑ کے لئے ہرجانہ دینا ہو گا۔ ہائی کورٹ نے کنگنا کے دفتر کے نقصان کا اندازہ کرنے کا حکم دیا ہے۔ اس سلسلہ میں حکام مارچ 2021 تک اپنی رپورٹ عدالت کو سونپیں گے۔ نقصان کی تلافی کے لئے ایجنسی کی رپورٹ پر فیصلہ ہائی کورٹ بعد میں سنائے گا۔


ہائی کورٹ نے تاہم عرضی گزار کنگنا رنوت کو عوامی مقامات پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے وقت صبر و تحمل کا مظاہرہ کرنے کی تلقین کی۔ ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ ریاست کو کسی شہری کی طرف سے کئے گئے بیجا اور غیر ذمہ دارانہ تبصرہ کو نظر انداز کر دینا چاہئے۔ عدالت عالیہ نے مزید کہا کہ کسی شہری کے غیر ذمہ دارانہ تبصرہ کے لئے ریاست کی اس طرح کی کسی بھی کارروائی کو قانونی قرار نہیں دیا جا سکتا۔



واضح رہے کہ 9 ستمبر کو کنگنا رنوت کے بنگلے کا ایک حصہ بی ایم سی نے غیر قانونی قرار دیتے ہوئے گرا دیا تھا۔ کنگنا کا الزام ہے کہ شیو سینا اور مہاراشٹر حکومت کے خلاف ان کی طرف سے دئے گئے بیانوں کی وجہ سے بی ایم سی نے یہ کارروائی کی ہے۔ وہیں بی ایم سی کا دعوی تھا کہ انہوں نے غیر قانونی تعمیرات کے خلاف معمول کی کارروائی کی ہے۔
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 27, 2020 02:08 PM IST